کرناٹک سَر،اب دیگر ریاستوں پر توجہ، بدھ کو میٹنگ،کانگریس مدھیہ پردیش ،راجستھان اور چھتیس گڑھ میں میں بھی بی جےپی سے لوہا لینے کو تیار

Source: S.O. News Service | Published on 23rd May 2023, 12:45 AM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 23/مئی (ایس او نیوز/ایجنسی) کرناٹک میں شاندار کامیابی حاصل کرنے اور بی جےپی کو پٹخنی دینے کے بعدکانگریس نے فتح کے  خمار سے نکلتے ہوئے اسی سال ہونے والے دیگر اسمبلی انتخابات کی طرف اپنی توجہ مرکوز کرلی ہے۔  پارٹی جہاں مدھیہ  پردیش، راجستھان اور چھتیس گڑھ میں  بی جےپی سے دودوہاتھ کرنے کو تیار ہے وہیں تلنگانہ کے اسمبلی انتخابات کو بھی پوری طاقت سے لڑنے کی تیاری کررہی ہے۔اس کیلئے  چاروں ریاستوں  میں  سرگرم  پارٹی  کے سینئر لیڈروں کی میٹنگ ۲۴؍ مئی کو طلب کی گئی ہے۔ واضح رہے کہ آئندہ چند مہینوں میں ان چاروں  ریاستوں  اور میزورم  میں  اسمبلی الیکشن ہونے ہیں۔ کانگریس  ان ریاستوں   میں انتخابی حکمت عملی تیار کرنے میں مصروف ہے۔ 

جن ۴؍ ریاستوں کیلئے بدھ ۲۴؍ مئی کو میٹنگ طلب کی گئی ہے ان میں سے دو ریاستوں راجستھان اور چھتیس گڑھ میں  کانگریس  پہلے ہی برسراقتدار ہے اوراس کے سامنے حکومت مخالف لہر کا سامنا کرتے ہوئے اپنے اقتدار کر بچانے کا چیلنج ہے جبکہ مدھیہ پردیش میں سابقہ الیکشن میں فتح حاصل کرنے کے بعد بھی زعفرانی پارٹی  نے  جیوترادتیہ سندھیا کی بغاوت کے سہارے اس سے اقتدار چھین لیا۔ کانگریس کو یقین ہے کہ وہ یہاں اگلے اسمبلی الیکشن میں  بی جےپی کو چاروں شانے چت  کرنے میں کامیاب ہوجائےگی۔ راجستھان اور چھتیس گڑھ میں عوامی فلاح و بہبود کو مقدم رکھتے ہوئے کی گئی حکمرانی اور  بنائی گئی پالیسیوں کے  سہارے کانگریس  یہاں اقتدار بچانے میں  کامیابی ملنے کی امید ہے۔ 

چوتھی ریاست تلنگانہ ہے جہاں  بھارتیہ راشٹریہ سمیتی برسر اقتدار ہے۔ یہاں حالانکہ بی جےپی  ہاتھ پیر مارنے اور اپنے اثر کو بڑھانے کی کوشش کررہی ہے مگر اصل مقابلہ کانگریس  اور کے سی آر کی پارٹی میں ہی ہوگا۔ ملکارجن کھرگے  ۲۴؍ مئی کو چاروں  ریاستوں کے لیڈروں سے الگ الگ ملاقاتیں  اور  انتخابی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کریں گے۔  ایک سینئر لیڈر نے بتایا کہ کانگریس  وقت سے پہلے حکمت عملی تیار کرلینے کے بعد زمینی سطح پر ایک ایک ووٹر تک پہنچنا چاہتی ہے۔ پارٹی کو امید ہے کہ کرناٹک   کے بعد پیدا ہونے والی مثبت لہر اس کیلئے فائدہ مند ہوگی۔ 

