ہندوستانی جمہوریت پر حملہ ہے ایک ملک ایک الیکشن کا نطریہ : حامد انصاری

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th July 2018, 12:48 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،12جولائی (ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا)سابق نائب صدر حامد انصاری نے لوک سبھا اور اسمبلی انتخابات ایک ساتھ کرائے جانے کے نظریہ کی مخالفت کی ہے۔ انہوں نے ایک ملک ایک الیکشن کی تھیوری کو ہندوستانی جہوریت پر حملہ قرار دیا ہے۔انصاری نے کہا کہ ہندوستان تکثیریت کی زمین ہے ، ایک بڑے ملک کیلئے ایک الیکشن کرانے کی بات صرف ایک ناممکن نظریہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسمبلی انتخابات کے دوران بھی آپ کو کئی مراحل میں سیکورٹی کی ضرورت ہے ، تو اگر الیکشن ایک ساتھ کرایا جائے گا ، تو ملک بھر میں سیکورٹی کیسے فراہم کریں گے۔

سابق نائب صدر نے ہندوستا میں انتخابی جیت کیلئے فرسٹ پاسٹ دی پوسٹ نظام پر بھی تبصرہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ مشکل یہ ہے کہ بڑی تعداد میں لیڈران 50 فیصدی سے زیادہ ووٹ نہیں پاتے ہیں ، اس کے باوجود وہ کیسے اس بات کا دعوی کرتے ہیں کہ وہ پورے علاقہ کی نمائندگی کرتے ہیں۔

خیال رہے کہ سابق نائب صدر کا یہ تبصرہ ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب لا کمیشن سیاسی پارٹیوں کے ساتھ تبادلہ خیال کے بعد ایک ساتھ الیکشن پر رپورٹ تیار کررہا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

پارلیمانی انتخابات سے قبل مسلم سیاسی جماعتوں کا وجود؛ کیا ان جماعتوں سے مسلمانوں کا بھلا ہوگا ؟

لوک سبھا انتخابات یا اسمبلی انتخابات قریب آتے ہی مسلم سیاسی پارٹیاں منظرعام  پرآجاتی ہیں، لیکن انتخابات کےعین وقت پروہ منظرعام سےغائب ہوجاتی ہیں یا پھران کا اپنا سیاسی مطلب حل ہوجاتا ہے۔ اورجو پارٹیاں الیکشن میں حصہ لیتی ہیں ایک دو پارٹیوں کو چھوڑکرکوئی بھی اپنے وجود کو ...

بھیم آرمی کے سربراہ کی مولانا ارشد مدنی سے خصوصی ملاقات؛ ریاستی سیاست میں ہلچل

جیل سے رہائی کے بعد بھیم آرمی سربراہ چندر شیکھر آزاد نے دیوبند پہنچ جمعیۃ علماء ہند کے صدر مولانا سید ارشد مدنی سے ان کی رہائش گاہ پر ملاقات کی ۔اس ملاقات کے بعد میڈیا سے صرف یہ کہا کہ دبے کچلے طبقات کو ایک ساتھ لانا اور انہیں متحد کرنا ان کا مقصد ہے اور اسی کے تحت وہ یہاں آئے ...