آندھراپردیش کے وجے واڑہ میں ایک کوویڈ 19 قرنطینہ مرکز میں لگی آگ، 10 افراد ہلاک

Source: S.O. News Service | Published on 9th August 2020, 10:53 PM | ملکی خبریں |

حیدرآباد،9؍اگست (ایس او نیوز؍ایجنسی) آندھراپردیش کے وجے واڑا میں آج صبح 5 بجے قرنطینہ مرکز کے طور پر استعمال کیے جا رہے ایک ہوٹل میں آگ لگنے سے 10 افراد ہلاک ہوگئے۔

حکام کے مطابق ایک شخص کی موت جل کر ہوئی، جب کہ باقی اموات دم گھٹنے کی وجہ سے ہوئی ہیں۔

ڈیزاسٹر ریسپانس فورس کی ایک ٹیم نے پی پی ای کٹس اور حفاظتی سازوسامان پہن کر لاشوں کو ہوٹل سے باہر لایا۔

ہوٹل کے اندر 40 کے قریب افراد موجود تھے، جن میں سے 30 کوویڈ 19 مریض تھے اور 10 اسپتال کے عملے سے تھے۔

پندرہ مریضوں کو فائر ٹینڈروں کا استعمال کرکے بچایا گیا، جب کہ لگ بھگ 17 افراد کو سیڑھیوں کا استعمال کرکے بحفاظت نکالا گیا۔ مریضون کو اسی طرح کے قرنطینہ سہولیا والے اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

سیکیورٹی گارڈ کرشنا ریڈی سمیت دو ملازمین نے خود کو بچانے کے لیے پہلی اور دوسری منزل سے چھلانگ لگا دی تھی۔

وجے واڑا کے کمشنر آف پولیس بی سرینواسلو کے مطابق یہ واقعہ ہوٹل ’’سورن پیلیس‘‘ میں پیش آیا، جس کو COVID-19 قرنطینہ مرکز کے طور پر استعمال کیا جارہا تھا۔

انھوں نے بتایا کہ آگ پر قابو پالیا گیا ہے۔

آگ ممکنہ طور پر شارٹ سرکٹ کی وجہ سے پہلے ہوٹل کے استقبالیہ کے قریب لگی اور پھر پہلی اور دوسری منزل تک پھیل گئی۔ یہ ہوٹل شہر کے وسط میں واقع ہے۔

وزیر اعلی وائی ایس جگن نے حادثے پر صدمے کا اظہار کیا۔

وزیراعلیٰ نے عہدیداروں کو ہدایت کی کہ وہ متاثرین کو بہتر طبی خدمات کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے فوری اقدامات کریں۔

وزیر اعلیٰ نے مہلوکین کے اہل خانہ کے لیے 50 لاکھ کے معاوضے کا بھی اعلان کیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

ایردوآن نے یو این میں اٹھایا مسئلہ کشمیر، ’اندرونی معاملات میں دخل نہ دے ترکی‘ انڈیا کی تاکید

 جموں و کشمیر کے حوالہ سے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں ترکی کے صدر رجب طیب اردوآن کے بیان پر اقوام متحدہ میں ہندوستان کے مستقل نمائندہ ٹی ایس ترومورتی نے سخت احتجاج کرتے ہوئے کہا ہے کہ ترکی کو دوسرے ممالک کی خودمختاری کا احترام کرنا سیکھنا چاہئے۔

ممبئی میں طوفانی بارش سے سیلابی صورتحال، عام زندگی مفلوج، متعدد رہائشی کالونیاں زیر آب

ملک کی تجارتی راجدھانی ممبئی میں گزشتہ شب سے جاری بھاری بارش کی وجہ سے سیلابی صورتحال پیدا ہوگئی ہے۔ ستمبر کے مہینے میں اس طرح کی بارش نے ایک بار پھر شہر کی عام زندگی کو مفلوج کرکے رکھ دیا ہے۔