وڈودرا پولیس نے پیش کی انسانیت کی مثال، تھانے میں نابالغ بچے کی کر رہی پرورش

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 14th August 2019, 10:01 PM | ملکی خبریں |

دڑودرا،14اگست(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) وڈودرا پولیس نے انسانیت کی مثال پیش کی ہے۔ہمیشہ قانون کے دائرے میں رہنے والے وردی والو کا انسانی چہرہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔دراصل وڈودرا میں ایک شوہر نے اپنی بیوی کا قتل کر دیا اور پھر وڈودرا پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ملزم شخص کو گرفتار کر کے جیل میں ڈال دیا۔لیکن ان کا 12 سال کا نابالغ بھاویش، ماں کے قتل اور باپ کے جیل جانے سے تنہا ہو گیا۔اس کو دیکھتے ہوئے وڈودرا پولیس نے انسانیت کے ناطے کو اپنے ساتھ ہی رکھا اور پولیس تھانے میں ہی بچے کے لئے ایک بستر لگا دیا،اب پولیس انسانیت کے ناطے بچے کی دیکھ بھال تھانے میں ہی کر رہی ہے۔دراصل ڈیڑھ سال پہلے بھاویش کی ماں کا قتل ہو گیا تھا۔پولیس نے جب معاملے کی جانچ کی تب پتہ چلا کی بھاویش کے والد نے ہی اپنی بیوی کو قتل کیا ہے۔اس کے بعد پولیس نے فوری طور پر ملزم کو حراست میں لے لیا لیکن وڈودرا پولیس کے اوپر ہی اس کے بچے بھاویش کی ذمہ داری آ گئی۔

وڈودرا پولیس کے ایس پی ایس جی پاٹل نے تھانے میں ہی اپنے چیمبر کے سوا کمرے میں بھاویش کے سونے کے لئے ایک بستر لگوا دیا۔وہیں بچے کی تعلیم پر کوئی اثر نہ ہو اس لئے کتابوں کا بھی انتظام کر دیا،ساتھ ہی بھاویش کے کھانے پینے کا بھی انتظام کر دیا۔دیکھتے ہی دیکھتے آٹھویں کلاس میں پڑھائی کرنے والا بھاویش وڈودرا پولیس کا لاڈلا بن گیا،جہاں ایک خاتون پولیس اہلکار بھاویش کے لئے گھر سے ناشتہ بنا کر لاتی ہے، وہیں پولیس کے جوان بھاویش اسکول کو چھوڑنے لینے جاتے ہیں۔24 گھنٹے لوگوں کی حفاظت میں مستعد رہنے والی پولیس کا یہ چہرا سب کو پسند آ رہا ہے۔اب بھاویش کے لئے تھانہ ہی گھر بن گیا ہے،جہاں پر بھاویش کے چہرے پر ہنسی لانے کے لئے وڈودرا پولیس اپنے کام سے تھوڑا وقت بھی نکالتی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی