سرسی میں این ایس یو آئی نے کیا ایم پی اننت کمار ہیگڈے کے دفتر کا گھیراو

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 11th February 2024, 7:36 PM | ساحلی خبریں |

سرسی 11 / فروری (ایس او نیوز) مرکزی حکومت کی طرف سے ٹیکس  کی رقم میں ریاست کرناٹکا کو جو حصہ ملنا تھا  اُسے ادا نہ  کیے جانے کا الزام لگاتے ہوئے نیشنل اسٹوڈنٹس یونین آف انڈیا  (این ایس یو آئی) کے کارکنان نے سرسی میں  رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے کے دفتر کا گھیراو کیا ۔ 

    این ایس یو آئی کی طرف سے یہ محاصرہ اور احتجاج شہر کے زو سرکل کے پاس واقع ایم پی کے دفتر کے سامنے کیا گیا ۔ مظاہرے کے دوران اننت کمار ہیگڈے اور مرکزی حکومت کے خلاف نعرے بازی کی گئی ۔ احتجاجی مظاہرین کا کہنا تھا کہ مرکزی حکومت کنڑیگاس اور کرناٹکا حکومت کے ساتھ بھید بھاو کا سلوک اپنا رہی ہے ۔ مرکز کی طرف سے 1800 کروڑ روپے ملنے ہیں لیکن ریاست کے ساتھ ناانصافی ہونے کے باوجود بی جے پی کے ہمارے رکن پارلیمان عوام کے حق میں کوئی آواز نہیں اٹھا رہے ہیں ۔ 

     مظاہرین کا یہ بھی کہنا تھا کہ ایم پی اننت کمار کی غفلت اور عدم توجہی کی وجہ سے ضلع اتر کنڑا ترقیاتی سطح پر بہت پچھڑا ہوا ہے ۔ برسہا برس سے اس حلقے سے رکن پارلیمان رہنے کے باوجود ضلع کے لئے ان کا کوئی تعاون نہیں ملا ۔ اب الیکشن قریب آتے ہی وہ سماج میں تفریق پیدا کرنے والے بیانات دے رہے ہیں ۔ 

ایک نظر اس پر بھی

کاروار کے سمندر میں لگا ہوا 'رڈار' بھی چوروں کے ہاتھ سے بچ نہ سکا !

زمین پر سے قیمتی مشینیں چرانے والوں نے اب سمندر میں اپنے ہاتھ کی صفائی دکھانا شروع کیا ہے جس کی تازہ ترین مثال ماحولیاتی تبدیلیوں کے سگنل فراہم کرنے کے لئے کاروار کے علاقے میں بحیرہ عرب میں لگائے گئے 'رڈار' کی چوری ہے ۔

کمٹہ کے سمندر میں چینی جہاز کا معاملہ - کوسٹ گارڈ نے کہا : ہندوستانی حدود کی خلاف ورزی نہیں ہوئی

دو دن قبل کمٹہ کے قریب ہندوستانی سمندری سرحد میں چینی جہاز کی موجودگی اور اس سے ساحلی سیکیوریٹی کو درپیش خطرے کے تعلق سے جو خبریں عام ہوئی تھیں اس پر کوسٹ گارڈ نے بتایا ہے کہ یہ ایک جھوٹی خبر تھی اور چینی جہاز ہندوستانی سرحد میں داخل نہیں ہوا تھا ۔

ہوناور کاسرکوڈ میں ماہی گیروں پر زیادتیوں کے خلاف حقوق انسانی کمیشن سے کی گئی شکایت

ہوناور کے کاسرکوڈ ٹونکا میں مجوزہ تجارتی بندرگاہ کی تعمیر کے خلاف احتجاج کرنے والے مقامی ماہی گیروں  پر پولیس کی طرف سے لاٹھی، خواتین سمیت کئی لوگوں کی گرفتاریاں ، جھوٹے مقدمات کی شکل میں جو زیادتیاں ہوئی تھیں، اس کے تعلق سے حقوق انسانی کمیشن سے شکایت کی گئی ہے ۔

بھٹکل میں 'ریت مافیا' کا دربار - تعلقہ انتظامیہ خاموش - عوام بے بس اور لاچار

بھٹکل میں تعلقہ انتظامیہ کی خاموشی کی وجہ سے تعلقہ کے گورٹے، بیلکے، جالی، مُنڈلی نستار، بئیلور جیسے علاقوں میں ساحل سے ریت جیسی سمندری دولت لوٹنے کا کام 'ریت مافیا' کی طرف سے بلا روک ٹوک جاری ہے اور مقامی عوام پریشانی اور بے بسی و لاچاری سے یہ سب دیکھنے پر مجبور ہوگئے ہیں ۔