خطرے میں ہیں ہندوستان کے 41 اسلحہ کارخانے، ملک کے مفاد میں نہیں باہر سے ملٹری سپلائی پر انحصار

Source: S.O. News Service | Published on 18th March 2023, 11:53 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 18/مارچ (ایس او نیوز/ایجنسی) دفاعی شعبہ سے جڑے تین بڑے ایمپلائی تنظیموں، جن میں اے آئی ڈی ای ایف، بی پی ایم ایس اور سی ڈی آر اے شامل ہیں، انھوں نے 220 سال پرانے 41 اسلحہ کارخانوں کی باوقار تاریخ کے سمٹنے کا اندیشہ ظاہر کیا ہے۔ اے آئی ڈی ایف کے جنرل سکریٹری سی شری کمار کے مطابق 41 اسلحہ کارخانوں کو سات کمپنیوں میں تبدیل کرنے کے بعد ان کا وجود خطرے میں ہے۔ ان کارخانوں کے کارپوریٹائزیشن کو اب ڈیڑھ سال ہو گیا ہے۔ مرکزی حکومت نے اسلحہ کارخانوں کے کارپوریٹائزیشن کے حق میں جوابدہی، خود مختاری اور صلاحیت کو لے کر یہ دلیل دی تھی کہ ان کا کاروبار بڑھ کر 30 ہزار کروڑ روپے ہو جائے گا۔ ابھی تک یہ حقیقت سے دور ہے۔

دفاعی معاملوں کی اسٹینڈنگ کمیٹی کے سامنے پیش رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سات ڈی پی ایس یو نے 25-2024 میں 26300 کروڑ روپے کے کاروبار کا اندازہ لگایا ہے۔ 22-2021 کا ٹرن اوور تقریباً 8686 کروڑ روپے رہا ہے۔ شری کمار نے 4 مارچ کو سی ڈی ایس کے ذریعہ دیے گئے ایک بیان کا حوالہ دیا ہے جس میں انھوں نے کہا تھا کہ ’’ہمارے لیے سب سے بڑا سبق خود کفیل بننا ہے‘‘۔ ہم باہر سے ملٹری سپلائی پر منحصر نہیں رہ سکتے۔ تینوں ایمپلائی تنظیمیں، کارپوریٹائزیشن کے خلاف اپنی لڑائی جاری رکھیں گے۔

بطور شری کمار صرف سی ڈی ایس ہی نہیں بلکہ فوجی چیف بھی اس تعلق سے اشارہ کر چکے ہیں۔ آرمی چیف نے گزشتہ دنوں کہا تھا کہ دفاعی شعبہ میں خود کفیلی حاصل کرنے کے لیے اسلحہ کارخانوں کو حکومت کے تحت او ایف بی کی شکل میں اپنی بنیادی حالت میں واپس لانا چاہیے۔ ایک سرکاری تنظیم کے تحت او ایف بی کی شکل میں اپنی حقیقی حالت میں واپس لانا چاہیے۔ ایک سرکاری تنظیم کی شکل میں اسلحہ کارخانوں کو جاری رکھنے کے لیے فیڈریشن اور سی ڈی آر اے کے ذریعہ دیے گئے متبادل اور عملی تجاویز پر غور ہو۔ تنظیم کے عہدیداران کہتے ہیں کہ مرکزی حکومت کی پالیسی 41 اسلحہ کارخانوں کے وجود کو ہی خطرے میں ڈال رہی ہے۔ یہ نہ تو مسلح افواج اور نہ ہی ملک کے مفاد میں ہے۔ مودی حکومت نے یکم اکتوبر 2021 کو 41 اسلحہ کارخانوں کو ان کی ٹریڈ یونینوں کی تمام مخالفتوں کو نظر انداز کرتے ہوئے انھیں سات کارپوریشن میں تبدیل کر دیا تھا۔ اس کے خلاف ایمپلائی ایسو سی ایشن عدالت پہنچے۔ وہاں پر مرکزی حکومت نے عدالت میں کہا کہ ای ڈی ایس اے 2021 کو اگست 2021 سے آگے بڑھانے کا کوئی منصوبہ نہیں ہے۔ اس پر ہائی کورٹ نے رِٹ پٹیشن کو نمٹا دیا۔

