اناؤ عصمت دری متاثرہ کے اہل خانہ کا سخت مطالبہ:ان کی بدنصیب بیٹی کو بھی ’حیدرآباد والا انصاف‘ چاہیے: اہل خانہ

Source: S.O. News Service | Published on 7th December 2019, 11:15 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی7دسمبر(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) زندہ جلا دی گئی اناؤ عصمت دری متاثرہ نے جمعہ دیر شب صفدر جنگ اسپتال میں دم توڑ دیا،جس  کے بعد سے ملک میں دکھ اور غصے کی لہر دوڑ گئی ہے۔اناؤ متاثرہ کی خاندان کے ارکان نے بھی اپنی بیٹی کو حیدرآباد عصمت دری متاثرہ کی طرح انصاف کا مطالبہ کردیا ہے۔ خیال رہے کہ حیدرآباد عصمت دری کیس کے چاروں ملزمان پولیس کے ساتھ تصادم میں مارے گئے۔جہاں ایک طرف یوگی حکومت متاثرہ کو مناسب تحفظ فراہم نہ کرنے پر اپوزیشن کے نشانے پر ہے، وہیں ریاست کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے قصورواروں کو جلد سے جلد سزا دلانے کی یقین دہانی کرائی ہے۔پوسٹ مارٹم کئے جانے کے بعد متاثرہ کی لاش ایمبولینس میں سڑک کے راستے اناؤ کے بہار علاقہ واقع اس کے گھر لے جائی جارہی ہے۔ متاثرہ کے بھائی نے ہفتہ کو کہا کہ اس کی بہن کو اس وقت انصاف ملے گا،جب اس کے ساتھ ظلم کرنے والے ان تمام ملزمان کا بھی وہی حشر ہو جو اس کی مہلوک بہن نے جھیلاہے۔ یعنی اسے بھی زندہ آگ کے حوالے کردیا جائے۔ انہوں نے صحافیوں سے کہا کہ:’اس نے مجھ سے منت کی کہ بھائی مجھے بچا لو،میں بہت دکھی ہوں کہ میں ا پنی غم نصیب بہن کو بچا نہیں سکا‘۔ہم یہاں سے بہار (اناؤ) جائیں گے، ملزمان نے پہلے ہی اسے جلا دیا ہے اور اب ہم اسے پیوند ِ خاک کریں گے۔زندگی کی جنگ ہار چکی متاثرہ کے بے حال والد نے انصاف اور سرکاری مدد ملنے کے سوال پر کہا کہ:’مجھے روپیہ-پیسہ مکان کچھ نہیں چاہیے، مجھے اس کا لالچ نہیں ہے، مگر جس نے میری بیٹی کی یہ حالت کی ہے، اسے حیدرآباد کیس کی طرح ہی دوڑا کر گولی مار دینی چاہیے یا پھر اسے بغیر تاخیر پھانسی دی جانی چاہیے۔کاروائی کی یقین دہانی کرتے ہوئے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے افسوس ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ مقدمے کو فاسٹ ٹریک کورٹ میں چلا کر مجرموں کو سخت سزا دلائی جائے گی۔حکومت کے ایک ترجمان نے کہا کہ:’وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے اناؤ متاثرہ کے سلسلے میں کہا کہ یہ سانحہ بہت ہی بدقسمتی کی بات ہے، اس کی موت انتہائی افسوسناک ہے۔ ان کی طرف سے خاندان کے تئیں تعزیت کا اظہار کیا گیا۔واضح ہو کہ تمام مجرمین کو پولیس گرفتار کرچکی ہے۔ معاملہ کوفاسٹ ٹریک کورٹ میں لے جا کر سخت سزا دلائیں گے۔کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی متاثرہ کی موت کے بعد اس کے لواحقین سے ملاقات کرنے کے لئے لکھنؤ سے روانہ ہو گئی ہیں۔پرینکا نے ٹویٹ کیا کہ خدا سے ”پرارتھنا“ کرتی ہوں کہ وہ اناؤ متاثرہ کے خاندان کو دکھ کی اس گھڑی میں ہمت دے۔انہوں نے کہا کہ یہ ہم سب کی ناکامی ہے کہ ہم اس انصاف نہیں دے سکے۔ سماجی طور پر ہم سب مجرم ہیں لیکن یہ اتر پردیش میں کھوکھلے لاء اینڈ آرڈر کی بھی تصویر پیش کرتا ہے۔ دریں اثنا سماج وادی پارٹی کے سربراہ اور سابق وزیراعلیٰ اکھلیش یادو اسمبلی کے صدر  دروازے کے سامنے ہفتہ کو دھرنے پر بیٹھ گئے۔انہوں نے نامہ نگاروں سے بات چیت میں اس دردناک واقعہ کے لئے ریاست کی یوگی آدتیہ ناتھ حکومت کو ذمہ دار ٹھہرایا اور اعلان کیا کہ اس واقعہ کے خلاف اتوار کو سماج وادی پارٹی صوبہ کے تمام ضلع ہیڈکوارٹر پر تعزیتی نشست منعقد کرے گی۔بہوجن سماج پارٹی کی سربراہ مایاوتی نے متاثرہ کی موت کے بعد سخت رد عمل کرتے ہوئے ٹویٹ کیا کہ:’جس اناؤ عصمت دری متاثرہ کو جلاکر مارنے کی کوشش کی گئی، اس کی کل رات دہلی میں ہوئی دردناک موت انتہائی تکلیف دہ ہے۔ اس دکھ کی گھڑی میں بی ایس پی متاثرہ خاندان کے ساتھ ہے۔ کانگریس کی پارٹی کے ترجمان سپریاشری نیت نے یوگی حکومت پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ اناؤ کی بیٹی کے ساتھ جو ہوا وہ اس بات کا واضح اشارہ ہے کہ یوپی میں مجرموں کے حوصلے بلند ہیں، انہیں کہیں نہ کہیں سیاسی سرپرستی بھی حاصل ہے اور یہی وجہ ہے ایسے واقعات رونما ہورہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ:’وزیر اعلی کہتے ہیں کہ انہیں دکھ اور افسوس ہے، ان کے اس دکھ اور افسوس میں ان کی حکومت کی ناکامی نظر آتی ہے۔مغربی بنگال کی وزیر اعلی ممتا بنرجی نے کہا کہ یہ المناک سانحہ ہے اور بربریت کی کوئی حد ہی نہیں رہ گئی ہے۔ وہیں عصمت دری کے قصورواروں کو چھ ماہ کے اندر پھانسی کی سزا دینے کی مانگ کو لے کر تین دسمبر سے دہلی میں غیر معینہ بھوک ہڑتال پر بیٹھیں سواتی مالی وال نے کہا کہ میں یوپی اور مرکزی حکومت سے اپیل کرتی ہوں کہ معاملے پر فوری کارروائی کرے اور یقین دہانی کرائے کہ قصورواروں کو ایک ماہ کے اندر پھانسی کی سزا دی جائے گی۔غور طلب ہے کہ اناؤ ضلع کے بہار تھانہ علاقہ کے ایک گاؤں کی رہنے والی عصمت دری متاثرہ کو جمعرات کی صبح عصمت دری کے ملزمان سمیت پانچ لوگوں نے آگ کے حوالے کر دیا تھا۔  90 فیصد تک جھلس چکی نوجوان عورت ایئر ایمبولینس کے ذریعے دہلی لایا گیا تھا اور وہاں ہسپتال میں داخل کرایا گیا تھا جہاں جمعہ دیرشب 11 بج کر 40 منٹ پردم توڑ دیا۔ 

