منگلورو میں 'جاگو کرناٹکا' کا اجلاس - پرکاش راج نے کہا : اقلیتوں کا تحفظ اکثریت کی ذمہ داری ہے 

Source: S.O. News Service | Published on 27th March 2024, 10:47 AM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

منگلورو ،27 / مارچ (ایس او نیوز) 'جاگو کرناٹکا' نامی تنظیم کے بینر تلے مختلف عوام دوست اداروں کا ایک اجلاس شہر کے بالمٹا میں منعقد ہوا جس میں افتتاحی خطاب کرتے ہوئے مشہور فلم ایکٹر پرکاش راج نے کہا کہ ایک جمہوری ملک میں اقلیتوں کو تحفظ فراہم کرنا اکثریت کی ذمہ داری ہوتی ہے ۔
    
انہوں نے وزیر اعظم نریندرا مودی پر نشانہ سادھتے ہوئے کہا کہ آج ہمارے ملک میں مہا پربھو نے 'تم چندہ دے دو، میں دھندا دیتا ہوں' جیسی پالیسی اپنائی ہے ۔ اور ایسا نہ کرنے کی صورت میں ای ڈی کے ذریعے سزا دی جاتی ہے ۔ اس کے بارے میں عوام کو آگاہ کرنے کی ضرورت ہے ۔ آنے والے دنوں میں کیا حالت ہونے والی اس کے بارے میں کچھ کہا نہیں جا سکتا ۔
    
پرکاش راج نے کہا کہ مجھے ای ڈی کے چھاپے سے ڈرانے کی کوشش کی گئی ۔ میں ان سب چیزوں سے ڈرنے والا نہیں ہوں ۔ میری سچائی اور حق پرستی پر سوال اٹھانا ممکن ہی نہیں ہے ۔ میں نے کبھی اپنا سر جھکانے لائق کام کیا ہی نہیں ہے ۔ میں کسی بھی پارٹی کا کارکن نہیں ہوں ۔ صرف عوام کی حمایت میں کھڑا ہوں ۔ 
    
انہوں نے کہا کہ 'جاگو کرناٹکا' تنظیم نے گزشتہ الیکشن کے موقع  پر اُس وقت کی بی جے پی حکومت کی عوام دشمن پالیسیوں کو اجاگر کرنے میں کامیاب ہوئی تھی اور وہ حکومت اقتدار سے ہاتھ دھو بیٹھی تھی ۔ 
    
'جاگو کرناٹکا' کے ریاستی لیڈر کے ایل اشوک نے کہا کہ پارلیمانی الیکشن کے لئے ابھی 30 دن باقی ہیں ۔ یہ ایک جنگ ہے ۔ اس جنگ عظیم کو جیتنے کی امید کے ساتھ ہم لوگ جلسے منعقد کر رہے ہیں ۔ آنے والے الیکشن میں اتر پردیش ، راجستھان، گجرات، مدھیہ پردیش میں بی جے پی جیت سکتی ہے ۔ لیکن بقیہ ریاستوں میں ان کے لئے مشکل ہوگی ۔ ہمیں سوچنا ہوگا کہ بہار، مہا راشٹرا، مغربی بنگال، کرناٹکا میں ہم کس طرح انہیں روکنے میں تعاون کر سکتے ہیں ۔ 
    
انہوں نے کہا کہ اس وقت سروے کے مطابق کرناٹکا میں 17 سیٹوں پر کانگریس کو جیت مل سکتی ہے ۔ دکشن کنڑا میں سخت مقابلہ ہوگا ۔ اس حلقے میں کانگریسی امیدوار کی جیت کے لئے محنت کرنی ہوگی ۔ شیموگہ میں بھی بڑی تبدیلی ہونے والی ہے ۔ 
    
'جاگو کرناٹکا' تنظیم کے تعلق سے آشیرواد ٹریننگ سینٹر کے ڈائریکٹر فادر ارون لوئیس نے کہا کہ اس تنظیم کو قائم ہوئے 14 مہینے گزرے ہیں ۔ ابتدا میں 30 اداروں کو اکٹھا کرکے سوچ بچار کیا گیا تھا ۔ کرناٹکا میں اس کا اچھا نتیجہ نکلا ۔ اڈپی میں سمپوزیم کے وقت 17 ہزار افراد جمع ہوئے تھے ۔ اس سے ہمارے حوصلے بلند ہوئے ۔ کرناٹکا سے بی جے پی کو نکال باہر کرنے کے مقصد سے ہم نے قدم بڑھائے تھے ۔ تبدیلی کے لئے ہم نے 103 حلقوں کو نشانہ بنایا تھا اس میں سے 73 حلقوں میں ہمیں کامیابی ملی ۔ جس میں 69 کانگریسی اور 4 جے ڈی ایس امیدوار تھے ۔ آنے والے الیکشن کے لئے بھی ہم نے گزشتہ 8 مہینوں سے تیاریاں شروع کی ہیں ۔ 
    
