ہم اڈانی کے ہیں کون! 'اس گھوٹالے کی حقیقت صرف جے پی سی کی تحقیقات سے ہی سامنے آ سکتی ہے' کانگریس

Source: S.O. News Service | Published on 19th March 2023, 12:04 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،19/مارچ (ایس او نیوز/ایجنسی) اڈانی اور وزیر اعظم مودی کے تعلقات پر کانگریس مسلسل حملہ آور ہے۔ تمام اپوزیشن پارٹیاں پارلیمنٹ میں اس معاملے پر متحد ہیں اور حکومت سے جے پی سی تحقیقات کا مطالبہ کر رہی ہیں لیکن حکومت اس کے لیے تیار نہیں ہے۔ پارٹی سوشل میڈیا کے ذریعے ’ہم اڈانی کے ہیں کون!‘ سیریز کے تحت ہر روز وزیر اعظم مودی سے 3 سوال پوچھ رہی ہے۔ اسی سلسلے میں پارٹی کے جنرل سکریٹری جے رام رمیش نے ہفتہ کو بھی سوالات پوچھے۔

اپنے پہلے سوال میں کانگریس نے کہا ’’وزیر داخلہ امت شاہ نے 17 مارچ 2023 کو ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ جس کے پاس بھی اڈانی گروپ کے غلط کاموں کے ثبوت ہیں، وہ انہیں سپریم کورٹ کی طرف سے 2 مارچ 2023 کو تشکیل دی گئی 'ماہر کمیٹی' کے سامنے پیش کرنے کے لئے آزاد ہے۔ آپ کو یاد دلانے کے لیے بتا دیں کہ کمیٹی کو کیا کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔ اس کمیٹی کا کام تھا سرمایہ کاروں کی آگاہی کو فروغ دینے کے لیے اقدامات تجویز کرنا۔ اس بات کی جانچ کرنے کے لیے کہ آیا اڈانی گروپ یا دیگر کمپنیوں کے سلسلے میں سیکورٹیز مارکیٹ سے متعلق قوانین کی مبینہ خلاف ورزیوں سے نمٹنے میں ریگولیٹری ناکامی ہوئی ہے۔ قانونی اور ریگولیٹری فریم ورک کو مضبوط بنانے اور سرمایہ کاروں کے تحفظ کے لیے موجودہ فریم ورک کی تعمیل کو محفوظ بنانے کے لیے اقدامات تجویز کرنا۔‘‘

کانگریس نے الزام لگایا کہ ماہر کمیٹی کو دیے گئے حکم میں ان الزامات کا ذکر تک نہیں ہے کہ مودی حکومت نے کس طرح اپنے بہترین دوست اور فائنانسر گوتم اڈانی کی خوشحالی کے لیے ہر طرح سے مدد کی ہے۔ پارٹی نے کہا کہ حکومت نے ریگولیٹرز اور تفتیشی ایجنسیوں پر دباؤ ڈالا کہ وہ اڈانی کی طرف سے کی جانے والی سنگین غلطیوں پر آنکھیں بند کر لیں، چاہے وہ شیل کمپنیوں کے ذریعے منی لانڈرنگ ہو یا چینی شہریوں کے ساتھ مشکوک روابط۔ یہاں تک کہ ان پر چین اور پاکستان کے اتحادی شمالی کوریا کے ساتھ غیر قانونی تجارت کے الزامات بھی عائد کئے گئے۔

پارٹی نے مزید کہا کہ صارفین اور ٹیکس دہندگان کی قیمت پر بندرگاہوں، ہوائی اڈوں، دفاع اور دیگر اہم شعبوں میں اجارہ داری دے کر آپ نے مرکزی، ریاستی اور غیر ملکی حکومتوں کو مجبور کیا کہ وہ اڈانی گروپ کے کاروبار کو فروغ دیں۔ کانگریس نے وزیر اعظم مودی سے پوچھا ’’تو پھر آپ کے قریبی سیاسی حلیف اور ملک کے وزیر داخلہ ہندوستانی عوام کو کیوں گمراہ کر رہے ہیں؟ ماہر کمیٹی کی محدود ترسیل کو غلط انداز میں پیش کر کے، کیا آپ دونوں پردہ پوشی کے لیے زمین تیار کر رہے ہیں؟‘‘

دوسرے سوال میں پارٹی نے جے پی سی تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ سیبی اور دیگر تحقیقاتی ایجنسیوں کے ذریعہ کی گئی تحقیقات ماہر کمیٹی کے باضابطہ دائرہ اختیار میں نہیں آتی۔ اس کے پاس گواہوں کو طلب کرنے، ثبوت کے دباؤ ڈالنے یا جرح کرنے کا اختیار نہیں ہے۔ نیز اس کمیٹی کے سامنے دیئے گئے بیانات عدالت میں پختہ ثبوت قرار نہیں دئے جا سکتے۔ سب سے اہم بات یہ کہ سپریم کورٹ نے سیبی کے چیئرمین سے کہا ہے کہ ’’اس بات کو یقینی بنائیں کہ کمیٹی کو تمام ضروری معلومات فراہم کی جائیں۔" اس کے علاوہ مرکزی حکومت کی تمام ایجنسیوں بشمول مالیاتی ضابطے میں شامل ایجنسیاں، مالیاتی ایجنسیاں اور قانون نافذ کرنے والی ایجنسیوں سے تعاون کرنے کو کہا گیا ہے۔ ہم آپ کو یاد دلانا چاہتے ہیں کہ چیف جسٹس این وی رمنا نے 25 اگست 2022 کو مبینہ طور پر کہا تھا کہ آپ کی حکومت نے ہندوستان میں پیگاسس کے غیر قانونی استعمال کی تحقیقات کرنے والی کمیٹی کے ساتھ تعاون کرنے سے انکار کر دیا تھا، جس سے ایک خطرناک مثال قائم کی گئی تھی۔ اس تاریخ کو دیکھتے ہوئے کیا یہ واضح نہیں ہے کہ اڈانی گھوٹالے کی جامع تحقیقات کا واحد طریقہ مناسب اختیارات کے ساتھ مشترکہ پارلیمانی کمیٹی (جے پی سی) ہے؟

