کٹھوعہ ریپ معاملہ :عدالت عظمیٰ نے کہا متاثرہ کے خاندان کو تحفظ ملے

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th April 2018, 12:23 AM | ملکی خبریں |

جموں ،16؍اپریل ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا ) کٹھوعہ ریپ اور قتل معاملہ میں عدالت عظمیٰ نے جموں ۔کشمیر حکومت کو نوٹس جاری کیا ہے۔ اس معاملہ پر سیریم کورٹ نے حکومت سے جواب طلب کیا ہے۔ اس کے ساتھ ہی کورٹ نے سماعت کے درمیان جموں کشمیر حکومت کو متاثرہ خاندان اور وکیل کو تحفظ دینے کا حکم دیا ہے۔عدالت عظمیٰ میں اس پر آندہ سماعت 27اپریل کو ہوگی۔متاثرہ کے خاندان اور وکیل نے سپریم کورٹ میں عرضی داخل کر کے اس کیس کو جموں کشمیر سے باہر ٹرانسفر کرنے کی مانگ کی ہے ۔ متاثرہ کے خاندان کے جانب سے عدالت عظمیٰ کی سیرنئر وکیل اندرا جئے سنگھ نے کہا کہ غیر جانب دارانہ جانچ کے لئے وہاں کا موحول صحیح نہیں ہے۔ اس سے قبل کٹھوعہ قتل کیس میں ضلع اور سیشن کورٹ نے کہا ہے کہ چارج شیٹ کی کاپی تمام ملزمین کو دی جائے ۔ اس معاملہ کی اگلی سماعت اب 28 اپریل کو ہوگی۔اس معالہ میں 8 لوگوں کو ملزمین بنایا گیاہے۔ ان ملزمین میں ایک نابالغ بھی شامل ہے جس کی پیشی 24 اپریل کو تے ہوئی ہے ۔صبح 10 بجے ملزمین کو کورٹ نے پیش کیا جائیگا۔ اس کیس کانڈ کے ملزمین ہیں سانچھی رام ، دیپک کجوریہ ، سریندر ورما، ویشال جنگوترا، تلک راج، آنند دتا اور پرویش کمار۔ انہیں پردھان اور سیشن جج کے سامنے پیش کیاجائیگا۔

ایک نظر اس پر بھی

بھیما کورے گاؤں تشدد:کنوئیں میں ملی 19سال کے چشم دید کی لاش

ایک جنوری کو پونے کے بھیما کوریگاؤں میں دو فرقوں کے درمیان فساد بھڑک گیا تھا۔اس تشدد میں ایک نوجوان کی موت ہوگئی تھی۔وہیں اس تشدد کی گواہ ایک 19سال کی چشم دید کی لاش فسادات متاثرین کے لئے لگائے گئے ریلیف کیمپ کے پاس ہی ایک کنوئیں میں ملی ہے۔