کرناٹکا اسٹیٹ اوپن یونیورسٹی کی ڈگریوں کو باضابطہ منظوری

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th October 2018, 12:18 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،9؍اکتوبر(ایس او نیوز) کرناٹکا اسٹیٹ اوپن یونیورسٹی کے کورسوں کو باضابطہ تسلیم شدہ قرار دیا گیا ہے۔ اور یہاں سے حاصل کی گئی کوئی بھی ڈگری دیگر ہمعصر یونیورسٹیوں کی ڈگریوں کے مساوی مانی جائے گی۔ یہ بات آج ایک اخباری کانفرنس میں کرناٹکا اسٹیٹ اوپن یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈی شیولنگیا نے بتائی۔ انہوں نے کہاکہ 2017 میں یونیورسٹی گرانٹ کمیشن کی طرف سے اوپن یونیورسٹی کو منظوری دی گئی تھی، اسی لئے اس یونیورسٹی سے وابستہ طلبا کو کسی طرح کی پریشانی میں مبتلا ہونے کی کوئی ضرورت نہیں ہے بلکہ یونیورسٹیوں میں نئے داخلے بھی جلد ہی باضابطہ شروع کئے جاسکتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ آئندہ خیال رکھا جائے گا کہ یونیورسٹی کی طرف سے مرکزی یا ریاستی حکومتوں کی طرف سے وقتاً فوقتاً لاگو ہونے والے ضوابط کی مکمل پابندی کی جائے۔ انہوں نے کہاکہ یونیورسٹی کی طرف سے جاری کی جانے والی ڈگریوں کو باضابطگی دئے جانے سے اب یونیورسٹی کو نئے کورسوں کی شروعات میں مدد ملے گی۔ان کے مطابق یونیورسٹی میں 8395 طلبا کے داخلوں کی گنجائش ہے، داخلے کے لئے آخری تاریخ20؍ اکتوبر2018 تک بڑھادی گئی ہے۔ پروفیسر شیولنگیا کے مطابق جنوری 2019 سے یونیورسٹی کی طرف سے بی ایڈ اور ایم بی اے کورسوں کی شروعات کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ یونیورسٹی نے 2014میں جو فیس ڈھانچہ وہی اب بھی برقرار رکھا گیا ہے، اس میں کوئی اضافہ نہیں ہوگا۔ یونیورسٹی کی طرف سے بی اے اور ایم اے ڈگری کے لئے نصاب کنڑا زبان میں ہی مرتب کیا گیا ہے۔ یونیورسٹی میں 31اقسام کی ڈگریوں کے ساتھ فروغ ہنر کی تربیت سے جڑے کورس بھی رائج کئے گئے ہیں ان کے علاوہ دوسالہ پوسٹ گریجویشن کورس بھی رکھا گیا ہے۔ بی اے ، بی کام ، بی لب ، بی ایس سی ، ایم اے ، ایم لب ، ایم ایس سی اور دیگر ہنر مندی پر مبنی کورس یونیورسٹی کا حصہ رہیں گے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

کاروار: کائیگا پلانٹ توسیعی منصوبہ۔ عوامی احتجاج کے درمیان افسران نے منعقد کیا عوامی اجلاس

کائیگا جوہری توانائی اسٹیشن میں مزید دو یونٹس کا اضافہ کرنے کے منصوبے پر عوامی رائے جاننے کے لئے سرکاری افسران نے کائیگا ٹاؤن شپ میں اجلاس منعقد کیا جبکہ ٹاؤن شپ سے باہر موجودہ اور سابق اراکین اسمبلی کی قیادت میں سیکڑوں افراد نے توسیعی منصوبے کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔

بنگلورومیٹرو برڈج میں خرابی کا نائب وزیراعلیٰ پرمیشور نے معائنہ کیا

شہر کے ایم جی روڈ پر ٹرینٹی سرکل کے قریب ایم جی روڈ بیپنا ہلی میٹرو روٹ کے پلر نمبر 155کے قریب ایک بیم میں دراڑ کا آج نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر جی پرمیشور نے معائنہ کیا اور کہاکہ اس سلسلے میں مرمت کا کام جاری ہے۔

زہریلے کھانے کا معاملہ، اعلیٰ سطحی جانچ کرانے سدارمیاکا مطالبہ

کرناٹک کے سابق وزیر اعلیٰ اور مخلوط حکومت کے کورابطہ کمیٹی کے صدر سدارمیا نے سُلوادی گاؤں کے مرمَّا مندر میں زہریلا کھانہ کھانے سے 11 عقیدتمندوں کی موت اور 80 افراد کے بیمار ہونے کے معاملے کی اعلیٰ سطحی جانچ کا مطالبہ کیا ہے ۔