ایک نظر اس پر بھی

سی اے اے کے خلاف تمام اپوزیشن جماعتوں کو ایک پلیٹ فارم پر آنے کی ضرورت: پی چدمبرم

  این پی آر کی موجودہ شکل کو ناقابل قبول بتاتے ہوئے سابق مرکزی وزیر پی چدمبرم نے کہا کہ کانگریس پارٹی اس کو قبول نہیں کرے گی ۔انہوں نے شہریت ترمیمی ایکٹ ،این آر سی اور این پی آر کے خلاف تمام اپوزیشن جماعتوں کو متحد ہوکر اس کی مخالفت کرنی چاہیے۔

دہلی: کانگریس کی 54 امیدواروں کی فہرست جاری

کانگریس نے دہلی کی 70 ارکان پر مشتمل اسمبلی کے انتخابات کےلئے 54 امیدواروں کی پہلی فہرست سنیچر کو جاری کی جس میں سینئر لیڈر کرشنا تیرتھ، راجیش لیلوتیا، ہارون یوسف، ڈاکٹر نریندر ناتھ اور اروند سنگھ لولی سمیت کئی اہم لیڈر شامل ہیں۔ کانگریس انتخابی کمیٹی کے سربراہ مکل واسنک نے ...

کیجریوال نے کروڑوں روپے لیکر ٹکٹ فروخت کیا: آدرش شاستری

سابق وزیر اعظم لال بہادر شاستری کے پوتے اور دوارکا سے عام آدمی پارٹی (عآپ) کے رکن اسمبلی آدرش شاستری نے ہفتہ کے روز وزیر اعلی اروند کیجریوال پر 10 سے 20 کروڑ روپے لیکر دہلی اسمبلی انتخابات کے ٹکٹ فروخت کرنے کا سنگین الزام عائد کیا ہے۔

  اتر پردیش میں 10 آئی پی ایس افسران کے تبادلے

 اتر پردیش حکومت نے سنیچر کو انڈین پولیس سروس (آئی پی ایس) کے دس افسران کا تبادلہ کر دیا۔ سرکاری ذرائع کے مطابق پی اے سی مرادآباد میں ڈپٹی انسپکٹر جنرل آف پولیس ایس سی دوبے کو اعظم گڑھ (رینج) کا ڈپٹی انسپکٹر جنرل آف پولیس بنایا گیا ہے جبکہ اعظم گڑھ کے موجود ڈی آئی جی جے ...

نربھیا کیس: مجرم پون کا دفاع کرنے والے وکیل برے پھنسے، بار کونسل نے بھیجا نوٹس

نربھیا کیس میں قصواروں کے وکیل اے پی سنگھ کو دہلی کی بار کونسل نے نوٹس جاری کیا ہے۔ اتنا ہی نہیں، بار کونسل نے ان سے دو ہفتے کے اندر جواب بھی طلب کیا ہے۔ قابل ذکر ہے کہ ہائی کورٹ نے حال ہی میں دہلی بار کونسل سے اے پی سنگھ کے خلاف کارروائی کرنے کو کہا تھا۔ ساتھ ہی ان کے اوپر 25 ہزار ...

60 کروڑ آدھار نمبر پہلے ہی این پی آرسے جوڑے جا چکے ہیں

اس وقت اس بات کو لے کر تنازعہ چل رہا ہے کہ این پی آر کو آدھار کے ساتھ جوڑا جائے گا یا نہیں۔ کئی میڈیا رپورٹس میں یہ بتایا گیا ہے کہ این پی آر کو آدھار نمبر کے ساتھ جوڑا جائے گا۔ لیکن وزارت داخلہ کا یہ کہنا ہے کہ کسی بھی شخص کو کوئی بھی دستاویز دینے کو مجبور نہیں کیا جائے گا۔