اومیش جادھوکو بی جے پی ٹکٹ حتمی فیصلہ کا انتظار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 14th March 2019, 12:28 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،14؍مارچ(ایس او نیوز) حال ہی میں وزیراعظم نریندر مودی کی موجودگی میں کانگریس کے رکن اسمبلی اومیش جادھو نے بی جے پی میں شمولیت اختیار کی تھی۔ جادھونے اسمبلی رکنیت سے استعفیٰ بھی دے دیاہے۔ اب جادھو بی جے پی ٹکٹ پر کلبرگی پارلیمانی حلقہ سے انتخاب لڑنے کی تیاری کررہے ہیں۔ غیر مفتوح سردارسے معروف کانگریس کے قائد ملیکارجن کھرگے کے خلاف انتخابی قسمت آزمائی کا جادھونے فیصلہ کیاہے۔ اس سلسلہ میں حتمی فیصلہ بی جے پی ہائی کمان کرنے والی ہے۔ یہ باتیں ریاستی بی جے پی یونٹ کے صدر بی ایس ایڈی یورپا نے کہیں۔ ایڈی یورپا نے خود اومیش جادھوکو پارٹی میں شامل کیاہے۔ لیکن اومیش جادھوکا استعفیٰ اسمبلی اسپیکر رمیش کمار نے ابھی تسلیم نہیں کیاہے۔ دوسری طرف جادھوکے سرپر کانگریس کی جانب سے کی گئی نااہلی کی شکایت کی تلواربھی لٹک رہی ہے۔ اس طرح جادھوقینچی میں پھنس گئے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کے سینئر لیڈر آر اشوک نے سدارامیا اور کمار سوامی سے استعفیٰ کا مطالبہ کیا

وکھے درخت کے پتوں کی مانند جھڑرہے کانگریس اراکین اسمبلی کی آنکھوں میں اندھیراچھا گیا ہے۔ انہیں آگے کوئی راستہ نظر نہیں آرہا ہے۔ ریاست کے عوام نے مخلوط حکومت کی چڈی پھاڑدی ہے۔ اس قسم کی طنزیہ باتیں بی جے پی کے سینئر قائدآر اشوک نے کہیں۔

کرناٹک پبلک اسکولوں میں سرکاری اسکولوں کو ضم نہیں کیا جائے گا

سرکاری اسکولوں کو ضم کئے بغیر ہی کرناٹک پبلک اسکول چلانے کی تجویز محکمہ تعلیمات کے زیر غور ہے ۔ سرکاری نظام کے تحت ایک ہی پلاٹ فارم پر پہلی سے بارھویں جماعت تک کی تعلیم کی سہولت فراہم کرنے کے مقصد سے کرناٹک پبلک اسکولوں کا انعقاد 2018-19 سے ہی شروع ہوگیا تھا ۔

کمارسوامی نے وزیراعلیٰ کا عہدہ دیش پانڈے کو سونپنے کی رکھی تھی شرط ، کانگریس لیڈران رہ گئے دنگ؛ کماراسوامی کی قیادت پر ہی ظاہر کیا گیا اعتماد

لوک سبھا انتخابات میں کانگریس جے ڈی ایس اتحاد کی رسواکن شکست کے بعد کل وزیراعلیٰ کمار سوامی کی قیادت میں طلب کی گئی غیر رسمی کابینہ میٹنگ کے دوران وزیراعلیٰ کمار سوامی کی طرف سے استعفے کی پیش کش کے متعلق چند نئے انکشافات سامنے آئے ہیں۔