ان معاملات میں شامل کانگریس کے ایک سینئر لیڈر نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کو بتایا کہ ’’بھارت جوڑو یاترا جو تلنگانہ، مدھیہ پردی اور راجستھان جیسی ریاستوں سے گزری ہے، پارٹی کو الیکشن میں فائدہ پہنچائے گی کیوں کہ اس کی وجہ سے  پارٹی کارکنوں اور کیڈر کے  نہ صرف  حوصلے بلند ہیں بلکہ وہ پہلے ہی سرگرم ہوچکے ہیں۔اس کیلئے کرناٹک کی طرح ان ریاستوں میں بھی بھارت جوڑو یاترا کا فائدہ حاصل ہوگا۔‘‘  انہوں نے بتایا کہ جو حکمت عملی کرناٹک میں  اختیار کی گئی تھی،اسی کو دیگر ریاستوں میں بھی اپنا یا جائےگا اور  عوام  کوچھتیس گڑھ اور راجستھان  میں شروع کی گئی عوام دوست اسکیموں سے آگاہ کیا جائےگا ۔

کانگریس پارٹی مختلف ریاستوں میں مختلف مسائل سے دوچار ہے۔ راجستھان میں بطور خاص پارٹی کو وزیراعلیٰ گہلوت اور سابق نائب وزیراعلیٰ سچن پائلٹ کے اختلافات کی وجہ سے نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے۔ یہاں وزیراعلیٰ اشوک گہلوت ابھی سے انتخابی کیلئے سرگرم ہوگئے ہیں۔ یہاں سچن پائلٹ نے دھمکی دی ہے کہ اگر ان کے مطالبات مئی کے اواخر تک پورے نہ ہوئے تو وہ تحریک شروع  کریں گے۔ سچن پائلٹ کے مختلف مطالبات میں سابق وزیراعلیٰ وسندھرا راجے سندھیا کے خلاف اعلیٰ  سطحی جانچ کا مطالبہ شامل ہے۔ 

کانگریس ذرائع کے مطابق  پارٹی صدر ملکارجن کھرگے کو  چھتیس گڑھ اور تلنگانہ میں بھی پارٹی کے خلفشار پر قابو پانا ہوگا۔ چھتیس گڑھ میں وزیراعلیٰ بھوپیش بگھیل اور ریاستی وزیر ٹی  ایس سنگھ دیو کے درمیان رسہ کشی ہے۔ٹی ایس سنگھ دیو بار بار وزارت اعلیٰ پر اپنا دعویٰ پیش کرچکے ہیں۔ اُدھر تلنگانہ میں پارٹی کی ریاستی اکائی کے صدر ریونتھ ریڈی کو لیڈروں کی آپسی لڑائی کا سامنا ہے جو انہیں ریاست سے باہر کا آدمی تصور کرتے ہیں۔ کانگریس کے ایک سینئر لیڈر  نے بتایا کہ انتخاب میں فتح حاصل کرنے کیلئے   پارٹی کی ریاستی اکائیوں میں ویسے ہی اتحاد کو قائم کرنے کی کوشش کرنی ہوگی جیسا اتحاد کرناٹک میں رہا۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بینگلورو: دھوتی میں ملبوس کسان کو داخلہ نہ دینے کا معاملہ : حکومت نے دیا سات دن کے لئے مال بند کرنے کا حکم 

دو دن قبل بینگلورو کے ایک مال میں ایک عمر رسیدہ کسان اور اس کے اہل خانہ  کو اس وجہ سے داخلہ دینے سے انکار کیا گیا تھا کہ وہ کسان دھوتی میں ملبوس تھا ۔ اس واقعے کی ویڈیو کلپ وائرل ہونے کے بعد اس کے خلاف آوازیں اٹھنے لگی تھیں اور مال کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا جا رہا تھا ۔ 

