برطانیہ سے ہندوستان لایا گیا سٹے باز سنجیو چاولہ

Source: S.O. News Service | By INS India | Published on 14th February 2020, 1:38 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،13فروری (آئی این ایس انڈیا)جنوبی افریقہ کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان ہینسی کرونئے کے ملوث ہونے والے میچ فکسنگ کیس کے ایک اہم ملزم سنجیو چاولہ کو جمعرات کو برطانیہ کے  حوالے  کیا گیا۔دہلی پولیس کے ایک افسر نے بتایا کہ برطانیہ کا 50 سالہ شہری صبح اندرا گاندھی بین الاقوامی ہوائی اڈے پہنچا۔اس کے ساتھ لندن سے کرائم برانچ حکام کی ایک ٹیم تھی۔انہوں نے بتایا کہ چاولہ کو پوچھ گچھ کے لئے کرائم برانچ دفتر لے جایا جا سکتا ہے۔چاولہ پر سال 2000 میں ایک کرکٹ میچ فکس کرنے کا الزام ہے۔گزشتہ ماہ برطانیہ میں ہائی کورٹ نے سنجیو چاولہ کی درخواست کو خارج کرتے ہوئے گرفتاری کا حکم دیا تھا۔سماعت کے دوران جسٹس ڈیوڈ بین اور جسٹس کلائیو لوئیس نے کہا تھا کہ سنجیو چاولہ کی عرضی کو مسترد کیا جاتا ہے۔ہند-انگلینڈ حوالگی معاہدے کے تحت اسے 28 دن کے اندر اندر ہندوستان بھیجا جائے۔ہائی کورٹ نے حکومت ہند سے کہا کہ اس کے اسپیشل سیل میں رکھا جائے جہاں اس کی حفاظت اور صحت کا بہتر خیال رکھا جا سکے۔اس پر حکومت ہند کی جانب سے پیش وکیل نے کہا کہ اس کی اس مانگ کو حکومت سنجیدگی سے لے گی اور اسے کسی طرح کا نقصان نہیں پہنچے گا۔کورٹ میں پیش کئے گئے دستاویزات کے مطابق، چاولہ دہلی کا ایک تاجر تھا جو 1996 میں بزنس ویزا پر لندن پہنچا،2000 میں اس کا ہندوستانی پاسپورٹ منسوخ کر دیا گیا،2005 میں اسے برطانیہ کا پاسپورٹ مل گیا اور وہ اب برطانوی شہری ہے۔اسے فروری 2000 میں جنوبی افریقہ کے سابق کپتان ہینسی کرونئے کے سامنے بھی پیش کیا گیا تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

26جنوری کو ایس ڈی پی آئی کی جانب سے ملک بھر میں ’’کسان یکجہتی مارچ ‘‘

سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا(ایس ڈی پی آئی) قومی جنر ل سکریٹری الیاس محمد تمبے نے اپنے جاری کردہ اخباری بیان میں کہا ہے کہ 26جنوری 2021کو ہونے والے کسانوں کے احتجاج کی حمایت میں ایس ڈی پی آئی ملک بھر میں ’’کسان یکجہتی مارچ‘‘منعقد کرے گی۔

ہندوستان – چین فوج کے درمیان سکم میں ہوا تھا معمولی تصادم، مقامی کمانڈروں نے معاملے کو کیا حل : ہندوستانی فوج

ہندوستان اور چین آرمی کے مابین سکم میں معمولی تصادم کی خبریں سامنے آ رہی ہیں۔ ایل اے سی پر دونوں فوجوں کے مابین تصادم 20 جنوری کو سکم کے علاقے ناکو لا میں ہوا تھا۔ یہ معاملہ مقامی کمانڈروں کی سطح پر حل کیا گیا ہے۔

ٹریکٹر پریڈ کی تیاری: 30 ہزار ٹریکٹر ٹکری ، سنگھو اور غازی پور بارڈر پہنچے ، رکاوٹیں ہٹالی گئیں

 کسانوں کی تنظیموں اور دہلی پولیس کے 26 جنوری کو ٹریکٹر پریڈ پر مبینہ اتفاق کے بعد سنگھو اور ٹکری بارڈر پر ٹریکٹر مارچ کی تیاریاں زوروں پر ہیں۔ پنجاب اور ہریانہ سے ٹریکٹروں کی آمد کا سلسلہ بھی جاری ہے۔