کانگریس کا چنتن شیور: ’اُدے پور سے طلوع ہوگا ملک کی امیدوں کا سورج‘

Source: S.O. News Service | Published on 12th May 2022, 10:28 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،12؍مئی (ایس او نیوز؍ایجنسی) راجستھان کے شہر اُدے پور میں کانگریس کی جانب سے ’چنتن شیور‘ کا انعقاد کیا جا رہا ہے۔ اس شیور (کیمپ) کے تعلق سے بات کرتے ہوئے کانگریس کے قومی جنرل سکریٹری رندیپ سنگھ سرجے والا نے کہا کہ ادے پور سے امیدوں کا سورج طلوع ہوگا۔ کانگریس کا کہنا ہے کہ آج جب ملک جمہوری، معاشی اور سماجی تبدیلی کے دور سے گزر رہا ہے تو ہندوستان کی آزادی کے بطن سے جنم لینے والی ’انڈین نیشنل کانگریس‘ ایک بار پھر ملک کو ترقی اور خوشحالی کی راہ پر لانے کے لئے نئے عزائم پر غور و فکر کرے گی۔ سورجے والا نے کہا کہ ملک کی توقعات کے مطابق کانگریس پارٹی آئندہ 13، 14 اور 15 مئی 2022 کو ادے پور میں خود پر غور و خوض اور خود کا معائنہ کرے گی۔

نئے عزائم پر غور و فکر کی ضرورت کیوں ہے؟

ملک میں بڑھتی ہوئی معاشی عدم مساوات کی وجہ سے 142 امیر ترین لوگوں کی دولت میں ایک سال میں 30 لاکھ کروڑ روپے کا اضافہ ہوا، لیکن ملک کے 84 فیصد گھرانوں کی آمدنی میں کمی آئی۔ ہر کھاتہ میں 15 لاکھ روپے آنا تو دور کی بات، بچت کی رقم بھی لوٹ لی گئی۔ گرتی ہوئی معیشت کی وجہ سے امریکی ڈالر کے مقابلے میں ہمارے روپے کی قدر 77.56 تک گر گئی ہے جو 75 سالوں میں سب سے بڑی گراوٹ ہے۔ دوسری طرف ملک کا قرض 2014 میں 55 لاکھ کروڑ روپے سے بڑھ کر 2022 میں 135 لاکھ کروڑ روپے ہو گیا ہے۔ مودی حکومت روزانہ 4000 کروڑ روپے کا قرض لیتی ہے۔ اب حالت یہ ہے کہ ملک کے ہر شہری پر 100000 روپے کا قرض ہے۔

مہنگائی نے عام لوگوں کی زندگی کو جہنم بنا دیا ہے۔ سال 2014 میں 410 روپے میں دستیاب ہونے والا ایل پی جی سلنڈر اب 1000 روپے کا ہو گیا ہے، پٹرول 71 روپے فی لیٹر تھا، آج 105.41 روپے فی لیٹر ہے۔ ڈیزل 56 روپے فی لیٹر تھا، آج یہ 95.87 روپے فی لیٹر ہے۔ صرف پٹرول اور ڈیزل پر ٹیکس لگا کر مودی حکومت نے 27 لاکھ کروڑ روپے کمائے، لیکن عوام کو کیا ملا؟ یہی حال آٹا، دال، خوردنی تیل، سبزیوں، صابن، ٹوتھ پیسٹ، ٹی وی، فریج اور روزانہ کی ضرورت کی ہر چیز کا ہے۔

ملک میں بے روزگاری کی شرح 8 فیصد سے زیادہ ہے۔ حکومت ہند، سرکاری اداروں اور صوبائی حکومتوں میں 30 لاکھ سے زیادہ عہدے خالی ہیں۔ فوج میں 255000 آسامیاں خالی ہیں۔ پرائیویٹ سیکٹر میں انتہائی چھوٹی اور چھوٹی صنعتیں تالابندی کے دہانے پر ہیں۔ ہر سال 2 کروڑ نوکریاں دینا تو دور کی بات، کروڑوں نوکریاں ختم ہوگئیں۔

