105 بلدی اداروں کے لئے رائے دہی ، لوک سبھا انتخابات سے قبل ریاست کی تینوں جماعتوں کا امتحان 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 30th August 2018, 11:06 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،30؍اگست(ایس او نیوز) ریاست میں کانگریس ، جنتادل (ایس) اور بی جے پی کو مقامی سطح پر اپنی قیادت کا لوہا منوانے کے لئے آزمائش کہلانے والا بلدی اداروں کے انتخابات کے لئے کل ووٹنگ کرائی جائے گی۔

تین سٹی کارپوریشنوں 29 سٹی میونسپل کونسلوں، 53 ٹاؤن میونسپل کونسلوں اور20 ٹاؤن پنچایتوں ، جملہ 105 بلدی اداروں کے لئے کل انتخابات ہوں گے۔ ان انتخابات کے لئے 9121 امیدوار 2634وارڈوں پر مقابلہ کررہے ہیں۔ تین سٹی کارپوریشنوں کی 135 وارڈوں کے لئے 814 امیدوار میدان میں ہیں۔ 29 سٹی میونسپل کونسلوں کی 914 وارڈوں کے لئے 3385 امیدوار میدان میں ہیں۔ 53 ٹاؤن میونسپل کونسلوں کی 1230وارڈوں کے لئے 3802 امیدوار میدان میں ہیں۔ 20ٹاؤن پنچایتوں کی 355وارڈوں کے لئے 1122امیدوار میدان میں ہیں۔

سٹی میونسپل کونسلوں کے 12 وارڈوں اور ٹاؤن میونسپل کونسلوں کے 17 وارڈوں کے لئے امیدوار بلا مقابلہ منتخب ہوچکے ہیں۔ سیلاب اور طوفانی بارش کے سبب کورگ ضلع کی تین ٹاؤن پنچایتوں کی 45 وارڈوں کے لئے انتخابات ٹال دئے گئے ہیں۔ گلبرگہ ضلع کی افضل سی ا یم سی کے ایک وارڈ کا انتخاب اس لئے روک دیا گیا ہے کہ یہاں کے تمام امیدواروں کے پرچۂ نامزدگی مسترد کردئے گئے ہیں۔

ان انتخابات کے لئے ووٹوں کی گنتی 3ستمبر کی صبح کی جائے گی۔ ووٹوں کی گنتی سٹی کارپوریشنوں کی حدود میں مقررہ مقامات ہوگی ، جبکہ سی ایم سی اور ٹی ایم سی کے لئے گنتی کے مراکز تعلقہ انتظامیہ کی طرف سے مقرر کئے گئے ہیں۔ 

ایک نظر اس پر بھی

کیا جنگلاتی زمین کے حقوق سے متعلقہ مسائل حل کرنے میں دیش پانڈے ہورہے ہیں ناکام ؟ کاروار میٹنگ میں کئی اہم آفسران کی غیر حاضری پر دیش پانڈے گرم

کیا جنگلاتی زمین کے حقوق سے متعلقہ مسائل حل کرنے میں ضلع اُترکنڑا کے انچارج وزیر آر وی  دیش پانڈے ہورہے ہیں ناکام ثابت ہورہے ہیں ؟ یہ سوال اس لئے پیدا ہورہا ہے کہ پیر کو کاروار کے  ضلع پنچایت میٹنگ ہال میں منعقدہ کرناٹکا ڈیولپمنٹ پروگرام (کے ڈی پی) کی میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے ...

بنگلورو میں گڈھوں کو بند کرنے میں بی بی ایم پی کی سست روی پر ہائی کورٹ برہم

شہر میں مسلسل بارش کی وجہ سے سڑکوں پر گڈھوں کی تعداد میں دن بدن اضافے پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے ریاستی ہائی کورٹ نے بی بی ایم پی کی طرف سے گڈھوں کو بند کرنے میں اپنائی جارہی سست روی پر برہمی کا اظہار کیا ہے