سماج میں مساوات تعلیم سے ہی ممکن،ڈگری کالجوں کے طلبا کو مفت لیاپ ٹاپ کی فراہمی نومبر سے

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 22nd September 2017, 11:17 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، 22ستمبر (ایس او نیوز؍عبدالحلیم منصور) وزیر اعلیٰ سدرامیا نے کہا ہے کہ سماج میں ذات پات کی بنیاد پر جو امتیازات ہیں انہیں تمام طبقات کو تعلیمی مواقع کی فراہمی سے دو ر کیاجاسکتاہے۔ آج بلاری میں ویرا شیوا ودیا وردکاسنگھا کی صد سالہ تقریبات میں حصہ لیتے ہوئے انہوں نے کہاکہ سو سال قبل ہی تعلیم کی اہمیت کو محسوس کرتے ہوئے اس ادارہ کا قیام کیاگیاتھا اور یہاں سے فارغ ہونے والے طلبا نے سماج کی کافی خدمت کی ہے۔آج اس سنگھا کے تحت چلنے والے تعلیمی اداروں میں 22؍ ہزار سے زائد طلبا تعلیم حاصل کررہے ہیں جو کہ خوش آئند بات ہے۔ انہوں نے کہاکہ آج جمہوری نظام کے تحت صرف انہیں ممالک کو پیش رفت حاصل ہوئی ہے جنہوں نے سماج کے تمام طبقات کی یکساں ترقی کیلئے فکر مندی ظاہر کی ہے۔ انہوں نے کہاکہ لنگایت طبقہ کے مذہبی سربراہ بسونا نے مساوات کی بنیاد پر سماج قائم کرنے کی آواز دی تھی۔ آج ضرورت اس بات کی ہے کہ مساوات کے اس پیغام کو عام کیاجائے۔ انہوں نے کہاکہ ذات پات کے نظام کے تحت سماج کے کمزور طبقات کو دانستہ طور پر تعلیم سے محروم رکھا گیا ، خاص طور پر خواتین میں ناخواندگی ایک بہت بڑا چیلنج بن کر سامنے آئی ہے۔ گزرتے وقت کے ساتھ خواتین کو تعلیمی پیش رفت میں آگے بڑھانے کیلئے تعلیمی اداروں کی فکر مندی کو انہوں نے خوش آئند قرار دیا اور کہاکہ تعلیمی میدان میں حاصل نئے نئے مواقع کا استفادہ کرتے ہوئے طلبا اپنے مستقبل کو سنواریں اور ملک کیلئے اپنے آپ کو ایک سود مند شہری میں تبدیل کریں۔ وزیر اعلیٰ نے کہاکہ ریاستی حکومت کا منشاء یہی ہے کہ سماج کے کمزور طبقات بشمول دلت ، پسماندہ طبقات ، اقلیتیں اور خواتین ،کتابوں ، یونیفارم ، فیس وغیرہ نہ ہونے کی وجہ ئے تعلیم سے محروم نہ رہیں ، اسی مقصد کو ذہن میں رکھتے ہوئے حکومت نے پرائمری اسکولوں میں گرم کھانے کی اسکیم رائج کی اور اس کی وجہ سے شرح خواندگی میں اضافہ صد فیصد تک ہوپایا ہے، وزیر اعلیٰ نے اس موقع پر اعلان کیا کہ ریاست کے سبھی سرکاری اور ایڈڈ ڈگری کالجوں میں پہلے سال میں داخلہ لینے والے طلبا کو حکومت کی طرف سے عمدہ معیاری لیاپ ٹاپ مفت فراہم کیاجائے گا۔ نومبر سے یہ اسکیم رائج کی جائے گی، اس سے 1.96لاکھ طلبا استفادہ کرسکیں گے۔ اس موقع پر ویرا شیوا لنگایت مہاسبھا کے صدر الم بسوراج ، سابق وزیر شامنور شیوشنکرپا، کے پی سی سی کارگذار صدر ایس آر پاٹل ، وزیر برائے اعلیٰ تعلیمات بسوراج رایا ریڈی اور دیگر موجود تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

مخلوط حکومت کوکوئی خطرہ نہیں ۔ صورتحال میڈیا کی پیداوار کوئی پارٹی نہیں چھوڑے گا ۔ جارکی ہولی برادران کے مسائل پر مشورہ کرنے سدارامیا دہلی جائیں گے

ریاستی مخلوط حکومت کی بقا کو لے کر پچھلے ایک ہفتہ سے چل رہا ڈرامہ ہنوز جاری ہے ۔ حالانکہ آج وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی اور ان کے بھائی ریاستی وزیر برائے تعمیرات عامہ ایچ ڈی ریونا نے مخلوط حکومت کے مستقبل کیلئے خطرہ پیدا کرنے والے جارکی ہولی برادران سے یہاں شہر کے ایک ہوٹل میں ...

حجاج کرام کے آٹھویں اور نویں قافلوں کی بنگلورو واپسی؛ حج کمیٹی چیرمین آر روشن بیگ ائرپورٹ پر حاجیوں کے استقبال کے لئے رہےموجود

حجاج کرام کے آٹھویں اور نویں قافلوں کی آج مدینہ منورہ سے بنگلور واپسی ہوئی۔ تقریباً ہر فلائی میں 300حجاج کرام پر مشتمل قافلے 42 دن قبل بنگلور سے سفر مقدسہ پر رخصت ہوئے تھے، فریضۂ حج کی تکمیل ،مکہ مکرمہ میں عبادات اور مدینے میں روضۂ رسول ؐ پر حاضری کی سعادتوں سے سرفراز ہوکر یہ ...

مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کی آج بنگلور آمد؛ آپریشن کمل کے جواب میں بی جے پی اراکین کے استعفوں کے خدشے؛ کیا اُلٹی پڑگئیں تدبیریں ؟

مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ منگل کو  بنگلور دورہ پر آرہے ہیں۔ حالانکہ بنگلور میں ان کا کوئی سرکاری پروگرام نہیں ہے، لیکن کہا جارہاہے کہ مخلوط حکومت کو گرانے کے لئے بی جے پی کی کوششوں کی مسلسل ناکامی کے بعد اس سلسلے میں ریاستی قائدین کو چند ہدایات دینے کے لئے وزیر داخلہ کا یہ ...

کرناٹکا کی مخلوط حکومت گرانے کے بی جے پی کے منصوبے پر پھر گیا پانی؛ کرناٹک کے بی جے پی قائدین پر امت شاہ گرم؛ پوچھا ،آپریشن کمل کی صلاحت نہیں تھی تو اس میں الجھے کیوں تھے

ریاستی حکومت کو ایک دن ایک ہفتہ اور ایک ماہ میں گرانے کے لئے بی جے پی قیادت بالخصوص ریاستی بی جے پی صدر بی ایس یڈیورپا کے تمام دعوؤں کی کانگریس اور جے ڈی ایس اتحاد نے ہوا نکال دی ہے۔جن اراکین اسمبلی کو آپریشن کمل کا شکار قرار دیاجارہاتھا انہوں نے عوام کے سامنے آکر واضح کردیا ہے ...