چامراج پیٹ گاہ عیدگاہ میدان تنازعہ؛ حکومت کا کام گنپتی مورتی کی تنصیب نہیں ہے: اس کے پیچھے بی جے پی کا پوشیدہ ایجنڈا ہے: ایس ڈی پی آئی

Source: S.O. News Service | Published on 31st August 2022, 5:21 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،31؍اگست (ایس او نیوز؍پریس ریلیز)  سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا کرناٹک کے ریاستی صدر عبدالمجید نے چامراج پیٹ عیدگاہ معاملے پر ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ گنپتی کی مورتی کی تنصیب حکومت کا کام نہیں ہے۔ چامراج پیٹ عیدگاہ میدان میں گنپتی کی مورتی کی تنصیب کے پیچھے بی جے پی کا فرقہ وارانہ ایجنڈا ہے۔ انہوں نے کہا کہ چامراج پیٹ عیدگاہ میدان کی 120 سال کی تاریخ ہے۔ 1898 میں برطانوی دستاویزات میں مسلمانوں کے لیے نماز پڑھنے کے لیے مخصوص جگہ کے طور پر ذکر کیا گیا ہے۔ اسی میدان میں 1938 سے عید کی نماز ادا کی جا رہی ہے جس کے لیے کافی دستاویزات موجود ہیں۔

 ریاست میں بی جے پی حکومت کا مقصد غیر ضروری طور پر تنازعہ پیدا کرنا اور سماج میں امن کو خراب کرنا تھا۔ 1947 میں جب ہندوستان کو آزادی ملی تو اس میدان کو عیدگاہ میدان کہا جاتا تھا اور یہ مسلمانوں کے قبضے میں تھا۔ عبادت گاہوں کا ایکٹ 1991 کہتا ہے کہ کوئی بھی عبادت گاہیں جو 15 اگست 1947 سے پہلے جس  مذہب سے منسلک تھیں، اسی حیثیت میں رہیں گی۔ اس ایکٹ کے مطابق بی بی ایم پی اور حکومت دونوں کا زمین کے اس ٹکڑے پر کوئی کنٹرول نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ ان میں سے کسی نے بھی 1955 تک اس اراضی کی ملکیت سے متعلق کوئی درخواست دائر نہیں کی تھی۔ تاہم، یہ 1955 میں اس وقت شروع ہوا جب اس وقت کے بنگلور سٹی میونسپلٹی کارپوریشن اس زمین پر ایک اسکول بنانا چاہتی تھی۔ اس وقت اس عیدگاہ میدان کے مینجرنے اس کی مخالفت کی تھی کیونکہ کافی زمین دوسری جگہ دستیاب تھی اور وہ وہ مخصوص زمین کیوں چاہتے تھے۔ 1956 میں بنگلور منصف کی عدالت میں مقدمہ دائر کیا گیا تھا لیکن اس عدالت میں اسے مسترد کر دیا گیا تھا۔

 اسی سال اس عیدگاہ میدان کے انچارج قاضی نے نچلی عدالت کے فیصلے پر سوال اٹھاتے ہوئے بنگلورو سول کورٹ میں اپیل دائر کی تھی۔ عدالت نے فریقین کو سننے کے بعد فیصلہ سنایا کہ 2.5 ایکڑ عیدگاہ میدان کی نشاندہی کی گئی ہے جو عید کے دن مسلمانوں کی طرف سے نماز ادا کرنے کے لیے ہے اور یہ مسلمانوں کا ہے۔ اس کے ساتھ ہی اس نے حکومت اور سٹی میونسپل کارپوریشن کو اس میں مداخلت سے روکنے کا حکم امتناعی جاری کیا۔ 1958 میں، اس وقت کی سٹی میونسپل کارپوریشن نے 1958 کے فیصلے کے خلاف میسور ہائی کورٹ کا رخ کیا۔ اس وقت کانگریس پارٹی اقتدار میں تھی۔ میسور ہائی کورٹ نے بھی مسلمانوں کے حق میں فیصلہ دیا اور 1962 میں اسے دوبارہ سپریم کورٹ میں چیلنج کیا گیا۔ 27 جنوری 1964 کو عدالت عظمیٰ نے مشاہدہ کیا کہ یہ عیدگاہ میدان صدیوں سے مسلمانوں کی ملکیت ہے اور اسے عید کی نماز پڑھنے کے صرف ایک مقصد کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ یہ کہتے ہوئے حکومت کی درخواست مسترد کر دی گئی۔