کرناٹک پرائیویٹ فرموں میں کناڈیگاس کے لیے 100فیصد کوٹہ لازمی کرنے والا بل منظور

کرناٹک کی کابینہ نے ایک بل کو منظور کیا ہے جس میں کننڈیگاس کو گروپ سی اور ڈی کے عہدوں کے لیے نجی شعبے میں 100 فیصد ریزرویشن لازمی قرار دیا گیا ہے،  وزیر اعلیٰ سدرامیا نے کہا۔یہ فیصلہ پیر کو ہونے والے کابینہ کے اجلاس میں کیا گیا۔

وزیر تعلیم نے پیپر لیک سے کیا انکار تو کانگریس نے پیش کر دی فہرست، شمار کرائے 25 معاملات

پارلیمنٹ کے بجٹ اجلاس کے دوران اپوزیشن کی جانب سے نیٹ اور پیپر لیک کا معاملہ اٹھایا گیا، جس پر ایوان میں کافی ہنگامہ ہوا۔ اپوزیشن لیڈر راہل گاندھی نے یہ معاملہ اٹھاتے ہوئے وزیر تعلیم سے سوال کیا کہ وہ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے کیا کر رہے ہیں۔ اپوزیشن کے سوال اٹھانے پر وزیر ...

یوگی حکومت کو لگا بڑاجھٹکا، کانوڑ یاترا روٹ پر ’نام کی تختی‘ لگانے کے فیصلے پر سپریم کورٹ نے لگائی روک؛ اے پی سی آر کو ملی ایک اور کامیابی

سوسی ایشن فور پروٹیکشن آف سیول رائٹس (اے پی سی آر) سمیت دیگر ایڈوکیٹس کی جانب  سے سپریم کورٹ  کا دروازہ کھٹکنانے کے بعد عدالت عالیہ نے   یوگی حکومت   کے  مبینہ نفرت پھیلانے کے منصوبہ کو خاک میں ملادیا  اور اہم حکم جاری کرتے ہوئے اتر پردیش، اتراکھنڈ اور مدھیہ پردیش حکومت کی ...

بہار کو نہیں ملے گا خصوصی ریاست کا درجہ!، مودی حکومت کے فیصلے پر کانگریس اور آر جے ڈی حملہ آور

کانگریس نے اپنے آفیشیل ’ایکس‘ ہینڈل پر ایک پوسٹ شیئر کیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ مودی حکومت نے بہار کو خصوصی ریاست کا درجہ نہ دینے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ ویڈیو کی شکل میں کیے گئے اس پوسٹ میں بتایا گیا ہے کہ بہار کی عوام لگاتار خصوصی ریاست کا درجہ دیے جانے کا مطالبہ کر رہے ہیں، ...

کالج پاس کرنے والے نصف طلبا کے پاس روزگار کے لیے ضروری اہلیت موجود نہیں، معاشی سروے میں انکشاف

مرکزی حکومت نے 2024 کا معاشی سروے جاری کیا ہے جس میں کئی اہم باتیں نکل کر سامنے آئی ہیں۔ اس معاشی سروے کے مطابق ہندوستان کی تیزی سے بڑھتی آبادی کا 65 فیصد 35 سال سے کم عمر کا ہے، لیکن ان میں سے کئی لوگوں کے پاس جدید معاشی نظام میں کام کرنے کے لیے ضروری ہنر موجود نہیں ہے۔ اندازہ ظاہر ...

لکھیم پور کھیری تشدد معاملہ: سپریم کورٹ نے آشیش مشرا کو دی مشروط ضمانت

سپریم کورٹ نے پیر  کو سابق مرکزی وزیر مملکت برائے داخلہ اجے مشرا ٹینی کے بیٹے آشیش مشرا کو دی گئی عبوری ضمانت کو باقاعدہ مشروط ضمانت میں تبدیل کر دیا ہے۔ آشیش مشرا کو 2021 کے لکھیم پور کھیری تشدد معاملے میں ضمانت دی گئی تھی۔ سپریم کورٹ نے مشرا کو باقاعدہ ضمانت دیتے ہوئے عبوری ...