کانگریس نے کہا کہ امید ہے کہ ماہر کمیٹی کی رپورٹ، جو دو ماہ میں 'سیل بند لفافے' میں پیش کی جانی ہے، کا انجام سابقہ رپورٹوں کے جیسا نہیں ہوگا۔ پیگاسس رپورٹ ابھی سامنے آنا باقی ہے، حالانکہ اسے جولائی 2022 میں پیش کیا جانا تھا۔ اس بات کی ضمانت کہاں ہے کہ اڈانی کیس میں ایسا نہیں ہوگا؟ ان تمام متعلقہ پہلوؤں کو مدنظر رکھتے ہوئے، کیا یہ ضروری نہیں ہے کہ اس معاملے کی جے پی سی سے تحقیقات کرائی جائیں؟

ایک نظر اس پر بھی

راجیو گاندھی قتل معاملہ کے مجرم سنتھان کی دورۂ قلب سے موت، راجیو گاندھی جنرل اسپتال میں لی آخری سانس

راجیو گاندھی قتل معاملے میں مجرم قرار دیے گئے ٹی ستھیندر راجہ عرف سنتھان کا بدھ کے روز ایک اسپتال میں انتقال ہو گیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق طبیعت کی ناسازی کے سبب اسے تمل ناڈو کے چنئی واقع راجیو گاندھی جنرل اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ اسپتال کے ڈین ای تھیرانی راجن کا کہنا ہے ...

ای ڈی کسی کو بھی سمن جاری کر سکتی ہے، طلب کرنے پر حاضر ہونا ہوگا، سپریم کورٹ کا حکم

سپریم کورٹ نے انسداد منی لانڈرنگ قانون (پی ایم ایل اے) سے متعلق ایک ایسا تبصرہ کیا ہے جو کئی سیاسی لیڈران کی مصیبتیں بڑھانے والا ہے۔ منگل کے روز ایک معاملے کی سماعت کے دوران عدالت عظمیٰ نے کہا کہ منی لانڈرنگ کے معاملے میں اگر کوئی جانچ بیٹھتی ہے اور ای ڈی کسی کو سمن جاری کرتی ہے ...

ای ڈی کی کارروائی کے خلاف ہیمنت سورین کی درخواست پر سماعت مکمل، جھارکھنڈ ہائی کورٹ نے فیصلہ محفوظ رکھا

 سابق وزیر اعلیٰ ہیمنت سورین کی ای ڈی کی کارروائی اور ان کی گرفتاری کو چیلنج کرنے والی درخواست پر بدھ کو جھارکھنڈ ہائی کورٹ میں سماعت مکمل ہو گئی۔ قائم مقام چیف جسٹس ایس جسٹس چندر شیکھر اور جسٹس نونیت کمار کی بنچ نے سماعت کے بعد فیصلہ محفوظ رکھا ہے۔

مدھیہ پردیش میں بارش سے فصلوں کو بھاری نقصان، کانگریس کا معاوضے کا مطالبہ

مدھیہ پردیش میں بارش اور اولے گرنے کی وجہ سے فصلوں کو کافی نقصان پہنچا ہے۔ ریاست کے وزیرِ اعلیٰ ڈاکٹر موہن یادو نے نقصانات کے سروے کا حکم دیا ہے، جبکہ کانگریس نے متاثرہ کسانوں کو فوری طور پر معاوضہ دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ کانگریس نے کہا کہ جب تک سروے کی حتمی رپورٹ آئے گی بہت دیر ...

لوک سبھا انتخابات سے قبل بی ایس پی کو ایک اور جھٹکا! گڈو جمالی سماجوادی پارٹی میں شامل

لوک سبھا انتخابات سے پہلے بہوجن سماج پارٹی کو بڑا جھٹکا لگا ہے۔ بی ایس پی لیڈر اور اعظم گڑھ سے لوک سبھا انتخابات کے امیدوار رہے شاہ عالم عرف گڈو جمالی سماج وادی پارٹی میں شامل ہو گئے۔ جمالی کے ایس پی میں شامل ہونے پر سماج وادی پارٹی کے سربراہ اکھلیش یادو نے ان کا خیرمقدم کیا۔

حکومت فوج میں تقسیم پیدا کر رہی ہے، اگنی پتھ اسکیم کے حوالے سے ادھیر رنجن کا بی جے پی پر سخت حملہ

کانگریس کے رکن پارلیمنٹ ادھیر رنجن چودھری نے اگنی پتھ اسکیم کے حوالے سے مرکزی حکومت پر سخت حملہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ سابق آرمی چیف ایم ایم نروانے کی کتاب 'فور اسٹارس آف ڈیسٹینی' پر پابندی لگا دی گئی ہے۔ یہ کتاب اب بازار میں دستیاب نہیں ہے۔ سابق آرمی چیف نروانے نے اپنی کتاب ...