 سپریم کورٹ نے نشاندہی کی تھی کہ سٹی میونسپل کارپوریشن نے مذکورہ گراؤنڈ کی ملکیت اور اس کے استعمال سے متعلق کوئی دستاویز پیش نہیں کی۔ یہ ثابت کرنے کے لیے دستاویزات موجود ہیں کہ یہ زمین 7 جون 1965 کو میسور اسٹیٹ بورڈ آف وقف میں وقف بورڈ کی ہے اور اسے گزٹ میں سیریل نمبر 137 میں چھاپ دیا گیا ہے۔ 1979 اور 1981 میں عمارت تعمیر کرنے کی اجازت بھی ظاہر کرتی ہے کہ یہ وقف جائیداد ہے۔

ایس ڈی پی آئی ریاستی صدر عبدالمجیدنے مزید کہا کہ حال ہی میں ریونیو منسٹر آر اشوک نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے ان تمام حقائق کو چھپایا اور لوگوں کو گمراہ کرنے کی کوشش کی۔ وزیر کا یہ بیان کہ حکومت کی جانب سے متبادل اراضی دی گئی ہے سراسر گمراہ کن ہے کیونکہ متبادل زمین نماز کے لیے نہیں بلکہ تدفین کے لیے دی گئی تھی۔ گزشتہ ہفتے کرناٹک کی ہائی کورٹ نے ایک عبوری حکم جاری کیا تھا جس میں حکومت سے staus quo برقرار رکھنے کو کہا گیا تھا لیکن حکومت نے ڈویژن بنچ کے سامنے اپیل کیوں دائر کی؟ کیا حکومت کا کام گنپتی کی مورتی کو نصب کرنا ہے۔ غیر معمولی سیلاب کی وجہ سے لوگوں کی زندگی بدتر ہو گئی ہے اور اب بھی کوویڈ 19 وبائی مرض کی وجہ سے لوگوں کو مالی بحران کا سامنا ہے۔ حکومت اس پر توجہ دینے کے بجائے شہریوں میں فرقہ وارانہ جذبات کو ہوا دے رہی ہے۔

عبدالمجید نے کہا کہ گنپتی کی مورتی لگانے کے لیے کافی جگہیں ہیں جن پر انہیں کوئی اعتراض نہیں ہے۔ ہندوؤں کو سوچنا چاہیے کہ گنپتی کو مسلمانوں کی تدفین یا نماز کی جگہ پر نصب کرنا کیسا ہے؟ حکومت پرامن ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ اس معاملے کو کسی بھی قیمت پر اپنے سیاسی فائدے کے لیے استعمال نہیں کرنا چاہیے اور ناخوشگوار واقعات کی راہ ہموار نہیں کرنی چاہیے۔ معاشرے میں کسی تصادم کی صورت میں حکومت ذمہ دار ہوگی۔ بہتر ہے کہ حکومت سوچ سمجھ کر فیصلہ کرے۔ اس پورے معاملے میں پہلا ملزم کانگریس پارٹی ہے جس نے مسلمانوں کو دھوکہ دیا اور عیدگاہ میدان چھیننے کی کوشش میں عدالت کا رخ کیا۔ کئی بار اقتدار میں آنے کے باوجود اس مسئلے کو مستقل طور پر حل کرنے میں دلچسپی نہیں دکھائی۔ ایس ڈی پی آئی ریاستی صدر عبدالمجید نے اختتام میں کہا کہ کانگریس اور بی جے پی دونوں نے مسلمانوں کو یکساں طور پر دھوکہ دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی 'سب کا ساتھ' کہتے ہیں لیکن کیا مسلمان اس میں آتے ہیں؟ اگر ایسا ہے تو انہیں عیدگاہ کا میدان مسلمانوں کو دے کر بڑے دل کا مظاہرہ کرنا چاہیے۔