حال میں اے آئی ڈی ای ایف، بی پی ایم ایس اور سی ڈی آر اے تینوں ایمپلائی تنظیموں نے وزارت دفاع کے سامنے ایک ایجنڈا پیش کیا ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ مرکزی حکومت کا اسلحہ کارخانوں کو کارپوریٹ بنانے کا فیصلہ ایک ناکامی اور غلطی ہے۔ اس پر از سر نو غور کرنے اور فیصلہ واپسی کی ضرورت ہے۔ 41 اسلحہ کارخانوں کو ڈیفنس پی ایس یو یعنی میونیشن انڈیا لمیٹڈ، آرمڈ وہیکل کارپوریشن لمیٹڈ، ایڈوانسڈ ویپنس اینڈ ایکوئپمنٹ انڈیا لمیٹڈ، ٹروپ کمفرٹس لمیٹڈ، ینتر انڈیا لمیٹڈ، انڈیا آپٹیل لمیٹڈ اور گلائیڈرس انڈیا لمیٹڈ کو منتقل کر دیا گیا۔

ایک نظر اس پر بھی

راجیو گاندھی قتل معاملہ کے مجرم سنتھان کی دورۂ قلب سے موت، راجیو گاندھی جنرل اسپتال میں لی آخری سانس

راجیو گاندھی قتل معاملے میں مجرم قرار دیے گئے ٹی ستھیندر راجہ عرف سنتھان کا بدھ کے روز ایک اسپتال میں انتقال ہو گیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق طبیعت کی ناسازی کے سبب اسے تمل ناڈو کے چنئی واقع راجیو گاندھی جنرل اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ اسپتال کے ڈین ای تھیرانی راجن کا کہنا ہے ...

ای ڈی کسی کو بھی سمن جاری کر سکتی ہے، طلب کرنے پر حاضر ہونا ہوگا، سپریم کورٹ کا حکم

سپریم کورٹ نے انسداد منی لانڈرنگ قانون (پی ایم ایل اے) سے متعلق ایک ایسا تبصرہ کیا ہے جو کئی سیاسی لیڈران کی مصیبتیں بڑھانے والا ہے۔ منگل کے روز ایک معاملے کی سماعت کے دوران عدالت عظمیٰ نے کہا کہ منی لانڈرنگ کے معاملے میں اگر کوئی جانچ بیٹھتی ہے اور ای ڈی کسی کو سمن جاری کرتی ہے ...

ای ڈی کی کارروائی کے خلاف ہیمنت سورین کی درخواست پر سماعت مکمل، جھارکھنڈ ہائی کورٹ نے فیصلہ محفوظ رکھا

 سابق وزیر اعلیٰ ہیمنت سورین کی ای ڈی کی کارروائی اور ان کی گرفتاری کو چیلنج کرنے والی درخواست پر بدھ کو جھارکھنڈ ہائی کورٹ میں سماعت مکمل ہو گئی۔ قائم مقام چیف جسٹس ایس جسٹس چندر شیکھر اور جسٹس نونیت کمار کی بنچ نے سماعت کے بعد فیصلہ محفوظ رکھا ہے۔

مدھیہ پردیش میں بارش سے فصلوں کو بھاری نقصان، کانگریس کا معاوضے کا مطالبہ

مدھیہ پردیش میں بارش اور اولے گرنے کی وجہ سے فصلوں کو کافی نقصان پہنچا ہے۔ ریاست کے وزیرِ اعلیٰ ڈاکٹر موہن یادو نے نقصانات کے سروے کا حکم دیا ہے، جبکہ کانگریس نے متاثرہ کسانوں کو فوری طور پر معاوضہ دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ کانگریس نے کہا کہ جب تک سروے کی حتمی رپورٹ آئے گی بہت دیر ...

لوک سبھا انتخابات سے قبل بی ایس پی کو ایک اور جھٹکا! گڈو جمالی سماجوادی پارٹی میں شامل

لوک سبھا انتخابات سے پہلے بہوجن سماج پارٹی کو بڑا جھٹکا لگا ہے۔ بی ایس پی لیڈر اور اعظم گڑھ سے لوک سبھا انتخابات کے امیدوار رہے شاہ عالم عرف گڈو جمالی سماج وادی پارٹی میں شامل ہو گئے۔ جمالی کے ایس پی میں شامل ہونے پر سماج وادی پارٹی کے سربراہ اکھلیش یادو نے ان کا خیرمقدم کیا۔

حکومت فوج میں تقسیم پیدا کر رہی ہے، اگنی پتھ اسکیم کے حوالے سے ادھیر رنجن کا بی جے پی پر سخت حملہ

کانگریس کے رکن پارلیمنٹ ادھیر رنجن چودھری نے اگنی پتھ اسکیم کے حوالے سے مرکزی حکومت پر سخت حملہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ سابق آرمی چیف ایم ایم نروانے کی کتاب 'فور اسٹارس آف ڈیسٹینی' پر پابندی لگا دی گئی ہے۔ یہ کتاب اب بازار میں دستیاب نہیں ہے۔ سابق آرمی چیف نروانے نے اپنی کتاب ...