کسانوں کا احتجاج: دہلی کے سرحدی علاقوں میں دفعہ 144 نافذ، یوپی سے ٹریکٹروں کے لیے کوئی داخلہ نہیں

Source: S.O. News Service | Published on 11th February 2024, 10:16 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 11/فروری (ایس او نیوز/ایجنسی) ۱۳؍فروری کو کسانوں کے ایک اور احتجاج سے پہلے، دہلی پولیس نے اتوار کو سرحد پر فوجداری ضابطہ کی دفعہ ۱۴۴؍ نافذ کر دی ہے تاکہ کسی بھی ناخوشگوار واقعہ سے بچا جاسکے اور امن و امان کو برقرار رکھا جاسکے۔ دہلی پولیس نے اپنے ایک حکم میں کہا ہے کہ ’’اطلاع ملی ہے کہ کچھ کسان تنظیموں نے ایم ایس پی اور دیگر قانون کے اپنے مطالبات پورا کرنے کے لئے ۱۳؍فروری کو دہلی میں جمع ہونے اور مارچ کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے اپنے اعلان میں کہا ہے کہ وہ  اپنے مطالبات پورے ہونے تک دہلی کی سرحد پر بیٹھے رہیں گے۔ کسی بھی ناخوشگوار واقعہ سے بچنے اور امن و امان کو برقرار رکھنے کیلئے پولیس نے سیکشن ۱۴۴؍ کریمنل پروسیجر کوڈ، ۱۹۷۳کا قانون نافذ کیاہے جس کے مطابق عوامی اجتماع پر پابندی ہوگی۔‘‘

حکم نامے کے مطابق دہلی اور اتر پردیش کے درمیان تمام سرحدوں اور شمال مشرقی ضلع کے دائرہ اختیار والے علاقوں کے ساتھ ہی آس پاس کے علاقوں میں عوام کے جمع ہونے پر پابندی ہوگی۔ حکم کے مطابق ’’اتر پردیش سے دہلی میں مظاہرین کو لے جانے والے ٹریکٹروں، ٹرالیوں، بسوں، ٹرکوں، تجارتی گاڑیوں، ذاتی گاڑیوں، گھوڑوں وغیرہ پر داخل ہونے پر پابندی ہوگی۔ نارتھ ایسٹ ڈسٹرکٹ پولیس مظاہرین کو دہلی میں داخل ہونے سے روکنے کے لیے تمام تر کوششیں کریں گی ۔ کسی بھی شخص کو ہتھیار رکھنے کی اجازت نہیں ہوگی، بشمول آتشیں اسلحہ، تلوار، ترشول، نیزہ، لاٹھی، سلاخ وغیرہ۔ شمال مشرقی ضلع پولیس ان افراد کو موقع پر ہی حراست میں لے لے گی۔ اگر کوئی بھی شخص اس حکم کی خلاف ورزی کرتا ہوا پایا گیا تو اسے تعزیرات ہند ۱۸۶۰ءکی دفعہ ۱۸۸؍ کے تحت سزا دی جائے گی۔‘‘

منصوبہ بند `’’دہلی چلو‘‘مارچ سے قبل انبالہ، جند اور فتح آباد اضلاع میں پنجاب-ہریانہ کی سرحدوں کو سیل کرنے کیلئے بھی وسیع انتظامات کئے جارہے ہیں۔

کسان احتجاج کیوں کر رہے ہیں؟

کسان کم از کم امدادی قیمت (ایم ایس پی) کی ضمانت دینے والے قانون کا مطالبہ کر رہے ہیں، جو کہ انہوں نے۲۰۲۱ء میں منسوخ شدہ زرعی قوانین کے خلاف اپنا احتجاج واپس لینے پر رضامندی ظاہر کی تھی۔ وہ سوامی ناتھن کمیشن کی سفارشات پر عمل درآمد، کسانوں اور کھیت مزدوروں کیلئے پنشن، کھیت کے قرضوں کی معافی، پولیس کیس واپس لینے اور لکھیم پور کھیری تشدد کے متاثرین کیلئے ’انصاف‘ کا بھی مطالبہ کر رہے ہیں۔۲۰۲۰ءمیں پنجاب اور انبالہ  کے قریبی علاقوں سے بڑی تعداد میں کسان شمبھو بارڈر پر جمع ہوئے اور دہلی کی طرف مارچ کیلئے پولیس کی رکاوٹیں توڑ دیں۔ کسانوں نے، خاص طور پر پنجاب، ہریانہ اور اتر پردیش سے، دہلی کے سرحدی پوائنٹس - سنگھو، ٹکری اور غازی پور پر ۳؍زرعی م قوانین کے خلاف ایک سال تک طویل احتجاج کیا۔

