کاروار کے سمندر میں لگا ہوا 'رڈار' بھی چوروں کے ہاتھ سے بچ نہ سکا !

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 26th February 2024, 12:11 AM | ساحلی خبریں |

کاروار 25/ فروری (ایس او نیوز) زمین پر سے قیمتی مشینیں چرانے والوں نے اب سمندر میں اپنے ہاتھ کی صفائی دکھانا شروع کیا ہے جس کی تازہ ترین مثال ماحولیاتی تبدیلیوں کے سگنل فراہم کرنے کے لئے کاروار کے علاقے میں بحیرہ عرب میں لگائے گئے 'رڈار' کی چوری ہے ۔

کنڑا میڈیا میں چھپی رپورٹ کے مطابق  گردابی طوفان، ہواوں کی رفتار، برسات کے امکانات وغیرہ کے سلسلے میں سگنل فراہم کرتے ہوئے پیشین گوئی کرنے والا یہ رڈار سسٹم ، انڈین نیشنل  میری ٹائم انفارمشین سینٹر کی جانب سے ماحولیاتی مطالعہ کے مقصد سے کاروار میں موجود کرناٹکا یونیورسٹی کے ڈپارٹمنٹ آف مرین بایولوجی کو فراہم کیا گیا تھا ۔نیدرلینڈ کی جدید ترین ٹیکنالوجی سے بنایا گیا یہ رڈار کروڑوں روپے کی لاگت والا تھا اور  اسے کاروار بحری اڈے کے علاقے میں بحیرہ عرب میں لگایا گیا تھا ۔ 

 رڈار کی دیکھ بھال کرنے کے ذمہ دار جگن ناتھ راتھوڑ کا کہنا ہے کہ اگر تیز ہواوں کی وجہ سے اس رڈار سے لگی ہوئی ڈوری کٹ جانے پر بھی اسے سمندر میں بہتے ہوئے منگلورو کی طرف جانا چاہیے تھا ۔ لیکن اب جی پی ایس میں اس کا لوکیشن مہاراشٹرا کے رتناگیری سے باہر والے علاقے میں دکھایا جا رہا ہے ۔ اس وجہ سے شبہ ہو رہا ہے کہ  کسی نے اس کو چرا لیا ہے ۔ اس تعلق سے نیوی، کوسٹ گارڈ اور مقامی پولیس کو اطلاع دی گئی ہے ۔ اس کے علاوہ ریلائنس فاونڈیشن کی طرف سے اس کی تلاشی مہم چلائی جا رہی ہے ۔ 

    ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر کسی نے اسے چرایا بھی ہے تو یہ کسی کے کام کا نہیں ہے ۔ بس اسے لوہے کے کباڑ کی شکل میں ہی فروخت کیا جا سکتا ہے ۔ البتہ اس پر شکوک و شبہات ظاہر کیے جا رہے ہیں کہ آخر پوری طرح سیکیوریٹی والے بحری اڈے کے علاقے میں جب یہ رڈار استعمال کیا جا رہا تھا تو اسے چرانا کیسے ممکن ہوا ہوگا ؟ کیا یہ بحری اڈے کی سلامتی اور سیکیوریٹی پر سوالیہ نشان نہیں ہے ؟

ایک نظر اس پر بھی

ماہی گیر تنظیموں کا متفقہ فیصلہ - کاسرکوڈ میں تجارتی بندرگاہ کے خلاف ہوگی قانونی جد و جہد

) شہر کے سینٹ جوزیف ہال میں ماہی گیر تنظیموں کی جوائنٹ ایکشن کمیٹی اور کراولی ماہی گیر مزدوروں کی تنظیم کا مشترکہ اجلاس منعقد ہوا جس میں کاسرکوڈ میں مجوزہ نجی تجارتی بندرگاہ کی تعمیر کے خلاف تنظیمی اور قانونی طریقے سے جد وجہد کرنے کا فیصلہ کیا گیا ۔

بھٹکل میں ووٹر بیداری مہم؛ سرکاری افسران نے طلبہ کے ساتھ نکالی ریلی؛ سو فیصد ووٹنگ کویقینی بنانے کی کوششیں

بھٹکل میں  صد فیصد ووٹنگ کا ٹارگٹ لے کر   اُترکنڑاضلعی انتظامیہ،  ضلع پنچایت، بھٹکل تعلقہ انتظامیہ اور تعلقہ پنچایت کے زیراہتمام  بھٹکل کے سرکاری آفسران  نے کالج طلبہ کو ساتھ لے کر  ووٹنگ بیداری مہم  کے تحت شاندار ریلی نکالی اور عوام پر زور دیا کہ وہ  کسی بھی صورت میں اپنی ...

بھٹکل میں مسلم رپورٹروں کی طرف سے غیر مسلم رپورٹروں کوپیش کی گئی عید الفطر کی مٹھائیاں

ورکنگ جرنلسٹ اسوسی ایشن   بھٹکل  کے مسلم رپورٹروں کی طرف سے بھٹکل کے غیر مسلم رپورٹروں کو عید الفطر کی مناسبت سے مٹھائیاں تقسیم کی گئیں اور اُنہیں عید کے تعلق سے  معلومات فراہم کی گئیں۔