بی بی ایم پی اسکولوں کے بچوں کی عمدہ تعلیم کے لئے ’’ ڈی ڈی روشنی ‘‘پراجکٹ

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 7th December 2018, 3:21 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو:6/دسمبر (ایس او نیوز) برہت بنگلور مہانگر پالیکے کے اساتذہ اور طلبا کی مدد کے لئے اسکائپ کے ذریعے اسمارٹ کلاسوں کے اہتمام کے مقصد سے دور درشن کیندرا کے اشتراک سے کئے گئے انتظامات ’’ ڈی ڈی روشنی‘‘ کا آج وزیراعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی نے افتتاح کیا۔ بی بی ایم پی اسکولوں میں دور درشن کے ڈجیٹل چینل کے ذریعے نرسری سے کالج تک خصوصی کلاسس نشر کئے جائیں گے۔ طلبا کے لئے یہ نشریہ روزانہ کیا جائے گا۔ اس کے لئے بی بی ایم پی کی ہر اسکول میں ویڈیو کانفرنس کی سہولت قائم کی جائے گی اور بچوں کو اس سہولت کے استعمال سے اپنی تعلیمی معیار کو بلند کرنے کا موقع فراہم کرایا جائے گا۔ اس موقع پر وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی نے کہاکہ ریاستی حکومت اس بات کے لئے کوشاں ہے کہ سرکاری اسکولوں میں زیر تعلیم سبھی بچوں کو ایسی سہولتیں فراہم کی جائیں جو کسی بھی اعلیٰ معیاری نجی اسکول میں دستیاب ہوں۔تاکہ تعلیمی میدان میں سرکاری اسکولوں میں زیر تعلیم بچے کسی سے کم نہ رہیں۔ انہوں نے کہاکہ اگلے سال سے غریب خاندانوں سے داخل ہونے والے بچوں کے معیار تعلیم کو بلند کرنے اور انہیں تعلیمی سہولتوں میں کسی بھی طرح کی کمی نہ ہو اس بات کو یقینی بنانے کے لئے تمام ضروری قدم اٹھائے جائیں گے۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ بی بی ایم پی کے اسکولوں میں صرف تعلیم دینا کافی نہیں بلکہ یہاں زیر تعلیم بچوں کو ہنر مندی کی تربیت سے آراستہ کرنا بھی ضروری ہے۔ انہوں نے کہاکہ سابق صدر ہند ڈاکٹر اے پی جے عبدالکلام مرحوم بھارت رتنا ، سی این آر راؤ وغیرہ بھی سرکاری اسکولوں کی ہی دین ہیں۔ ان لوگوں نے اپنی سائنسی تحقیق وترویج کے ذریعے ساری دنیا میں ملک کا نام روشن کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ہر بچے میں ایک منفرد صلاحیت ہوتی ہے ضرورت اس بات کی ہے کہ اس کو پہچان کر اسے اس سمت میں آگے بڑھنے کا موقع فراہم کیا جائے ۔اسی مقصد کے تحت بی بی ایم پی کے اسکولوں میں روشنی پراجکٹ شروع کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایسے بھی واقعات گزرے ہیں جہاں بہتر تعلیم کی آس میں غریب والدین نے اپنے بچوں کو عمدہ اسکولوں میں داخل تو کروادیتے ہیں لیکن اس اسکول کے جوتے خریدنے کی حیثیت بھی نہ ہونے کے سبب بچوں نے خود کشی کرلی ہے۔ ایسے واقعات غریب خاندانوں میں کبھی رونما نہ ہوں اس کے لئے سرکاری اسکولوں کے اساتذہ کو ایسی تربیت سے آراستہ کیا جائے گا کہ وہ نجی اسکولوں سے بہتر تعلیم دے سکیں، اگر اساتذہ اپنی ذمہ داری سے دامن بچائیں گے تو اس کے لئے انہیں بھاری قیمت ادا کرنی پڑے گی۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ تعلیم مکمل کرنے کے بعد بھی اعداد وشمار یہ بتاتے ہیں کہ صرف 30فیصد لوگوں کو روزگار مل پاتا ہے، اگر تمام کو ہنر مندی کی تربیت سے آراستہ کیا جائے تو اس اوسط کو کافی حد تک بڑھایا جاسکتا ہے، تعلیم مکمل کرتے ہی بچے اپنا خود روزگار شروع کرسکتے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے اس موقع پر بچوں کو آواز دی کہ وہ ڈی ڈی روشنی کا بھرپور استعمال کریں ۔ خیر مقدمی خطاب میں بی بی ایم پی کمشنر منجوناتھ پرساد نے اس پراجکٹ کی جھلکیوں پر روشنی ڈالی اور کہاکہ بنگلور دور درشن کی سے روزانہ صبح چھ سے دس بجے تک اور شام میں پانچ سے دس بجے تک ڈی ڈی روشنی چینل پر ان کلاسوں کا اہتمام کیا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ اس پراجکٹ پر سالانہ سو کروڑ روپے صرف کئے جائیں گے، پانچ سال میں پانچ سو کروڑ روپے خرچ کرنے کا منصوبہ ہے ۔تقریب کی صدارت رکن اسمبلی جناب روشن بیگ نے کی۔ بی بی ایم پی اپوزیشن لیڈر پدمانابھا ریڈی ، کارپوریٹر وسنت کمار، لتا ، دوردرشن انڈیا کی ڈائرکٹر جنرل سپریا ساہو ، ڈپٹی ڈائرکٹر جنرل اپادھیائے اور دیگر موجود تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

بنگلور میں 23/ مئی کو ووٹوں کی گنتی کے دوران امتناعی احکامات نافذ

23 مئی کو لوک سبھاانتخابات کے نتائج کا اعلان ہورہا ہے۔ انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے کے مرحلے میں کوئی ناخوشگوار صورتحال پیدا نہ ہونے پائے اس کے لئے شہر کے پولیس کمشنر سنیل کمار نے 23مئی کی صبح چھ بجے سے شہر بھر میں امتناعی احکامات نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

کرناٹک کے کندگول اور چنچولی حلقوں میں آج ہوگی پولنگ؛ 85 پولنگ بوتھوں کو قرار دیا گیا ہے حساس

ریاست کرناٹک  کے دو اسمبلی حلقوں کندگول اور چنچولی کے لئے آج اتوار کو  ووٹ ڈالے جائیں گے۔ دونوں حلقوں پر کامیابی درج  کرنے کے لئے کانگریس جے ڈی ایس اتحاد اور بی جے پی نے ایڑی چوٹی کا زور لگایا ہے۔

محمد محسن کی فرض شناسی کو پھر نشانہ بنانے کی کوشش، الیکشن کمیشن تادیبی کارروائی کے لئے ہائی کورٹ سے رجوع

اڈیشہ میں انتخابی مشاہد کے طور پر متعین کرناٹک کیڈر کے آئی اے ایس افسر محمد محسن نے وزیراعظم مودی کے ہیلی کاپٹر کی تلاشی لے کر جس فرض شناسی کا ثبوت پیش کیا اسے فرض شکنی قرار دیتے ہوئے الیکشن کمیشن نے نہ صرف انہیں معطل کردیا بلکہ اب ایسا لگتا ہے کہ الیکشن کمیشن نے انہیں نشانہ ...