ضلع اترکنڑا کے قحط زدہ تعلقہ جات میں بھٹکل بھی شامل؛ کم بارش سے فصلوں پر سنگین اثرات مرتب ہونے کا خدشہ

Source: S.O. News Service | Published on 2nd January 2019, 3:26 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل 2/جنوری  (ایس او نیوز) ضلع اُترکنڑا کے پانچ قحط زدہ تعلقہ جات میں بھٹکل کا بھی نام شامل ہے جس پر عوام میں تشویش پائی جارہی ہے۔ جس طرح  ملک بھر میں سب سے زیادہ بارش چراپونجی میں ہوتی ہے، اسی طرح بھٹکل کو ضلع اُترکنڑا کا چراپونچی کہا جاتا ہے، مگر اس علاقہ میں بھی  بارش کم ہونے سے بالخصوص کسان برادری میں سخت مایوسی پائی جارہی ہے۔

 سال 2018 کے ابتدائی ایام  میں جس طرح مسلسل بارش برسنے لگی تھی تو ایک مرحلے میں  ایسا لگ رہا تھا کہ کہیں شہر  ڈوب تو نہیں جائے گا لیکن صرف تین مہینوں میں ہی بارش کا موسم کیسے ختم ہوگیا، پتہ ہی نہیں چلا۔ گرم دھوپ سے جلتے بھٹکل کا شمار  آج سرکاری سطح پر قحط زدہ تعلقہ جات میں کیاگیا ہے۔

بھٹکل میں عام طورپر ہرسال 4172 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی جاتی ہے۔ بارش کا موسم شروع ہوتے ہی 4000ملی میٹر تک کی  بارش بغیر کسی رکاوٹ کے درج ہوتی رہی ہے۔ کم بارش کے دوران بھی بھٹکل میں لگاتار بارش ہوتی رہی ہے۔ سال 2017کی بات کریں  تو عوامی سطح پر بارش کی قلت کہے جانے کے باوجود 3903.4 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی تھی ۔ مگر سال 2018میں ڈسمبر کے آخر تک صرف 3303.5 ملی میٹر بارش ہی درج کی گئی ہے۔ جس کے نتیجے میں ندی، نالوں کے کناروں پر کسان اپنی فصلوں کو  کاٹنے کو لے کر پس وپیش میں مبتلا ہیں۔  دھان، مونگ پھلی وغیرہ کی فصلوں پر اس کے سنگین اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ تعلقہ کے مٹھلی ، ہاڈولی سمیت ندی نالوں کے کناروں پر بسے عوام کو ہی تھوڑی بہت  امید ہے کہ اُن کی فصل خراب نہیں ہوگی کیونکہ وہ ندی اور نالوں کے ذریعے فصلوں کو پانی پہنچاسکیں گے۔مگر  بقیہ مقامات پر کسان زرعی سرگرمیوں سے دورہوگئے  ہیں۔  ترکاری کی پیداوار کرنے والے کسان بھی آج پانی کے لئے  ترس رہے  ہیں۔

ربیع کی فصل کا نقصان : بھٹکل میں قریب 3500کسان مانسون پر انحصار کرتے ہیں تو 570کسان ربیع کے موسم پر بھروسہ کرتے ہوئے اپنی زراعتی سرگرمیاں شروع  کرتے ہیں۔ امسال زرعی سرگرمیوں میں مصروف ہونےو الے کسانوں کی تعداد بہت زیادہ گھٹ گئی ہے۔ جس کے نتیجے میں 360ہیکٹر زرعی زمین  پر اگائی جانے والی دھان کی فصل سمٹ کر 260 ہیکٹر ہوگئی ہے۔  خاص کر مونگ پھلی کو ربیع کابڑا اثر ہواہے۔ 500ہیکٹر زرعی زمین کی مونگ پھلی کی فصل اب صڑف  315 ہیکٹر زمین تک سکڑ گئی ہے۔ پہلے ربیع موسم کے بھروسے قریب 60 ہیکٹر زمین پر مونگ، ہلدی وغیرہ بوئی جاتی تھی اب صرف 37 ہیکٹر زمین پر بوئی جارہی ہے۔ ایک طرف مچھلیوں کی قلت، دوسری طرف سعودی عرب سے خالی لوٹتے روزگار،اب اس درمیان کسانوں کی مایوسی سے بھٹکل کو شدید نقصان پہنچا ہے۔ جس کے اثرات بھٹکل کے سماجی حالات پر ہونے سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔

