تریپورا گورنر تتھاگت رائے کا روہنگیا مسلمانوں کو لے کر متنازع ٹوئٹ ، چوطرفہ تنقید کی زد میں آئے

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 11th September 2017, 11:29 PM | ملکی خبریں |

اگرتلہ،11؍ستمبر(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) تریپورا کے گورنر تتھاگت رائے نے ٹوئٹ کرکے روہنگیا مسلمانوں کے ہندوستان میں بازآبادکاری کی مخالفت کی ہے جس سے ایک نیا تناز ع پیدا ہوگیا ہے۔ رائے کے ٹوئٹ سے تنازع کافی بڑھ گیا ہے۔ ان کے ٹوئٹ پر مختلف حلقوں سے وابستہ لوگ ان کی سخت نکتہ چینی کررہے ہیں۔ تمام نکتہ چینی کے باوجود رائے اپنے موقف پر قائم ہیں ۔ وہ روہنگیامسلمانوں کے معاملے میں گذشتہ چند دنوں سے مسلسل ٹوئٹ کررہے ہیں۔اس معاملے پر رائے نے ٹوئٹ کرکے کہا کہ بنگلہ دیش یا کوئی بھی مسلم ملک روہنگیا مسلمانوں کو پناہ گزین کے طور پر قبول نہیں کررہا ہے لیکن ہندوستان تو ایک بہت بڑا دھرم شالہ ہے اور اسے روہنگیا مسلمانوں کو قبول کرلینا چاہئے۔ اور اگر آپ نہیں کہتے ہیں تو آپ انسانیت مخالف ہیں۔ رائے نے اس وقت کے مشرقی پاکستان میں ہندووں پر ہوئے مظالم اور قتل عام کا ذکر کرتے ہوئے روہنگیا مسلمانوں کے مسئلے پر ایک کے بعد ایک ٹوئٹ کرنا جاری رکھا۔

بی جے پی نے گورنر کے اس بیان پر کوئی تبصرہ کرنے سے انکار کردیا ہے۔ جب کہ کانگریس اور مارکسی کمیونسٹ پارٹی نے رائے کے ٹوئٹ کی نکتہ چینی کرتے ہوئے ان پر اپنے عہدہ کا غلط استعمال کرنے کا الزام لگایا ہے۔ خیال رہے کہ بائیں بازو کے رہنماوں اور دانشوروں نے روہنگیا مسلمانوں کے ہندوستان میں پناہ دینے کی کھل کر حمایت کی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بہارمیں مورتی وسرجن پربی جے پی ،جدیومیں ٹھنی

محرم کے دن مجسمہ کابھسان نہیں کیا جانا چاہئے، مغربی بنگال حکومت کے اس حکم پروزیراعلیٰ ممتا بنرجی کی طرف سے تنقیدکی گئی ہے۔ اب اسی طرح کا حکم بہار کے وزیراعلیٰ نیتش کمار نے دیاہے۔

جتندر سنگھ نے کی جموں و کشمیر کے طلباء سے ملاقات

شمال مشرقی خطے کی ترقی کے وزیر جتیندر سنگھ نے دارالحکومت کے دورے پر آئے جموں و کشمیر کے طلبہ کے ایک گروپ کے ساتھ آج بات چیت کی اور نوجوانوں پر مرکوز مرکزی حکومت کے بہت سے اقدامات کے بارے میں تفصیل سے بتایا۔