ٹریفک قانون کی خلاف ورزی پر کانسٹیبل کو جرمانہ لگانے کا اختیار نہیں؛ اے ایس آئی سے اونچے درجے کا پولیس آفیسر کو ہی ہوگا اختیار

Source: S.O. News Service | Published on 12th September 2019, 2:52 PM | ریاستی خبریں | ساحلی خبریں |

بنگلورو12/ستمبر (ایس او نیوز) ٹریفک قوانین میں ترمیم کے بعد پورے ملک میں موٹر گاڑیاں چلانے والے جرمانے میں اضافے کی وجہ سے سخت پریشان ہیں۔ قوانین کی چھوٹی چھوٹی خلاف ورزیوں پر جرمانے میں اضافے کے بعد ٹریفک پولیس کا رویہ بھی عوام کے ساتھ بہت زیادہ سخت اور جابرانہ ہوگیا ہے۔یہاں تک کہ کانسٹیبل سطح کے پولیس والے موٹر گاڑیاں چلانے والوں کے ساتھ ترشی اور بدسلوکی کا رویہ اپنا رہے ہیں۔

عوام کی طرف سے یہ شکایت عام ہوگئی ہے کہ ٹریفک پولیس کے کانسٹیبل اور ہیڈ کانسٹیبل لوگوں سے جرمانہ وصول کرتے ہیں۔جبکہ حقیقت یہ ہے کہ انڈین موٹروہیکل ایکٹ کی 122کے تحت کوئی اسسٹنٹ سب انسپکٹر (1اسٹار)، سب انسپکٹر (2اسٹار) اور پولیس انسپکٹر (3 اسٹار)کے درجے پر فائز آفیسر کو ہی جرمانہ وصول کرنے کا اختیارہے۔کانسٹیبل یا ہیڈ کانسٹیبل کو جرمانہ وصول کرنے کا اختیار نہیں ہے۔ اگر بغیر اسٹار والے کسی پولیس اہلکار نے ان سے جرمانہ وصول کیا ہے توشہریوں کو مذکورہ پولیس والے کے خلاف اپنے علاقے کے اے سی بی یا ڈی سی بی محکمے میں تحریری شکایت درج کروانے کی آزادی حاصل ہے۔اس طرح کی تحریری شکایت میں گاڑی چیک کرنے کا مقام،تاریخ اور وقت کے علاوہ پولیس اہلکار کے یونیفارم پر درج اس کانام بھی شامل کرنا ضروری ہوگا۔

مغربی زون (ٹریفک) کی ڈی سی پی سوم لتا نے بتایا کہ کانسٹیبل یا ہیڈ کانسٹیبل کے ذریعے جرمانہ وصول کیے جانے کی شکایت تاحال ٹریفک پولیس محکمے کو نہیں ملی ہے۔شکایت ملنے کے بعد محکمے کی طرف سے تحقیقات کی جائیں گی اور الزام درست ثابت ہونے پر متعلقہ پولیس اہلکار کے خلاف محکمہ جاتی کارروائی کی جائے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

مسلمانوں، اور کمزور طبقات کو ووٹ ڈالنے کے حق سے محروم کرنے کی کوشش، قوانین شہریت پر ممتاز دانشور و صحافی ظہیر علی خان کی تنقید؛ شاہین باغ گلبرگہ کے احتجاجی جلسہ میں ہزاروں مرد و خواتین کی شرکت

ریاست آسام میں 18لاکھ لوگوں کو فہرست رائے دہندگان سے باہر کردیا گیا ہے ان میں سے 4لاکھ 10ہزار مسلمان ہیں جب کہ مابقی 15لاکھ ہندو بھائی ہیں۔ لیکن ان 15لاکھ ہندوؤں میں سے تمام کے تمام اقوام درج فہرست، قبائل درج فہرست اور نہایت غریب قسم کے ہندو لوگ ہیں۔  18لاکھ کی فہرست میں اعلیٰ ذات کے ...

 آئی اے ایس آفیسر منیش موڈگل کا تبادلہ

آئی اے ایس عہدیدار منیش موڈگل جنہیں مرکزی حکومت نے گزشتہ ہفتہ ای گورننس کے لیے قومی ایوارڈ عطا کیا تھا، کا کمشنر سروے ، سیٹلمنٹ اور لینڈ ریکارڈس کے عہدہ سے تبادلہ کردیا گیا ۔ منیش کو اب محکمہ پر سونل اور انتظامی اصلاحات کا سکریٹری مقرر کیا گیا۔ کے وی تری لوک چندر جو پہلے ...

کرناٹک کے چن پٹن میں سی اے اے، این آر سی کے خلاف زبردست احتجاج، سابق وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی، سی ایم ابراہیم کے علاوہ جے این یو کی طالبہ امولیا کی شرکت

چن پٹن کے شہریوں کی جانب سے 14/ فروری بروز جمعہ دوپہر 3.30/ بجے بمقام پیٹا اسکول گراؤنڈ چن پٹن شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) این آر سی اور این پی آر کے خلاف احتجاجی جلسہ منعقد کیا گیا۔

ہوناور میں راہ گیر پر چیتے کاحملہ : ہمت وحوصلے نے بچائی جان

ہوناور  تعلقہ کے کڈلے کاجو باغ میں رہ چلتے ایک دیہی فرد پر چیتا نے حملہ کردیا لیکن متعلقہ شخص نے چیتے سے لڑتے ہوئے اپنی جان بچانے میں کامیاب ہوگیا۔  متعلقہ شخص کی شناخت  وینکٹ رمن تمنا ہیگڈے کی حیثیت سے کی گئی ہے، واقعہ جمعہ کی شام کو پیش آیا۔

اُڈپی کے کارکلا میں بھیانک سڑک حادثہ؛ بس سڑک کنارے پہاڑی چٹان سے ٹکراگئی؛ نو ہلاک، 24 زخمی؛ کیسے ہوا تھا حادثہ ؟

ضلع کے کارکلا میں ایک سیاحوں سے بھری پرائیویٹ بس سڑک حادثے کا شکار ہوگئی جس میں نو افراد  ہلاک ہوگئے جبکہ 24 افراد زخمی ہوئے ہیں جن میں شدید زخمی ہونے والوں کو منی پال اسپتال اور دیگر کو کارکلا سرکاری اسپتال میں داخل کیا گیا ہے۔حادثہ سنیچر کی شام 5:35 بجے پیش آیا۔

مرڈیشور کیریکٹے پرائمری اسکول کے چار کمروں کوخالی کرنے ضلع پنچایت سی ای اؤ کا حکم

مرڈیشور کے روڈ کنارے واقع کیریکٹے ہائر پرائمری اسکول عمارت کے 4کمروں کو خالی کرنے اترکنڑا ضلع پنچایت کے سی ای اؤ محمد روشن نے حکم جاری کیا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ متعلقہ اسکول کی عمارت کےکمرے خستہ حالی کا شکار ہیں   اور کبھی بھی نیچے گرسکتے ہیں۔ اسکول طلبا کے تحفظ کے پیش نظر اس ...