معاوضہ کا استعمال ہو:  حکومت نےبھٹکل کو  قحط زدہ علاقوں کی فہرست میں تو درج کیا ہے ۔ مگر اس زمرے میں ملنے والی امداد کے صحیح استعمال پر عوام میں شبہات پائے جارہے ہیں۔ قحط زدہ علاقوں کوفراہم کئے جانے والی امداد کے غلط استعمال کا الزام بہت پہلے  سے لگایاجاتارہاہے۔ پانی کی طرح بہہ کر آنے والی رقم تالاب اور نالے کی ترقی کے نام پر غائب نہیں ہونی چاہئے ،بلکہ عوام نے جو امیدیں وابستہ کررکھی ہیں اور  مستقبل کو لےکر کسان جس طرح فکر مند ہیں ان کو  ایک حد تک مطمئن کرنے کے لئے ہی سہی امداد فراہم کی جانی چاہئے،تاکہ  کسان  زراعتی سرگرمیاں آج نہیں تو کل جاری رکھ سکیں اور اُن کا حوصلہ ٹوٹنے نہ پائے ۔

بھٹکل کے معاون زرعی ڈائرکٹر مدھوکر نائک کاکہنا ہے کہ اترکنڑا ضلع میں قرار دئیے گئے 5قحط زدہ تعلقہ جات میں بھٹکل بھی شامل ہے۔ امسال مانسون بہتر ہونے سے کوئی مسئلہ پیدا نہیں ہوا۔ مگر ربیع کی بارش نہ ہونے سے کافی نقصان ہواہے۔ لگاتار 4ہفتوں تک بارش نہیں ہو نے سے ماحول  خشک ہوگیا ہے۔ 

خیال رہے کہ  ضلع اُترکنڑا کے جن پانچ تعلقوں کو قحط زدہ علاقے  قرار دئے گئے ہیں اُن میں بھٹکل کے ساتھ ساتھ کاروار، یلاپور، منڈگوڈ اور ہلیال شامل ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل تعلقہ کے دوپنچایتوں کے جھگڑےمیں  مٹدہتلو اور مرڈیشور کا راستہ یتیم : عوامی نمائندوں پر عوام کی نظر

بھٹکل تعلقہ مرڈیشور کے ماولی -2 اور کائی کنی گرام پنچایتوں کی سرحد کی پیچیدگیوں چلتے مٹدہتلو اور مرڈیشور کے درمیان والی سڑک کا ایک ٹکڑا  یتیم ہوکر راہ گیروں اور بائک سواروں کے لئے مشکلات پیدا کئے ہوئے ہے۔

آئی ایم اے کیس کی ایس آئی ٹی جانچ تقریباً مکمل، 9ستمبر کو چارج شیٹ ممکن

کروڑوں روپے کے آئی ایم اے فراڈ کیس کی جانچ میں لگی ریاستی پولیس کی خصوصی تحقیقاتی ٹیم(ایس آئی ٹی) اس معاملے میں 9ستمبر کو چارج شیٹ دائر کرنے کی تیاری میں لگی ہے تو دوسری طرف اس کیس کی جانچ ابھی ابھی اپنے ماتحت لینے والی مرکزی تحقیقاتی ایجنسی سی بی آئی کی طرف سے اس کیس میں ایک سابق ...

ایڈی یورپا کو پارٹی ہائی کمان کی تنبیہ۔ وزارتی قلمدان تقسیم کرو یا پھر اسمبلی تحلیل کرو

عتبر ذرائع سے ملنے والی خبر کے مطابق بی جے پی ہائی کمان نے وزیراعلیٰ کرناٹکا ایڈی یورپا کو تنبیہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزارتی قملدانوں سے متعلق الجھن اور وزارت سے محروم اراکین اسمبلی کے خلفشار کو جلد سے جلد دور کرلیں ورنہ پھر اسمبلی کو تحلیل کرتے ہوئے از سرِ نو انتخابات کا سامنا ...