ڈی سی پی سمر سنگھ پرتاپ نے کہا کہ’’اس سے پہلے، ہریانہ حکومت نے پنچکولہ میں دفعہ ۱۴۴؍ نافذ کی تھی، جس میں جلوس، مظاہروں اور ہتھیار لے جانے پر پابندی تھی۔ ہریانہ پولیس نے ٹریفک ایڈوائزری جاری کی ہے، جس میں مسافروں سے ۱۳؍فروری کو متوقع رکاوٹوں کی وجہ سے اہم سڑکوں پر سفر کو محدود کرنے کی اپیل کی گئی ہے۔ ممکنہ ٹریفک بھیڑ کو کم کرنے کیلئے چندی گڑھ اور دہلی کے درمیان سفر کرنے والے مسافروں کیلئے متبادل راستے تجویز کیے گئے ہیں۔افواہوں کو روکنے اور امن عامہ کو برقرار رکھنے کیلئے ہریانہ کے ۷؍ اضلاع میں موبائل انٹرنیٹ خدمات اور بلک ایس ایم ایس کو معطل کر دیا گیا ہے۔ ہریانہ کے ڈی جی پی اور انبالہ کے ایس پی سمیت سینئر پولیس حکام نے سیکوریٹی انتظامات کا جائزہ لینے کیلئے سرحدی علاقوں کا معائنہ کیا ہے۔ شمبھو سرحد پر کنکریٹ کی رکاوٹیں اور سڑکیں بند کر دی گئی ہیں، جبکہ گھگھر ندی کے کنارے کو کھود کر نقل و حرکت میں رکاوٹ ڈالی گئی ہے۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

وزیر تعلیم نے پیپر لیک سے کیا انکار تو کانگریس نے پیش کر دی فہرست، شمار کرائے 25 معاملات

پارلیمنٹ کے بجٹ اجلاس کے دوران اپوزیشن کی جانب سے نیٹ اور پیپر لیک کا معاملہ اٹھایا گیا، جس پر ایوان میں کافی ہنگامہ ہوا۔ اپوزیشن لیڈر راہل گاندھی نے یہ معاملہ اٹھاتے ہوئے وزیر تعلیم سے سوال کیا کہ وہ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے کیا کر رہے ہیں۔ اپوزیشن کے سوال اٹھانے پر وزیر ...

یوگی حکومت کو لگا بڑاجھٹکا، کانوڑ یاترا روٹ پر ’نام کی تختی‘ لگانے کے فیصلے پر سپریم کورٹ نے لگائی روک؛ اے پی سی آر کو ملی ایک اور کامیابی

سوسی ایشن فور پروٹیکشن آف سیول رائٹس (اے پی سی آر) سمیت دیگر ایڈوکیٹس کی جانب  سے سپریم کورٹ  کا دروازہ کھٹکنانے کے بعد عدالت عالیہ نے   یوگی حکومت   کے  مبینہ نفرت پھیلانے کے منصوبہ کو خاک میں ملادیا  اور اہم حکم جاری کرتے ہوئے اتر پردیش، اتراکھنڈ اور مدھیہ پردیش حکومت کی ...

بہار کو نہیں ملے گا خصوصی ریاست کا درجہ!، مودی حکومت کے فیصلے پر کانگریس اور آر جے ڈی حملہ آور

کانگریس نے اپنے آفیشیل ’ایکس‘ ہینڈل پر ایک پوسٹ شیئر کیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ مودی حکومت نے بہار کو خصوصی ریاست کا درجہ نہ دینے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ ویڈیو کی شکل میں کیے گئے اس پوسٹ میں بتایا گیا ہے کہ بہار کی عوام لگاتار خصوصی ریاست کا درجہ دیے جانے کا مطالبہ کر رہے ہیں، ...

کالج پاس کرنے والے نصف طلبا کے پاس روزگار کے لیے ضروری اہلیت موجود نہیں، معاشی سروے میں انکشاف

مرکزی حکومت نے 2024 کا معاشی سروے جاری کیا ہے جس میں کئی اہم باتیں نکل کر سامنے آئی ہیں۔ اس معاشی سروے کے مطابق ہندوستان کی تیزی سے بڑھتی آبادی کا 65 فیصد 35 سال سے کم عمر کا ہے، لیکن ان میں سے کئی لوگوں کے پاس جدید معاشی نظام میں کام کرنے کے لیے ضروری ہنر موجود نہیں ہے۔ اندازہ ظاہر ...

لکھیم پور کھیری تشدد معاملہ: سپریم کورٹ نے آشیش مشرا کو دی مشروط ضمانت

سپریم کورٹ نے پیر  کو سابق مرکزی وزیر مملکت برائے داخلہ اجے مشرا ٹینی کے بیٹے آشیش مشرا کو دی گئی عبوری ضمانت کو باقاعدہ مشروط ضمانت میں تبدیل کر دیا ہے۔ آشیش مشرا کو 2021 کے لکھیم پور کھیری تشدد معاملے میں ضمانت دی گئی تھی۔ سپریم کورٹ نے مشرا کو باقاعدہ ضمانت دیتے ہوئے عبوری ...