سابق نائب صدر حامد انصاری پر تضحیک آمیز تبصرہ، کانگریس کی وزیر اعظم پر تنقید، کارروائی کا مطالبہ

Source: S.O. News Service | Published on 9th July 2024, 6:43 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 9/جولائی (ایس او نیوز /ایجنسی)  کانگریس جنرل سکریٹری جے رام رمیش نے سابق نائب صدر حامد انصاری کے خلاف مبینہ طور پر توہین آمیز ریمارکس کرنے پر وزیر اعظم نریندر مودی کے خلاف استحقاق کی خلاف ورزی کی کارروائی شروع کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے یہ مطالبہ راجیہ سبھا کے چیئرمین جگدیپ دھنکھر کو لکھے گئے خط میں کیا۔

راجیہ سبھا کے رکن جے رام رمیش نے اس خط کو سوشل میڈیا پلیٹ فارم ایکس پر شیئر کرتے ہوئے لکھا، ’’آج جب غیر حیاتیاتی وزیر اعظم بین الاقوامی سطح پر اپنے گرتے قد کو بڑھانے کی کوشش کر رہے ہیں، اس وقت میں نے راجیہ کے چیئرمین کو ایک خط لکھ کر راجیہ سبھا کے سابق چیئرمین ڈاکٹر حامد انصاری کے خلاف توہین آمیز بیان پر استحقاق کی خلاف ورزی کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے یہ بیان 2 جولائی 2024 کو لوک سبھا میں دیا تھا۔‘‘

رمیش نے 8 جولائی کو لکھے گئے خط میں دعویٰ کیا کہ جس طرح سے وزیر اعظم مودی نے انصاری پر حملہ کیا ہے، آج تک کسی وزیر اعظم نے لوک سبھا کے کسی سابق اسپیکر یا راجیہ سبھا کے سابق چیئرمین پر حملہ نہیں کیا تھا۔ راجیہ سبھا کے رکن رمیش نے الزام لگایا کہ وزیر اعظم مودی نے نہ صرف اپنے عہدہ کے وقار کو نچلی سطح پر پہنچا دیا ہے بلکہ پارلیمانی روایات اور ضابطوں کو بھی توڑا ہے۔

انہوں نے دھنکھڑ پر زور دیا کہ وہ وزیر اعظم کے خلاف ان کے "تضحیک آمیز ریمارکس" کے لیے استحقاق کی خلاف ورزی کی کارروائی شروع کریں۔

وزیر اعظم مودی نے صدر کے خطاب پر شکریہ کی تحریک پر بحث کا جواب دیتے ہوئے 2 جولائی کو لوک سبھا میں کہا تھا، ’’اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ وہ (اپوزیشن) کتنے نمبروں کا دعوی کرتے ہیں، جب ہم 2014 میں راجیہ میں آئے تھے۔ تو راجیہ سبھا میں ہماری طاقت بہت کم تھی اور (اس وقت کے) چیئرمین کسی حد تک دوسری طرف مائل تھے لیکن ہم فخر کے ساتھ ملک کی خدمت کرنے کے اپنے عزم سے پیچھے نہیں ہٹے۔‘‘

انہوں نے کہا تھا، ’’میں ملک کے لوگوں کو بتانا چاہتا ہوں کہ جو فیصلہ آپ نے لیا ہے، جو حکم آپ نے ہمیں دیا ہے اس کی خدمت کریں، نہ مودی اور نہ ہی یہ حکومت ایسی کسی رکاوٹ سے ڈرے گی۔ ہم ان عزائم کو پورا کر کے ہی دم لیں گے جن کے لئے ہم نکلے تھے۔‘‘ وزیر اعظم مودی نے کسی کا نام نہیں لیا تھا لیکن سابق نائب صدر انصاری اگست 2012 سے اگست 2017 تک راجیہ سبھا کے چیئرمین رہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کووڈ میں شرح اموات ظاہر کرنے والی رپورٹس غیر مصدقہ اور گمراہ کن

صحت اور خاندانی بہبود کی مرکزی وزارت نے کہا ہے کہ سائنس جریدے سائنس ایڈوانسز میں شائع مطالعہ سے کووڈ کی مدت کے دوران 2020 میں سب سے زیادہ اموات کو ظاہر کرنے والی رپورٹ غیر مصدقہ اور ناقابل قبول اندازوں پر مبنی ہیں۔

علاقائی سیاسی پارٹیوں کمائی اور خرچ کی رپورٹ جاری

ایسوسی ایشن فار ڈیموکریٹک ریفارمز نے اپنی حالیہ جاری کردہ رپورٹ میں ملک کی 57 علاقائی جماعتوں میں سے 39 علاقائی جماعتوں کی آمدنی اور اخراجات کی رپورٹ جاری کی ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ سال 2022-23 کی آمدنی اور اخراجات کے لحاظ سے کون سی پارٹی اوپر اور نیچے ہے۔ کس نے کتنا عطیہ وصول ...

جیتن سہنی قتل کے سلسلے میں مزید 3 ملزمان گرفتار، ایس ایس پی کے مطابق جائے وقوعہ سے اہم دستاویزات برآمد

  وکاسشیل انسان پارٹی (وی آئی پی) کے سربراہ مکیش سہنی کے والد کے قتل کیس میں پولیس نے مزید 3 ملزمان کو گرفتار کیا ہے۔ یہ گرفتاری کلیدی ملزم کاظم انصاری کی نشان دہی پر کی گئی ہے۔ دربھنگہ کے سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس جگوناتھ ریڈی نے یہ اطلاع دی۔

آئی اے ایس پوجا کھیڈکر تنازعہ کے درمیان یو پی ایس سی کے چیئرمین منوج سونی عہدے سے مستعفی

  یونین پبلک سروس کمیشن (یو پی ایس سی) کے چیئرمین منوج سونی نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ انہوں نے اپنی مدت ملازمت پوری ہونے سے قبل ہی اپنا استعفی صدر کو ارسال کر دیا ہے۔

کیجریوال جان بوجھ کر کم کیلوری والا کھانا لے رہے ہیں، ایل جی کا الزام، عآپ کا شدید ردعمل

عام آدمی پارٹی کے رکن پارلیمنٹ سنجے سنگھ نے دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال کی صحت سے متعلق لیفٹیننٹ گورنر ونے سکسینہ کے چیف سکریٹری کو لکھے گئے خط پر ردعمل ظاہر کیا ہے۔ ایل جی کو نشانہ بناتے ہوئے سنجے سنگھ نے کہا کہ ایل جی یہ کیا مذاق کر رہے ہیں؟ کیا کوئی آدمی رات کو شوگر کم ...

نیٹ پر سپریم کورٹ کے حکم کے بعد این ٹی اے نے آن لائن اپ لوڈ کئے مرکز اور شہر وار نتائج

نیٹ پر سپریم کورٹ کے حکم کے بعد این ٹی اے نے نیٹ یو جی طلباء کے مرکز اور شہر وار نتائج کو آن لائن اپ لوڈ کر دیا ہے۔ نتائج اپلوڈ کرنے کے لئے ہفتہ کی دوپہر 12 بجے تک کا وقت دیا گیا تھا۔ تاہم، سی جے آئی ڈی وائی چندرچوڑ، جسٹس جے بی پاردیوالا اور جسٹس منوج مشرا کی بنچ نے واضح کیا تھا کہ ان ...