کسان اور کاشتکاری کو پرائیویٹ کمپنیوں کے حوالے کرنے کی سازش جاری ہے۔ پہلی بار، زراعت پر جی ایس ٹی عائد کیا گیا، کھاد ہو، ٹریکٹر اور کاشتکاری کے آلات ہوں، جراثیم کش ہوں، سب کے داموں میں اضافہ ہو رہا ہے۔ سبسڈی میں کمی کی جا رہی ہے اور ڈی اے پی اور یوریا کی قیمتیں آسمان کو چھو رہی ہیں۔ ایم ایس پی گارنٹی قانون پر کوئی بحث نہیں۔ منریگا کے بجٹ میں کٹوتی کی گئی ہے۔ سال 2022 تک کسان کی آمدنی دوگنی کرنا تو دور کی بات، پیداوار کی قیمت بھی نہیں مل رہی ہے۔

دلت اور آدیواسی سب پلان ختم کر دیئے گئے۔ ان کے ریزرویشن اور دلت حامی قوانین پر حملہ کیا جا رہا ہے۔ عوامی شعبہ کے اداروں کو بیچ کر دلتوں اور پچھڑوں کے ریزرویشن کو ختم کیا جا رہا ہے۔ دلتوں پر مظالم اپنے عروج پر ہیں۔ یہاں تک کہ دلت فلاح و بہبود کی مرکزی اسکیمیں کل بجٹ کا صرف 4.4 فیصد رہ گئی ہیں۔ اب مرکزی حکومت پسماندہ طبقات کی مردم شماری جاری کرنے سے بھی انکار کر رہی ہے۔

ملک کی علاقائی سالمیت پر حملہ کیا گیا ہے۔ چین نے لداخ میں مادر ہند کی سرزمین پر قبضہ کر لیا ہے۔ اروناچل کی سرحد پر تجاوزات کر کے چین آئے روز نئے اڈے بنا رہا ہے۔ ڈوکلام میں چین کی طرف سے نئی سڑکوں، توپ خانے اور فوجی اڈوں کی تعمیر ہماری سالمیت کے لیے براہ راست چیلنج ہے لیکن مودی حکومت چین کو ہماری سرزمین سے پیچھے ہٹانے میں ناکام ثابت ہوئی ہے۔ حکومت صرف چینی ایپس پر پابندی لگا کر جھوٹی تعریفیں لوٹ رہی ہے اور اس کے برعکس چین سے اشیاء کی درآمد 97 ارب ڈالر تک پہنچ گئی ہے۔

کانگریس نے کہا ہے کہ ملک اور سماج کے ان مسائل پر پردہ ڈالنے کے لیے مودی حکومت نے اقلیتی طبقوں بالخصوص مسلمانوں، عیسائیوں اور سکھوں کو نشانہ بناتے ہوئے ہمہ گیر تعصب اور قدامت پرستی کے اندھیرے پھیلائے ہیں۔ ہر روز نئے ہندو -مسلم مسائل پیدا کر کے ملک کی آنکھوں پر پٹی باندھی جا رہی ہے۔ بی جے پی سماج میں ہندو مسلم تقسیم کے بیج بو کر اور قناعت کی اس سیاست کو بنیاد بنا کر انتخابی جیت چاہتی ہے۔

انتخابات میں اب ترقی، سڑک، اسکول، تعلیم، اسپتال، صنعت، روزگار اور کاشتکاری مسائل نہیں رہ گئے ہیں۔ بی جے پی کے اسپانسرڈ مسائل ہیں جنازہ، قبرستان، بلڈوزر، لاؤڈ اسپیکر، گرمی نکالنا، مندر بمقابلہ مسجد، چرچ بمقابلہ گرودوارہ، سڑکوں کے نام بدلنا، کھانے اور کپڑوں کے نام پر تقسیم وغیرہ۔ بدقسمتی سے میڈیا کے ایک بڑے حصے کو بھی بی جے پی نفرت کی آبیاری میں استعمال کر رہی ہے۔ یہ ملک اور اہل وطن کے سامنے سب سے بڑا چیلنج ہے۔

  • کیا ملک اس طرح چل سکتا ہے؟
  • کیا ملک اس طرح ترقی کر سکتا ہے؟
  • کیا مستقبل کا ہندوستان مذہبی، ذات پات اور معاشی تقسیم پر تعمیر ہوگا؟
  • کیا یہ گاندھی، نہرو، پٹیل، بوس، تلک، امبیڈکر، مولانا آزاد، راجندر پرساد، بھگت سنگھ، بسمل، اشفاق وغیرہ جیسے کروڑوں آزادی پسندوں کے خوابوں کا ہندوستان ہے؟

