سب سے بڑی پارٹی کو بلائیں گورنر، لیکن خرید و فروخت نہ ہو،سابق اٹارنی جنرل کامشورہ 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th May 2018, 12:47 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی 16 مئی ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا )سابق اٹارنی جنرل آر کھیات نے کرناٹک میں حکومت بنانے کو لے کر جاری اتھل پتھل پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ گورنر کو سب سے بڑی پارٹی کو حکومت تشکیل کے لئے رابطہ کرنا چاہئے اور انہیں مقررہ وقت میں اکثریت ثابت کرنے کے لئے کہا جانا چاہئے۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا کہ گورنر یہ بھی یقین دہانی کرائے کہ ممبران اسمبلی کی خرید فروخت نہ ہو۔انہوں نے کہا کہ اس کے کوئی معنی نہیں ہیں کہ اتحاد والی پارٹیوں کے پاس اکثریت ہے، پہلے سب سے بڑی پارٹی کو حکومت بنانے کے لئے بلایا جانا چاہئے۔گوا اور منی پور میں حکومت بنانے کے عمل پر انہوں نے کہا کہ یہ گورنر کی سمجھ ہے، لیکن پروٹوکول یہ ہے۔بتا دیں کہ کرناٹک انتخابات نے معلق اسمبلی کے نتائج دیئے ہیں، جس میں بی جے پی کو 104 سیٹوں پر کامیابی حاصل کی ہے، جبکہ کانگریس نے 78 اور جے ڈی ایس نے 37 سیٹوں پر کامیابی حاصل کی ہے۔ اس کے علاوہ بہوجن سماج پارٹی وغیرہ بالترتیب 1۔1 سیٹوں پر جیت حاصل ہوئی ہے۔ ساتھ ہی ایک نشست دیگر کے حصے میں آئی ہے۔اگرچہ بی جے پی کا دعوی ہے کہ اس کے رابطے میں جے ڈی ایس کانگریس کے ممبر اسمبلی ہیں، تو وہیں کانگریس اپنے ممبران اسمبلی کو ریزورٹ میں لے جا سکتی ہے۔ بنگلور میں بدھ کو اجلاسوں کا دور جاری ہے، کانگریس جے ڈی ا یس بی جے پی اپنے ممبران اسمبلی کے ساتھ ملاقات کرنے میں لگے ہوئے ہیں۔بھارتیہ جنتا پارٹی کرناٹک میں حکومت بنانے کے لئے پورے زور لگا رہی ہے۔ ذرائع کی مانیں تو بی جے پی کانگریس کے لنگایت ممبران اسمبلی کے رابطے میں ہیں۔ اس کے لئے پارٹی لنگایت مٹھوں سے رابطہ میں ہے ۔جس سے لنگایت کمیونٹی کے ممبر اسمبلی یدی یورپا کے رابطے میں آ جائیں۔اس کے علاوہ بی جے پی کو گورنر کے فیصلے کا بھی انتظار ہے۔ دیکھنا یہ ہے کہ گورنر حکومت بنانے کے لئے پہلے کسے دعوت دیتے ہیں۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کے والک آوٹ اور کافی ہنگامہ آرائی کے درمیان کرناٹکا کے وزیراعلیٰ کماراسوامی نے اپنی اکثریت ثابت کرتے ہوئے فلور ٹیسٹ میں پائی کامیابی

کرناٹک ودھان سبھا میں فلورٹیسٹ کے دوران  کافی ہنگامہ آرائی اور بی جے پی اراکین کے والک آوٹ کے درمیان  کرناٹک کے نو منتخب وزیراعلیٰ کماراسوامی نے  فلور ٹیسٹ میں اپنی اکثریت ثابت کردی۔  کانگریس۔جے ڈی ایس گٹھ بندھن کو 117 ووٹ پڑے۔اس کے ساتھ ہی اب کرناٹک میں سیاسی ڈرامے بازی ...

گوا میں اتحادی جز گووا فارورڈ پارٹی کی دھمکی

بی جے پی کی قیادت والی گووا حکومت کا ایک جز گووا فارورڈ پارٹی نے آج کہا ہے کہ اگر ریاست میں جاری موجودہ کان کنی کے بحران کا حل نہیں ہوا تو وہ اگلے لوک سبھا انتخابات میں زعفرانی پارٹی کی حمایت نہیں کرے گی۔