ایک نظر اس پر بھی

 اڈانی کمپنی کے خُرد بُرد معاملہ پر کانگریس کا بنگلورو میں احتجاج

ریاست کرناٹک کے دارلحکومت بنگلورو کے میسور بینک سرکل پر کانگریس کی جانب سے اڈانی کمپنی سے جڑے معاملات پراحتتجاج کیاگیا جس میں پارٹی کے رہنما و کارکنان شریک تھے۔ احتجاج کے دوران کانگریس کے رہنماؤں نے کہا کہ راہل گاندھی نے پہلے ہی اس معاملہ سے متعلق پیشن گوئی کی تھی۔

منگلورو: نیشنل ایجوکیشن پالیسی 'ہندوتوا راشٹرا' بنانے کا ٹوُل کِٹ ہے؛ ماہر تعلیم ڈاکٹر نرنجنارادھیا 

کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کی آل انڈیا یوتھ فیڈریشن (اے آئی وائی ایف) جنوبی کینرا و اڈپی، سمدرشی ویدیکے منگلورو، کرناٹکا تھیولوجیکل ریسرچ انسٹی ٹیوٹ منگلورو کے اشتراک سے 'نیشنل ایجوکیشن پالیسی (این ای پی) اور اسکولی تعلیم' کے عنوان پر شہر میں منعقدہ  سیمینار میں اپنے خیالات کا ...

پتور: آپسی اختلافات بھول کر بی جے پی کو شکست دینے کے لئے متحد ہوجائیں - کانگریس پارٹی کارکنان سے لیڈروں کی اپیل 

کانگریس پارٹی لیڈران نے  پتور کے نیلیاڈی سے  ملناڈ اور ساحلی علاقے کے لئے اپنی 'پرجا دھونی یاترا' کا دوسرا مرحلہ شروع کرتے ہوئے اپنی کارکنان کو آواز دی کہ وہ آپسی اختلافات بھول کر بی جے پی کی  "بد عنوان، غیر فعال، غیر مخلص، غیر موثر اور عوام سے دور" حکومت کو ہٹانے کے لئے متحد ...

رائچور: طالبہ کی ہاسٹل میں مشتبہ موت، والدین کا جنسی ہراسانی کا الزام

لنگاساگر ٹاؤن میں واقع ہاسٹل کے کمرے میں ایک 17سالہ طالبہ پُراسرار حالات میں مردہ پائی گئی۔ جس کو لے کر والدین نے الزام لگایا ہے کہ پرنسپل کی مبینہ جنسی ہراسانی اس کے لئے ذمہ دار ہے۔ والدین کا کہنا ہے کہ جنسی ہراسانی کے بعد اس کا قتل کیا گیا ہے اور بعد میں اُسے خودکشی دکھانے کی ...

مئی میں اسمبلی انتخابات ہونے کی اطلاعات کے بعد کرناٹک میں شروع ہوگئی انتخابی گہماگہمی؛ 9 فروری کو کماراسوامی پہنچیں گے بھٹکل

کرناٹک میں مئی کے  تیسرے ہفتے میں اسمبلی انتخابات ہونے کی اطلاعات موصول ہونے کے ساتھ ہی  ریاست کی  سیاسی پارٹیوں میں میٹنگوں  کا آغاز ہوچکا ہے۔ اسی طرح کی ایک میٹنگ آج سنیچر کو بنگلور جے ڈی ایس پارٹی کی منعقد ہوئی جس میں بھٹکل کے  جے ڈی ایس قائد عنایت اللہ شاہ بندری بھی شریک ...