اس موقع پر بولتے ہوئے یاسین شیرور نے کہا کہ 'جاگو کرناٹکا' کوئی سیاسی تنظیم یا کسی بھی سیاسی تنظیم کی ترجمانی کرنے والا ادارہ نہیں ہے ۔ یہ ایک عوام دوست ادارہ ہے ۔ مشہور دانشور لولاکشھ، سیاسی لیڈر پی وی موہن، جماعت اسلامی ہند کے ریاستی قائد محمد کنہی وغیرہ نے اس موضوع پر اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔ 

ایک نظر اس پر بھی

ماہی گیر تنظیموں کا متفقہ فیصلہ - کاسرکوڈ میں تجارتی بندرگاہ کے خلاف ہوگی قانونی جد و جہد

) شہر کے سینٹ جوزیف ہال میں ماہی گیر تنظیموں کی جوائنٹ ایکشن کمیٹی اور کراولی ماہی گیر مزدوروں کی تنظیم کا مشترکہ اجلاس منعقد ہوا جس میں کاسرکوڈ میں مجوزہ نجی تجارتی بندرگاہ کی تعمیر کے خلاف تنظیمی اور قانونی طریقے سے جد وجہد کرنے کا فیصلہ کیا گیا ۔

بھٹکل میں ووٹر بیداری مہم؛ سرکاری افسران نے طلبہ کے ساتھ نکالی ریلی؛ سو فیصد ووٹنگ کویقینی بنانے کی کوششیں

بھٹکل میں  صد فیصد ووٹنگ کا ٹارگٹ لے کر   اُترکنڑاضلعی انتظامیہ،  ضلع پنچایت، بھٹکل تعلقہ انتظامیہ اور تعلقہ پنچایت کے زیراہتمام  بھٹکل کے سرکاری آفسران  نے کالج طلبہ کو ساتھ لے کر  ووٹنگ بیداری مہم  کے تحت شاندار ریلی نکالی اور عوام پر زور دیا کہ وہ  کسی بھی صورت میں اپنی ...

بھٹکل میں مسلم رپورٹروں کی طرف سے غیر مسلم رپورٹروں کوپیش کی گئی عید الفطر کی مٹھائیاں

ورکنگ جرنلسٹ اسوسی ایشن   بھٹکل  کے مسلم رپورٹروں کی طرف سے بھٹکل کے غیر مسلم رپورٹروں کو عید الفطر کی مناسبت سے مٹھائیاں تقسیم کی گئیں اور اُنہیں عید کے تعلق سے  معلومات فراہم کی گئیں۔

بی جے پی نے کانگریس ایم ایل اے کو 50 کروڑ روپے کی پیشکش کی؛ سدارامیا کا الزام

کرناٹک کے وزیر اعلی سدارامیا نے ہفتہ کو بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) پر الزام لگایا کہ وہ کانگریس کے اراکین اسمبلی کو وفاداری تبدیل کرنے کے لیے 50 کروڑ روپے کی پیشکش کرکے 'آپریشن لوٹس' کے ذریعے انکی حکومت کو غیر مستحکم کرنے کی کوششوں میں ملوث ہے۔

لوک سبھا انتخاب 2024: کرناٹک میں کانگریس کو حاصل کرنے کے لیے بہت کچھ ہے

کیا بی جے پی اس مرتبہ اپنی 2019 لوک سبھا انتخاب والی کارکردگی دہرا سکتی ہے؟ لگتا تو نہیں ہے۔ اس کی دو بڑی وجوہات ہیں۔ اول، ریاست میں کانگریس کی حکومت ہے، اور دوئم بی جے پی اندرونی لڑائی سے نبرد آزما ہے۔ اس کے مقابلے میں کانگریس زیادہ متحد اور پرعزم نظر آ رہی ہے اور اسے بھروسہ ہے ...

تعلیمی میدان میں سرفہرست دکشن کنڑا اور اُڈپی ضلع کی کامیابی کا راز کیا ہے؟

ریاست میں جب پی یوسی اور ایس ایس ایل سی کے نتائج کا اعلان کیاجاتا ہے تو ساحلی اضلاع جیسےدکشن کنڑا  اور اُ ڈ پی ضلع سر فہرست ہوتے ہیں۔ کیا وجہ ہے کہ ساحلی ضلع جسے دانشوروں کا ضلع کہا جاتا ہے نے ریاست میں بہترین تعلیمی کارکردگی حاصل کی ہے۔

این ڈی اے کو نہیں ملے گی جیت، انڈیا بلاک کو واضح اکثریت حاصل ہوگی: وزیر اعلیٰ سدارمیا

کرناٹک کے وزیر اعلیٰ سدارمیا نے ہفتہ کے روز اپنے بیان میں کہا کہ لوک سبھا انتخاب میں این ڈی اے کو اکثریت نہیں ملنے والی اور بی جے پی کا ’ابکی بار 400 پار‘ نعرہ صرف سیاسی اسٹریٹجی ہے۔ میسور میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے سدارمیا نے یہ اظہار خیال کیا۔ ساتھ ہی انھوں نے کہا کہ ...