کرناٹک میں راجیہ سبھا کی تین سیٹیوں پر کانگریس کا قبضہ ۔ بی جے پی کو ایک سیٹ

Source: S.O. News Service | Published on 28th February 2024, 1:06 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو ،28/ فروری (ایس او  نیوز/ایجنسی ) کرنا ٹک سے راجیہ سبھا چار سیٹوں کیلئےہوئے انتخاب کا نتیجہ ظاہر ہو چکا ہے۔ کرناٹک میں حکمران کانگریس نے اپنے حصہ کی تمام تین سیٹوں پر کامیابی حاصل کرلی ہے۔

جب کہ توقع کے مطابق بی جے پی نے ایک سیٹ جیت لی۔ بی جے پی اور جے ڈی ایس اتحاد کے امیدوار کیندرا ریڈی جنہوں نے میدان میں آکر ریاست کی سیاست میں ہلچل مچادی تھی کو شکست کا منہ دیکھنا پڑا۔ حالانکہ ریڈی کو میدان میں اتارنے کا حساب کتاب جے ڈی ایس لیڈر کمار سوامی اور بی جے پی لیڈران نے کیا تھا۔ لیکن ان کا حساب کتاب غلط ثابت ہوا اور کیندرا ریڈی کو شکست کھانی پڑی۔ اس شکست کے ساتھ لوک سبھا انتخابات سے پہلے ریاست میں بی جے پی اور جے ڈی ایس اتحاد کو یہ دوسری شکست ہے ۔

اس چناؤ میں 222 ووٹ پول ہوئے جس میں کانگریس امیدوار اجئے ماکن 47- ناصر حسین 47- اور جی سی چندر شیکھر 45 ووٹس حاصل کر کے کامیاب رہے۔ حالانکہ بی جے پی کے نارینسا بھانڈا 47 ووٹس حاصل کر کے کامیاب رہے۔ جبکہ کیندر اریڈی 5 ویں امیدوار کی حیثیت سے میدان میں اترے تھے اس کو صرف 35 ووٹس ملے۔ اتحادی امیدوار کیندرا ریڈی کو اپنی پارٹی جے ڈی ایس سے  19 ووٹس ملے۔ اس طرح انہوں نے دونوں اتحادی پارٹیوں سے 35 ووٹس حاصل کر کے ناکام رہے ۔

ذرائع کے مطابق کئی بار حساب کتاب کر کے جے ڈی ایس اور بی جے پی سےنے 5 ویں امیدوار کو میدان میں اتارا تھا ، اس کے بعد ہی حکمران کانگریس کو کر اس ووٹنگ کا خوف شروع ہو گیا ۔ اس خطرہ کو محسوس کرتے ہوئے سدارامیا اور ڈی کے شیو کمار بی جے پی کو لبھانے میں کامیاب رہے اور کانگریس کو اپنی پارٹی کے علاوہ غیر پارٹی کے تین اور بی جے پی کا بھی ایک ووٹ حاصل ہوا۔ اس طرح وزیر اعلیٰ اور نائب وزیر اعلیٰ کی حکمت عملی کام کرگئی۔ کے آر پی پی کے اراکین اسمبلی کی جنار دھن ریڈی درشن پٹنیا، پٹا سدے گوڈا، لتا  ملیکارجنانے  کانگریس کی تائید کرتے ہوئے کانگریس امیدوار ہی کو ووٹ دیا جب کہ کسی بھی کانگریس ایم ایل اے نے کراس ووٹ نہیں کیا ۔ اس طرح کانگریس کی جیت کے ایس ٹی سوم شیکھر کر اس ووٹنگ کرنے میں کامیاب ہوئے ۔ انہوں نے کانگریس امیدوار کو اپنا ووٹ دیا۔ بی جے پی ، جے ڈی ایس کی یہ دوسری شکست ہے۔

حال ہی میں بنگلور ٹیچرس حلقہ سے ریاستی قانون ساز کونسلنگ کے لئے ہوئے انتخابات میں کانگریس امیدوار بی جے پی اور جے ڈی ایس اتحادی امیدوار رنگناتھ کے خلاف کامیاب ہوئے۔ ریاستی اسمبلی کے 223 میں سے 222 ووٹوں کی پولنگ ہوئی ۔ یلاپور حلقہ کے بی جے پی کے رکن اسمبلی شیورام بیبار ووٹنگ سے غیر حاضر رہے ۔ پولنگ کا فیصد %99.5رہا۔ کانگریس کے 135 ، آزاد 3 ، بی جے پی کے 65 اور جے ڈی ایس کے 19 اراکین اسمبلی نے اپنے ووٹ کا استعمال کیا۔ ایک دیگر بی جے پی لیڈرشیو رام  ہیبار ووٹنگ سے غیر حاضر رہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی نے کانگریس ایم ایل اے کو 50 کروڑ روپے کی پیشکش کی؛ سدارامیا کا الزام

کرناٹک کے وزیر اعلی سدارامیا نے ہفتہ کو بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) پر الزام لگایا کہ وہ کانگریس کے اراکین اسمبلی کو وفاداری تبدیل کرنے کے لیے 50 کروڑ روپے کی پیشکش کرکے 'آپریشن لوٹس' کے ذریعے انکی حکومت کو غیر مستحکم کرنے کی کوششوں میں ملوث ہے۔

لوک سبھا انتخاب 2024: کرناٹک میں کانگریس کو حاصل کرنے کے لیے بہت کچھ ہے

کیا بی جے پی اس مرتبہ اپنی 2019 لوک سبھا انتخاب والی کارکردگی دہرا سکتی ہے؟ لگتا تو نہیں ہے۔ اس کی دو بڑی وجوہات ہیں۔ اول، ریاست میں کانگریس کی حکومت ہے، اور دوئم بی جے پی اندرونی لڑائی سے نبرد آزما ہے۔ اس کے مقابلے میں کانگریس زیادہ متحد اور پرعزم نظر آ رہی ہے اور اسے بھروسہ ہے ...

تعلیمی میدان میں سرفہرست دکشن کنڑا اور اُڈپی ضلع کی کامیابی کا راز کیا ہے؟

ریاست میں جب پی یوسی اور ایس ایس ایل سی کے نتائج کا اعلان کیاجاتا ہے تو ساحلی اضلاع جیسےدکشن کنڑا  اور اُ ڈ پی ضلع سر فہرست ہوتے ہیں۔ کیا وجہ ہے کہ ساحلی ضلع جسے دانشوروں کا ضلع کہا جاتا ہے نے ریاست میں بہترین تعلیمی کارکردگی حاصل کی ہے۔

این ڈی اے کو نہیں ملے گی جیت، انڈیا بلاک کو واضح اکثریت حاصل ہوگی: وزیر اعلیٰ سدارمیا

کرناٹک کے وزیر اعلیٰ سدارمیا نے ہفتہ کے روز اپنے بیان میں کہا کہ لوک سبھا انتخاب میں این ڈی اے کو اکثریت نہیں ملنے والی اور بی جے پی کا ’ابکی بار 400 پار‘ نعرہ صرف سیاسی اسٹریٹجی ہے۔ میسور میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے سدارمیا نے یہ اظہار خیال کیا۔ ساتھ ہی انھوں نے کہا کہ ...