کانگریسی طوفان میں اڑے سب کے ہوش ، نانڈیز میں ہوئے میونسپل انتخابات میں کانگریس کا81میں سے 66سیٹوں پر قبضہ

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 12th October 2017, 9:53 PM | ملکی خبریں |

ناندیڑ12اکتوبر (ایس او نیوز/ آئی این ایس انڈیا)مہاراشٹر کے ناندیڑ بلدیاتی انتخابات کے نتائج اور رجحانات آنے شروع ہو گئے ہیں۔جمعرات کو صبح 10 بجے سے ووٹوں کی گنتی جاری ہے۔میونسپل کارپوریشن کی 81 سیٹوں پر 11 اکتوبر کو ہوئی ووٹنگ میں تقریبا 60 فیصد ووٹنگ ہوئی تھی ۔ شام 5.00 بجے تک81میں73 کے نتائج آ چکے ہیں۔ اس میں کانگریس پارٹی کو 66 سیٹوں پر بی جے پی کو 5 شیوسینا کو 1 اور آزاد امیدوار کو 1 سیٹ پر کامیابی حاصل ہوئی ہے ۔ ادھر باقی سیٹوں پر بھی کانگریس اور بی جے پی میں جنگ چل رہی ہے. قابل ذکر ہے کہ این سی پی اور مجلس اتحاد المسلمین کو ایک سیٹ بھی نہیں ملی ہے ہے ۔ بقیہ 8 سیٹوں میں 7 پر کانگریس آگے ہے اور ایک پر بی جے پی آگے چل رہی ہے ۔ کانگریس پارٹی نے یہاں پر کانگریس کی جیت پر اشوک چوہان کو مبارک باد دی ہے۔سال 2012 میں ہوئے انتخابات میں بھی کانگریس نے 81 سیٹوں میں سے 41 سیٹیں جیتی تھی جبکہ شیوسینا نے 12 سیٹیں جیتی تھیں. وہیں مجلس اتحاد المسلمین نے 11 سیٹوں پر قبضہ کیا تھا۔بی جے پی کو محض دو سیٹیوں سے اکتفا کرنا پڑا تھا۔ ایک بار بی جے پی نے اس بار یہاں پر فتح کے لئے پورا زور لگا دیا ہے۔ خود وزیر اعلی دیویندر فڑنویس نے یہاں پر لوگوں تک پہنچ بنانے کے لئے ریلیاں بھی کی۔ ویسے یہ انتخابات وزیراعلی کے لئے ناک کا سوال ہے کیونکہ یہ مہاراشٹر کے ودربھ علاقے سے لگا مراٹھواڑا کا علاقہ ہے اور سی ایم اس بار ودربھ علاقہ سے بنا ہے۔ عموما اس سے پہلے مراٹھواڑا کا ہی لیڈر سی ایم بنتا رہا ہے۔ ناندیڑ کانگریسی لیڈر اور سابق وزیر اعلی اشوک چوہان کا علاقہ ہے ان کے لئے یہاں جیت درج کرنا اس لئے بھی کافی اہم ہے، کیونکہ انہوں نے یہیں سے جیت حاصل کر پارلیمنٹ کا سفر طے کیا تھا۔ناندیڑ کے آندھرا پردیش سے اور خاص طور پر حیدرآباد سے قریب ہونے کی وجہ سے صدر مجلس اتحادالمسلمین اسد الدین اویسی کا بھی کچھ گرفت رہی ہے ۔

ایک نظر اس پر بھی

سنیمامیں لوگ تفریح کے لیے جاتے ہیں،قومی گیت کولازمی نہیں کیاجاسکتا؛قومی ترانہ پرسپریم کورٹ نے کہا، ہمیں اپنے ہاتھوں میں حب الوطنی نہیں رکھنی چاہیے

سنیماگھروں میں قومی گیت لازمی بنانے کے فیصلہ کے ایک سال بعد ایک موڑ آیاہے۔اب سپریم کورٹ نے سینٹرکوبتایاہے کہ وہ اس معاملے میں خودفیصلہ کرتے ہیں، ہر کام کو عدالت میں داخل نہیں کیاجاسکتاہے۔