بھاری برسات نے پھر مچائی شمالی کرناٹکا میں تباہی۔ مکانات اور فصلوں کو زبردست نقصان۔ تین افراد ہوگئے ہلاک

Source: S.O. News Service | Published on 8th October 2019, 11:15 AM | ریاستی خبریں |

دھارواڑ 8/اکتوبر (ایس او نیوز) چکمگلورو، گدگ اور دھارواڑ کے علاقے میں بھاری برسات نے پھر ایک بار تباہی مچادی ہے۔ 6 اکتوبر کو بادلوں کی گرج اور بجلیوں کی کڑک کے ساتھ برسنے والی بارش کی وجہ سے تین افراد ہلاک ہوگئے ہیں جبکہ مکانات اور مکئی، سورج مکھی، کپاس، مونگ پھلی جیسی فصلوں کو زبردست نقصان پہنچا ہے۔

ہاویری شہر کے مختلف علاقے برساتی پانی میں ڈوب گئے اور بجلی کی فراہمی منقطع ہوگئی۔ہووینا ہاڈگلی نامی مقام پر بیک وقت 14مکانات زمین بوس ہوگئے۔جبکہ چکمگلورو میں کئی گھروں کو جزوی نقصان پہنچا ہے۔باگلکوٹ تعلقہ میں واقع کیراسور میں بھاری برسات سے جب مکان گر گیا تو اس میں دب کر گوروّا ایرپّا (55سال)، پکیرپّا ہرساڈ(65سال) اور نینگپّا ایرپّا (32سال) ہلاک ہوگئے۔مکان کے گرنے کا علم ہوتے ہی فائر بریگیڈ عملہ موقع پر پہنچا اور ملبے سے تینوں لاشیں نکالی گئیں۔ اس گھر کے مکینوں میں ننگپا کی بیوی سویتا اورا ن کی بیٹی کی جان بچ گئی ہے۔

ایم ایل اے ویرنّا چرنڈی مٹھ نے جائے واردات پر پہنچ کر گھر والوں کی تعزیت کی اور ہلاک ہونے والوں کے وارثین کو پانچ لاکھ روپے فی کس حساب سے معاوضہ اداکرنے کا اعلان کیا۔اس کے علاوہ انہوں نے گرام پنچایت کے ذمہ داران کو ہدایت دی کہ متاثرہ خاندان کا مکان ازسر نوتعمیر کرکے دیا جائے۔

ایک نظر اس پر بھی

رام ہندوستان میں نہیں تھائی لینڈ میں پیدا ہوئے تھے؛ گلبرگہ میں ایک بدھسٹ سنت کا دعویٰ

یہاں پرمنعقدہ ایک مذہبی پروگرام میں معروف بدھسٹ سنت بھنتے آنند مہشتویرنائب صدر اکھل بھارتیہ بِکّو سنگھ نے دعویٰ کیا کہ رام ہندوستان میں پیدا نہیں ہوئے تھے بلکہ ان کا جنم تھائی لینڈ میں ہوا تھا۔اور اس مسئلے پر وہ کسی کے ساتھ بھی کھلی بحث کرنے اور اپنا موقف ثابت کرنے کے لئے تیار ...

شموگہ میں عشق ومحبت کی شادی کا المناک انجام۔ وہاٹس ایپ پر طلاق دئے جانے کے بعدڈی سی دفتر کے باہرمطلقہ خاتون کادھرنا؛ مسلم تنظیموں کو توجہ دینے کی ضرورت

عشق و محبت کے چکر میں مبتلا ہوکر جس لڑکے سے شادی کی تھی اسی نے وہاٹس ایپ کے ذریعے طلاق دے کر اپنی زندگی سے الگ کردیا تو مطلقہ خاتون ڈپٹی کمشنر دفتر کے باہر احتجاجی دھرنے پر بیٹھ گئی۔

عالمی یوم بنات کے موقع پر بنگلور کی اقرا اسکول کی نور عائشہ کا لڑکوں کی تعلیم کے ساتھ لڑکیوں کی تعلیم پر توجہ دینے کی ضرورت پر زور

عالمی یوم بنات کے موقع پر  اقرا انٹرنیشنل اسکول بنگلور کی بانی ڈائرکٹر نور عائشہ نے   معاشرتی خرابیوں کو دور کرنے کے لئے مسلمانوں پر زور دیا کہ مسلمانوں کو لڑکیوں کی تعلیم پر بھی اتنی ہی اہمیت دینی چاہیے جتنی اہمیت وہ لڑکوں کی تعلیم پر دیتے ہیں۔ کارڈف سے بزنس گریجویٹ نور ...

بنگلور میں منعقدہ پاپولر فرنٹ آف انڈیا کے زیراہتمام دلت-مسلم مذاکرہ میں سماجی اتحاد کی کوششوں کو مضبوط کرنے کا عزم

پاپولر فرنٹ آف انڈیا کے زیرِ اہتمام منعقدہ دلت-مسلم مذاکرہ میں شریک مندوبین نے زمینی سطح پر سماجی اتحاد کی تعمیر کے لئے قدم اٹھانے اور دلتوں اور مسلمانوں کے مشترکہ مسائل کے حل کے لئے مشترکہ حکمت عملی تیار کرنے کے عزم کا اظہار کیا

این آر سی کے متعلق مسلمان پریشان کیوں نہ ہوں؟ امیت شاہ کا فرمان اور ریاستی وزیر داخلہ بومئی کا متضاد بیان- کسے مانیں کسے چھوڑیں؟

کیا کرناٹک میں این آر سی کے نفاذ کے معاملے میں ریاستی حکومت کا موقف مرکزی حکومت خاص طور پر مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ کے موقف سے مختلف ہے- حالانکہ امیت شاہ نے حال ہی میں مغربی بنگال میں ایک بیان دیا تھا کہ اس ملک میں این آر سی کا عمل پورا ہونے کے بعد غیر ملکی قرار پانے والے ہندو، ...

سرکاری اسکولوں میں داخلوں میں اضافہ کیلئے تعلیمی معیار کو بہتر بنانا ضروری

ریاستی حکومت کی طرف سے آر ٹی ای قانون میں ترمیم کے بعد جاریہ تعلیمی سال اگرچہ کہ سرکاری اسکولوں میں بچوں کے داخلوں کے معاملہ میں کچھ اضافہ دیکھا گیا ہے، مگر محکمہ تعلیم اس اضافہ سے مطمئن نہیں ہے اس لئے کہ یہ نتائج اس کی امیدوں کے مطابق نہیں رہے ہیں،