راہل گاندھی نے بہار کانگریس لیڈروں کے ساتھ ’ورچوئل میٹنگ‘ میں نتیش پر کیا حملہ

Source: S.O. News Service | Published on 7th August 2020, 10:07 PM | ملکی خبریں |

پٹنہ، 7؍اگست (ایس او نیوز؍ایجنسی) بہار میں اس سال کے آخر میں ممکنہ اسمبلی انتخابات کو لے کر یہاں کورونا بحران میں بھی سیاسی پارٹیوں کی سرگرمیاں بڑھ گئی ہیں۔ اس درمیان کاگنریس بھی اپنی گرفت مضبوط بنانے کے لیے کمر کستی ہوئی نظر آ رہی ہے۔ کانگریس لیڈر اور سابق پارٹی صدر راہل گاندھی نے جمعرات کو بہار کے کانگریس لیڈروں کے ساتھ ورچوئل میٹنگ کی۔ پارٹی ذرائع کے مطابق میٹنگ کے دوران بہار کی موجودہ سیاسی صورت حال، سیلاب اور کورونا سے پیدا مسائل اور اپوزیشن پارٹیوں کے اتحاد کو لے کر میٹنگ میں تبادلہ خیال ہوا۔ میٹنگ کے دوران کورونا اور سیلاب کی سنگین حالت کو لے کر سنجیدہ بات چیت ہوئی اور لوگوں کو اس مشکل وقت میں سہولت نہ ملنے کا بھی معاملہ اٹھایا گیا۔ میٹنگ میں ریاست میں کورونا انفیکشن کی بڑھتی تعداد پر بھی فکر کا اظہار کیا گیا۔

میٹنگ میں کہا گیا کہ نتیش کمار کی حکومت ایک ایسی حکومت ہے جو مشکل وقت میں بھی اپنے ریاست کے لوگوں کو دیگر ریاستوں سے واپس لانے میں ناکام رہی۔ میٹنگ میں بہار کانگریس کے انچارج شکتی سنگھ گوہل، ویریندر راٹھوڑ، اجے کپور، ریاستی صدر مدن موہن جھا، سدانند سنگھ، طارق انور، اکھلیش سنگھ، مراری گوتم، پریم چند مشرا، للن کمار، شاکر علی، سجیت کمار سنہا سمیت دیگر اہم عہدیداران و مرکزی ٹیم کے کچھ لیڈران موجود رہے۔

کانگریس کے ایک لیڈر نے بتایا کہ میٹنگ میں راہل گاندھی نے اپوزیشن پارٹیوں کے اتحاد کو قائم رکھنے پر زور دیا اور کانگریس اراکین کو کام کے تئیں مزید پرعزم بننے کی بھی ہدایت دی۔ اس دوران بہار کی تعلیم، روزگار اور صحت کی حالت بھی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

ایک نظر اس پر بھی

ایردوآن نے یو این میں اٹھایا مسئلہ کشمیر، ’اندرونی معاملات میں دخل نہ دے ترکی‘ انڈیا کی تاکید

 جموں و کشمیر کے حوالہ سے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں ترکی کے صدر رجب طیب اردوآن کے بیان پر اقوام متحدہ میں ہندوستان کے مستقل نمائندہ ٹی ایس ترومورتی نے سخت احتجاج کرتے ہوئے کہا ہے کہ ترکی کو دوسرے ممالک کی خودمختاری کا احترام کرنا سیکھنا چاہئے۔

ممبئی میں طوفانی بارش سے سیلابی صورتحال، عام زندگی مفلوج، متعدد رہائشی کالونیاں زیر آب

ملک کی تجارتی راجدھانی ممبئی میں گزشتہ شب سے جاری بھاری بارش کی وجہ سے سیلابی صورتحال پیدا ہوگئی ہے۔ ستمبر کے مہینے میں اس طرح کی بارش نے ایک بار پھر شہر کی عام زندگی کو مفلوج کرکے رکھ دیا ہے۔