بھٹکل میں 'سنگل ٹکٹ کاونٹر' کی وجہ سے مسافروں کو ہو رہی ہے پریشانی

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 7th December 2023, 12:44 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل 7 / دسمبر (ایس او نیوز) بھٹکل ریلوے اسٹیشن پر جو ایڈوانس ٹکٹ بکنگ کاونٹر تھا اسے بند کرنے اور ہر طرح کی ٹکٹ کے لئے ایک ہی کاونٹر رہنے کی وجہ سے مسافروں کو بہت ہی زیادہ پریشانیوں کا سامنا ہے اور انہیں ٹکٹ حاصل کرنے کے لئے بڑی دیر تک قطار میں لگے رہنا پڑتا ہے.

خیال رہے کہ اترکنڑا میں کارواراسٹیشن کے بعد بھٹکل ایسا اسٹیشن ہے جہاں دن بھر میں سب سے زیادہ ریل گاڑیاں رکتی ہیں۔ اس وجہ سے روزانہ سیکڑوں افراد یہاں سے منگلورو، بنگلورو، کیرالہ، گوا اور ممبئی کی طرف سفر کرتے ہیں اور انہیں وقت پر ٹکٹ لینے میں بڑی دقت کی ہوتی ہے۔ اس سے کونکن ریلوے کو بھاری آمدنی بھی ہوتی ہے۔

ایک اندازے کے مطابق بھٹکل ریلوے اسٹیشن پر ایک دن میں 15 سے زیادہ ریل گاڑیاں رکتی ہیں۔ ان گاڑیوں پر سفر کرنے والے مسافروں کو ایڈوانس ٹکٹ، تاتکال ٹکٹ، عام ٹکٹ ، پلیٹ فارم ٹکٹ حاصل کرنے اور پارسل بکنگ وغیرہ کے لئے صرف ایک ہی کاونٹر ہے جس کی وجہ سے اکثر یہاں مسافروں کی قطار لگی رہتی ہے۔ اور خاص کر اس وقت جبکہ کوئی ٹرین اسٹیشن پر آنے والی ہو تو لمبی قطار کی وجہ سے لوگوں کو ٹکٹ حاصل کرنے میں بہت زیادہ دشواری ہوتی ہے۔

بھٹکل اسٹیشن سے اکثر و بیشتر سفر کرنے والے مسافروں کا کہنا ہے کہ اس سے پہلے یہاں پر دو کاونٹر ہوا کرتے تھے جس میں ایڈوانس بکنگ کی الگ سے سہولت ہوتی تھی۔ اس سے مسافروں کو آسانی کے ساتھ ٹکٹ حاصل ہوتا تھا جس سے پلیٹ فارم تک جانے اور اپنی ٹرین پر سوار ہونے میں کوئی دشواری نہیں ہوتی تھی۔ اب چونکہ ایک ہی کاونٹر ہے اس لئے ٹرین آنے کے موقع پر یہاں بھاگم بھاگ مچتی ہے اور ٹکٹ حاصل کرنا مشکل ہو جاتا ہے۔  

عوام کا یہ بھی کہنا ہے کہ سب سے بڑی مشکل صبح دس اور گیارہ بجے کے وقت پیش آتی ہے جب ایڈوانس ٹکٹ نہ ملنے کی وجہ سے لوگ تاتکال ٹکٹ کے لئے قطار میں کھڑے رہتے ہیں اوراسی دوران کوئی ٹرین اسٹیششن پر آنے کا وقت ہوتا ہے جس پر سوار ہونے والے مسافر عام ٹکٹ کے لئے قطار میں آجاتے ہیں ۔ ان مسافروں کو ٹکٹ دینے میں جو وقت لگتا ہے اس دوران تاتکال ٹکٹ بکنگ کا وقت ختم ہوجاتا ہے اور قطار میں لگے ہوئے لوگوں  کو مایوس ہو کر ٹکٹ کے بغیر واپس لوٹنا پڑتا ہے۔ بعض دفعہ ایسی بھی صورتحال ہوتی ہے کہ عام ٹکٹ بھی نہیں ملتا اور ٹرین چھوٹ جاتی ہے۔ 

اس مسئلے پر کونکن ریلوے کی پی آر او سدھا کرشنا مورتی نے بتایا کہ جس مقام پر روزانہ 100 سے کم ایڈوانس ٹکٹیں بک ہوتی ہیں، وہاں پر ایڈوانس بکنک کاونٹر بند کر دئے گئے ہیں۔ 

لیکن عوام کا کہنا ہے کہ کونکن ریلوے حکام کو مسافروں کو درپیش مسائل کی طرف توجہ دینی چاہئے اور اسے حل کرنے کے لئے مناسب اقدام اورانتظام کرنا چاہیے۔

ایک نظر اس پر بھی

کاروار کے سمندر میں لگا ہوا 'رڈار' بھی چوروں کے ہاتھ سے بچ نہ سکا !

زمین پر سے قیمتی مشینیں چرانے والوں نے اب سمندر میں اپنے ہاتھ کی صفائی دکھانا شروع کیا ہے جس کی تازہ ترین مثال ماحولیاتی تبدیلیوں کے سگنل فراہم کرنے کے لئے کاروار کے علاقے میں بحیرہ عرب میں لگائے گئے 'رڈار' کی چوری ہے ۔

کمٹہ کے سمندر میں چینی جہاز کا معاملہ - کوسٹ گارڈ نے کہا : ہندوستانی حدود کی خلاف ورزی نہیں ہوئی

دو دن قبل کمٹہ کے قریب ہندوستانی سمندری سرحد میں چینی جہاز کی موجودگی اور اس سے ساحلی سیکیوریٹی کو درپیش خطرے کے تعلق سے جو خبریں عام ہوئی تھیں اس پر کوسٹ گارڈ نے بتایا ہے کہ یہ ایک جھوٹی خبر تھی اور چینی جہاز ہندوستانی سرحد میں داخل نہیں ہوا تھا ۔

ہوناور کاسرکوڈ میں ماہی گیروں پر زیادتیوں کے خلاف حقوق انسانی کمیشن سے کی گئی شکایت

ہوناور کے کاسرکوڈ ٹونکا میں مجوزہ تجارتی بندرگاہ کی تعمیر کے خلاف احتجاج کرنے والے مقامی ماہی گیروں  پر پولیس کی طرف سے لاٹھی، خواتین سمیت کئی لوگوں کی گرفتاریاں ، جھوٹے مقدمات کی شکل میں جو زیادتیاں ہوئی تھیں، اس کے تعلق سے حقوق انسانی کمیشن سے شکایت کی گئی ہے ۔

بھٹکل میں 'ریت مافیا' کا دربار - تعلقہ انتظامیہ خاموش - عوام بے بس اور لاچار

بھٹکل میں تعلقہ انتظامیہ کی خاموشی کی وجہ سے تعلقہ کے گورٹے، بیلکے، جالی، مُنڈلی نستار، بئیلور جیسے علاقوں میں ساحل سے ریت جیسی سمندری دولت لوٹنے کا کام 'ریت مافیا' کی طرف سے بلا روک ٹوک جاری ہے اور مقامی عوام پریشانی اور بے بسی و لاچاری سے یہ سب دیکھنے پر مجبور ہوگئے ہیں ۔