جب ملک اس قدر گہری اضطراب کی فکر میں ڈوبا ہوا ہے تو فطری بات ہے کہ کانگریس پارٹی اپنی ذمہ داریوں کو نبھاتے ہوئے ملک کی پریشانیوں کو دور کرنے کی پابند ہوگی۔

ہم جانتے ہیں کہ ملک کے تقاضوں کے مطابق کانگریس کو نہ صرف اپنی تنظیمی صلاحیت، استعداد، کارکردگی اور کام کرنے کے انداز کا جائزہ لینا ہوگا بلکہ اسے موجودہ چیلنجز اور حالات کے مطابق ڈھالنا ہوگا۔

اس کے پیش نظر کانگریس پارٹی نے راجستھان صوبے کے ا’دے پور میں چنتن شیور کا اہتمام کیا ہے۔

نئے عزائم کے بارے میں غور و خوض؟

کانگریس پارٹی نے بی جے پی حکومت کی طرف سے ملک کی ترقی اور بھائی چارے پر بلڈوز چلا کر ملک کو پسماندگی کے اندھیروں میں دھکیلنے والے حالات کا جائزہ لینے کے بعد ملک کو اس سے نجات دلانے کے لیے 6 مختلف موضوعات کی نشاندہی کی اور ان موضوعات پر کمیٹیاں تشکیل دیں، جنہوں نے اپنی بنیادی رپورٹیں پیش کی ہیں، جن میں سیاسی، سماجی انصاف تفویض اختیارات، معیشت، کانگریس کا تنظیمی ڈھانچہ، کسانوں اور مزدوروں، نوجوانوں کو بااختیار بنانا جیسے موضوعات پر توجہ دی گئی ہے۔ یہ کمیٹیاں اپنا بنیادی مطالعہ بحث اور پالیسی سازی کے لیے چنتن شیور میں رکھیں گی۔

چنتن شیویر میں جن 430 مفکرین کو مدعو کیا گیا ہے، وہ اس پرائمری اسٹڈی پر مختلف گروپس میں مسلسل تین دن تک اجلاس میں غور و خوض کریں گے اور جامع تبادلہ خیال سے جو نتیجہ نکلے گا اسے کانگریس کے سامنے رکھا جائے گا۔ صدر اور پھر آخر کار اسے کانگریس ورکنگ کمیٹی میں رکھ کر حتمی شکل دی جائے گی۔ اس لیے جو نتیجہ نکلے گا وہ نہ صرف انڈین نیشنل کانگریس کو موجودہ مشکل حالات پر قابو پاتے ہوئے ایک نئی سمت دے گا بلکہ ہندوستان کے شاندار مستقبل کی راہ بھی ہموار کرے گا۔

ایک نظر اس پر بھی

حجاب کیس: ججوں کو دھمکیاں دینے والے شخص کی درخواست ضمانت مسترد

بنگلورو کی ایک سیشن عدالت نے تمل ناڈو کے ترونیل ویلی سے تعلق رکھنے والے رحمت اللہ کی ضمانت کی درخواست مسترد کر دی ہے، جو حال ہی میں کلاس رومز میں حجاب پہننے پر فیصلہ سنانے والے کرناٹک ہائی کورٹ کے ججوں کی جان کو مبینہ طور پر خطرے میں ڈالنے کے الزام میں عدالتی حراست میں ہے۔ سٹی ...

اب کارڈ کے بغیر بھی اے ٹی ایم سے رقم نکالنا ہوا ممکن

آر بی آئی نے نیا اصول نافذ کر دیا ہے۔ اگر آپ کے پاس بینک کارڈ نہیں ہے اور آپ اے ٹی ایم سے رقم نکالنا چاہتے ہیں، تب بھی نکال سکتے ہیں۔ آر بی آئی نے تمام بینکوں سے کہا ہے کہ وہ کارڈ استعمال کیے بغیر رقم نکالنے کی سہولت فراہم کریں۔ تاہم،ایس بی آئی سمیت کچھ منتخب بینک پہلے ہی یہ سہولت ...