اے پی سی آر نے داخل کی انسداددہشت گردی قانون میں ترمیم کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیل

مرکزی حکومت نے انسداد دہشت گردی قانون یو اے پی اے میں جو حالیہ ترمیم کی ہے اور کسی بھی فرد کو محض شبہات کی بنیاد پر دہشت گرد قرار دینے کے لئے تحقیقاتی ایجنسیوں کو جو کھلی چھوٹ دی ہے اسے چیلنج کرتے ہوئے ایسوسی ایشن فار  پروٹیکشن آف سوِل رائٹس (اے پی سی آر) نے سپریم کورٹ میں اپیل ...

بھٹکل میں بارش کی وجہ سے 50ایکڑ سے زائد زرعی زمین برباد : دھان کی فصل پانی میں بہہ گئی

تعلقہ میں  سیلاب کے کم ہونے کے بعد بارش سےہونے والے نقصانات ظاہر ہونےلگے ہیں۔ موسلا دھار بارش اور طوفانی ہواؤں سے گرنے والے گھروں کی مرمت و درستی ایک طرف تو  کیچڑ میں تبدیل ہوئی زرعی زمین اور فصل کی بربادی دوسری دکھ بھری کہانی سنارہی ہیں۔

بھٹکل چوتنی ندی کنارے بسنے والوں کی زندگی پرمنڈلاتا سیلاب کا خطرہ۔ پانچ دہائیوں کے بعد بھی نہیں ملا چھٹکارا

امسال برسنے والی تیز بارش نے  پورے ساحلی کنارے اور شمالی کرناٹکا کے مختلف علاقوں میں سیلاب سے جس طرح  تباہی مچائی ہے، ویسی طغیانی تو بھٹکل کی مشہور شرابی ندی میں دیکھنے کو نہیں ملی، مگر موڈ بھٹکل سے شروع ہونے والی اس ندی کے راستے میں چوتنی تک کنارے کنارے بسنے والوں کی زندگی پر ...

این آر سی کے تعلق سے غلط بیانی اور عوام کو خوف زدہ کرنے کا سلسلہ بند کیا جائے! ..... محمد برہان الدین قاسمی

 سوشل میڈیا پر کچھ لوگ این آر سی کے حوالے سے تبصرہ کررہے ہیں۔ اسی طرح کی ایک دس منٹ چوتیس سیکنڈ کا صوتی کلپ وہاٹس ایپ پر گردش کررہاہے جو السلام علیکم کے بعد "کیسے ہیں آپ لوگ..." سے شروع ہوتا ہے اور "مجھے لگا کہ اپنی بات شیئر کر دوں" پر ختم ہوتا ہے۔ اس میں کہاگیاہے کہ این آر سی کے ...

بھٹکل میں ختم نہیں ہورہا ہے آدھار کارڈ کا مسئلہ۔ عوام کی دشواریوں کی کسی کو بھی فکر نہیں 

نیا آدھار کارڈ بنانے یا پہلے سے موجود کارڈ میں کوئی ترمیم یا اپڈیٹ کرنے کے لئے بھٹکل کے عوام کو جس قسم کی پریشانی لاحق ہے اس کو کئی مرتبہ میڈیا میں پیش کیاگیا۔ منتخب عوامی نمائندوں اور سرکاری افسران کے علم میں بات لائی گئی، مگر تاحال اس کا کوئی بھی حل نہیں نکلا ہے۔ اور عوام ...

ضلع شمالی کینرا میں کس کو ملے گی وزارت؟ اسپیکر نے رد کردی ہے ہیبار کی رکنیت۔کیا ایڈی یورپاکے دل میں نہیں ہے کاگیری کی اہمیت ؟

ایڈی یورپا کی قیادت میں بی جے پی نے ریاستی اسمبلی نے اعتماد کا ووٹ جیت لیاہے اوراب اگلا مرحلہ وزارتی قلمدانوں کی تقسیم کا ہے۔ جس کے بارے میں خود بی جے پی خیمے ہلچل اور جوڑ توڑکی کوششیں یقینی ہیں۔