برطانیہ سے ہندوستان لایا گیا سٹے باز سنجیو چاولہ

Source: S.O. News Service | By INS India | Published on 14th February 2020, 1:38 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،13فروری (آئی این ایس انڈیا)جنوبی افریقہ کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان ہینسی کرونئے کے ملوث ہونے والے میچ فکسنگ کیس کے ایک اہم ملزم سنجیو چاولہ کو جمعرات کو برطانیہ کے  حوالے  کیا گیا۔دہلی پولیس کے ایک افسر نے بتایا کہ برطانیہ کا 50 سالہ شہری صبح اندرا گاندھی بین الاقوامی ہوائی اڈے پہنچا۔اس کے ساتھ لندن سے کرائم برانچ حکام کی ایک ٹیم تھی۔انہوں نے بتایا کہ چاولہ کو پوچھ گچھ کے لئے کرائم برانچ دفتر لے جایا جا سکتا ہے۔چاولہ پر سال 2000 میں ایک کرکٹ میچ فکس کرنے کا الزام ہے۔گزشتہ ماہ برطانیہ میں ہائی کورٹ نے سنجیو چاولہ کی درخواست کو خارج کرتے ہوئے گرفتاری کا حکم دیا تھا۔سماعت کے دوران جسٹس ڈیوڈ بین اور جسٹس کلائیو لوئیس نے کہا تھا کہ سنجیو چاولہ کی عرضی کو مسترد کیا جاتا ہے۔ہند-انگلینڈ حوالگی معاہدے کے تحت اسے 28 دن کے اندر اندر ہندوستان بھیجا جائے۔ہائی کورٹ نے حکومت ہند سے کہا کہ اس کے اسپیشل سیل میں رکھا جائے جہاں اس کی حفاظت اور صحت کا بہتر خیال رکھا جا سکے۔اس پر حکومت ہند کی جانب سے پیش وکیل نے کہا کہ اس کی اس مانگ کو حکومت سنجیدگی سے لے گی اور اسے کسی طرح کا نقصان نہیں پہنچے گا۔کورٹ میں پیش کئے گئے دستاویزات کے مطابق، چاولہ دہلی کا ایک تاجر تھا جو 1996 میں بزنس ویزا پر لندن پہنچا،2000 میں اس کا ہندوستانی پاسپورٹ منسوخ کر دیا گیا،2005 میں اسے برطانیہ کا پاسپورٹ مل گیا اور وہ اب برطانوی شہری ہے۔اسے فروری 2000 میں جنوبی افریقہ کے سابق کپتان ہینسی کرونئے کے سامنے بھی پیش کیا گیا تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

شاہین باغ: مظاہرین اور مذاکرات کاروں کی بات چیت بے نتیجہ،شہریت قانون واپس لینے تک ڈٹے رہنے کا عزم

شاہین باغ میں گزشتہ68 دنوں سے شہریت ترمیمی قانون، این آر سی و این پی آر کے خلاف جاری عالمی شہرت حاصل کر چکے دھرنا و مظاہرہ میں 19فروری کا دن بہت خاص رہا کیونکہ سپریم کورٹ کے ذریعہ مقرر کردہ مذاکرہ کار سنجے ہیگڈے اور سادھنا رام چندرن بات چیت کرنے پہنچے-

آسام: زبیدہ بیگم کے پاس15دستاویزات موجود شہریت ثابت کرنے میں پھر بھی ناکام!

پورے ہندوستان میں این آر سی لگائے جانے اور اس کے اثرات پر بحث جاری ہے- آسام میں این آر سی سے پیدا مشکلات کو سامنے رکھ کر لوگ پورے ملک میں این آر سی لگائے جانے کی مخالفت کر رہے ہیں - آسام میں کئی معاملے سامنے آ چکے ہیں جس میں برسوں سے وہاں رہ رہے لوگوں کو شہریت ثابت کرنے میں مشکل پیش ...

جس طرح سے سی وی سی کی تقرری ہوئی اس طرح تو چپراسی کی بھی تقرری نہیں ہو سکتی: کانگریس

کانگریس نے چیف ویجلنس کمشنر (سی وی سی) اور ویجلنس کمشنر (وی سی ) کی تقرری کو اداروں کو تباہ کرنے کی ایک اور مثال قرار دیتے ہوئے اسے غیر قانونی قرار دیا اور الزام لگایا کہ اس میں طریقہ کار پر عملدرآمد ہی نہیں کروایا گیا ہے۔