ایس پی لیڈر کے قتل معاملہ میں تین گرفتار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th June 2019, 12:19 PM | ملکی خبریں |

نوئیڈا  13/جون (ایس او نیوز/ آئی این ایس انڈیا) ایس پی لیڈر رام ٹیک کٹاریا کا 31 مئی کو دن دہاڑے گولی مار کر کئے گئے قتل کے معاملے میں پولیس نے بدھ کو تین لوگوں کو گرفتار کیا ہے۔ یہ قتل پرانی رنجش کی وجہ سے کیا گیا تھا۔ایس پی دیہی ونیت جیسوال نے بتایا کہ 31 مئی کو تھانہ دادری علاقے میں سماج وادی پارٹی کے دادری اسمبلی اسپیکر رام ٹیک کٹاریا کا گولی مار کر قتل کر دیا گیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ اس معاملے میں سات افراد کو نامزد کرتے ہوئے مہلوک کے لواحقین نے تھانہ دادری میں قتل کا مقدمہ درج کرایا تھا۔ایس پی نے بتایا کہ معاملے کی تحقیقات کر رہی تھانہ دادری پولیس نے اس واقعہ میں شامل مبینہ تین افراد کو گرفتار کیا ہے۔ اس واقعہ میں کچھ اور لوگ بھی شامل ہیں، جن کی پولیس تلاش کر رہی ہے۔ایس پی نے بتایا کہ گرفتار ملزمان کے پاس سے پولیس نے قتل میں استعمال کیا جانے والا آلہئ قتل(ہتھیار) بھی برآمد کر لیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ تفتیش کے دوران پولیس کو پتہ چلا ہے کہ سال 2019   کے جنوری ماہ میں اہم ملزم بلیسر کے بھائی رمیش کی لاش ڈسٹرکٹ علی گڑھ میں ریلوے ٹریک پر ملی تھی۔اس صورت میں بلیسر نے رام ٹیک کٹاریا اور ان کے لواحقین کے خلاف قتل کا مقدمہ درج کرایا تھا، لیکن پولیس نے تحقیقات میں یہ معاملہ ایکسیڈنٹ کا پایا۔ انہوں نے بتایا کہ بلیسر اس بات کو لے رام ٹیک سے نالاں تھا، اسے شک تھا کہ اپنے سیاسی رسوخ کے  باعث رام ٹیک اس کابھی قتل کروا دے گا۔ انہوں نے بتایا کہ بھائی کی موت کا بدلہ لینے  کی غرض سے  ہی بلیسر نے قتل کا منصوبہ بنایا تھا۔ 

ایک نظر اس پر بھی

معروف عالم دین اور جمعیۃ علما ہند کے نائب صدر مولانا امان اللہ قاسمی کا انتقال

 کوہ کن کے معروف عالم دین اور جمعیۃ علما ء ہند کے نائب صدر مولانا امان اللہ قاسمی نے سنیچر کے روز مختصر علالت کے بعد 84 سال کی عمر میں داعی اجل کو لبیک کہہ دیا۔ موصوف قدیم دینی و علمی درسگاہ دار العلوم حسینیہ شری وردھن ضلع رائے گڑھ (مہاراشٹرا) کے مہتمم بھی تھے۔

’کیا چین کا ہندوستانی سرزمین پر قبضہ نہیں ہے؟ مودی جی کو بتانا چاہیے‘

 کانگریس نے کہا ہے کہ چین نے وادی گلوان میں ہندوستانی حدود میں دراندازی کی ہے اور اس کے فوجی دستے ملک کے اسٹریٹجک نقطہ نظر سے متعدد اہم علاقوں میں تعینات ہیں، اس لیے اب وزیر اعظم نریندر مودی کو یہ بتانا چاہiے کہ کیا چین کا ہندوستانی سرزمین پر قبضہ نہیں ہے۔