حکومت کو نشانہ بنانے اپوزیشن تیار، دفاع کے لئے حکومت بھی کمربستہ

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 7th December 2018, 3:10 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو۔6؍دسمبر(سیاست نیوز) ریاستی لیجسلیچر کا سرمائی اجلاس بلگاوی کے سورنا سودھا میں پیر سے شروع ہونے والا ہے۔ اجلاس میں حکمران اور اپوزیشن پارٹیوں کے درمیان ریاست کے کئی سلگتے ہوئے مسائل پر مباحث اور ہنگامہ آرائی متوقع ہے۔ ریاست کے اہم مسائل کو اجاگر کرنے اور اس پر حکومت کو نشانہ بنانے کے لئے اپوزیشن نے حکمت عملی مرتب کی ہے تو دوسری طرف ریاستی عوام کی فلاح وبہبود کے لئے حکومت کی طرف سے اٹھائے گئے اقدامات ، کسانوں کے قرضوں کی معافی اور دیگر کارروائیوں کی بنیاد پر حکومت نے اپنے دفاع کی حکمت عملی تیار کرلی ہے۔ ریاست میں کانگریس جے ڈی ایس مخلوط حکومت قائم ہونے کے بعد بلگاوی میں یہ پہلا لیجسلیچر اجلاس ہوگا۔ اس میں خاص طور پر گنے کے کاشتکاروں کا مسئلہ شدت کے ساتھ اٹھایا جاسکتا ہے تو دوسری طرف شمالی کرناٹک کی ہمہ جہت ترقی کے موضوع پر ایوان میں بحث ہوسکتی ہے۔ بلگاوی لیجسلیچر اجلاس سے پہلے شکر کے کارخانوں سے کسانوں کو واجب الادا بقایا جات دلانے کے متعلق ریاستی حکومت کی یقین دہانی اور وزیراعلیٰ ایچ ڈی کمارسوامی کی مصالحت کے بعد حکومت پر زور دیا جارہا ہے کہ فوری طور پر ان بقایا جات کی ادائیگی کے لئے ضروری قدم اٹھائے جائیں ۔ پچھلے دنوں بلگاوی میں سورنا سودھاکے روبرو احتجاج پر بیٹھے کسانوں کو وزیرآبی وسائل ڈی کے شیوکمار نے منالیا تھا، اور ان کی یقین دہانی پر حکومت ان کے مسائل سلجھانے میں سنجیدہ ہے ، کسانوں نے اپنا احتجاج واپس لیاتھا۔ اس کے علاوہ ریاست کے 100 سے زائد تعلقہ جات میں خشک سالی کی سنگین صورتحال ایوان میں زیر بحث آئے گی۔ جہاں اپوزیشن پارٹیوں نے خشک سالی سے نپٹنے کے لئے حکومت کے اقدامات کو ناکافی قرار دیا ہے تو دوسری طرف ریاستی حکومت نے مرکز پر الزام لگایا ہے کہ خشک سالی سے نپٹنے کے لئے فنڈز کی فراہمی میں کرناٹک کے ساتھ اپنایا گیا سوتیلا سلوک امدادی کارروائیوں میں رکاوٹ بنا ہوا ہے۔ ریاستی حکومت کمزور کرنے کے لئے بی جے پی کی طرف سے بارہا کئے جارہے آپریشن کمل کا موضوع بھی ایوان میں اٹھایا جاسکتا ہے۔ دو دن قبل ہی مرکزی وزیر پرکاش جاؤڈیکر نے خود یہ کہہ کر بی جے پی کی طرف سے آپریشن کمل کی تصدیق کردی کہ دسمبر کے اختتام تک کرناٹک میں سیاسی انقلاب ضرور آئے گا، اس بات کو لے کر حکمران اور اپوزیشن دونوں میں الزام تراشیوں کا سلسلہ شدت اختیار کر گیا ہے۔ 
 

ایک نظر اس پر بھی

بنگلور میں 23/ مئی کو ووٹوں کی گنتی کے دوران امتناعی احکامات نافذ

23 مئی کو لوک سبھاانتخابات کے نتائج کا اعلان ہورہا ہے۔ انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے کے مرحلے میں کوئی ناخوشگوار صورتحال پیدا نہ ہونے پائے اس کے لئے شہر کے پولیس کمشنر سنیل کمار نے 23مئی کی صبح چھ بجے سے شہر بھر میں امتناعی احکامات نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

کرناٹک کے کندگول اور چنچولی حلقوں میں آج ہوگی پولنگ؛ 85 پولنگ بوتھوں کو قرار دیا گیا ہے حساس

ریاست کرناٹک  کے دو اسمبلی حلقوں کندگول اور چنچولی کے لئے آج اتوار کو  ووٹ ڈالے جائیں گے۔ دونوں حلقوں پر کامیابی درج  کرنے کے لئے کانگریس جے ڈی ایس اتحاد اور بی جے پی نے ایڑی چوٹی کا زور لگایا ہے۔

محمد محسن کی فرض شناسی کو پھر نشانہ بنانے کی کوشش، الیکشن کمیشن تادیبی کارروائی کے لئے ہائی کورٹ سے رجوع

اڈیشہ میں انتخابی مشاہد کے طور پر متعین کرناٹک کیڈر کے آئی اے ایس افسر محمد محسن نے وزیراعظم مودی کے ہیلی کاپٹر کی تلاشی لے کر جس فرض شناسی کا ثبوت پیش کیا اسے فرض شکنی قرار دیتے ہوئے الیکشن کمیشن نے نہ صرف انہیں معطل کردیا بلکہ اب ایسا لگتا ہے کہ الیکشن کمیشن نے انہیں نشانہ ...