اپن انگڈی میں زیورات کی دکان میں ڈکیتی کا معاملہ ہوگیا حل۔ پولیس نے کیا3ملزمین کو گرفتار۔ مسروقہ زیورات اور ٹرک ضبط

Source: S.O. News Service | Published on 8th September 2019, 5:46 PM | ساحلی خبریں |

پتور 8/ستمبر (ایس او نیوز) اپن انگڈی میں واقع آر آر جیویلرس نامی دکان میں 16اگست کو ڈکیتی کے ذریعے تقریباً27لاکھ روپوں کے زیورات چوری کرلیے گئے تھے۔

اس سلسلے میں پولیس نے تحقیقات کے بعد 3ملزمین کو گرفتار کرلیا ہے جن کی شناخت داہوڈ گجرات کے رہنے والے رمیش بھائی سسوڈیا (32سال)، سنیل عرف سندیپ (27سال)اور راجستھان ضلع بوندی کے رہنے والے جمیل عرف چاچا(60سال) کے طور پر کی گئی ہے۔ جبکہ مزید پانچ ملزمین ابھی مفرور بتائے جاتے ہیں۔

 پولیس کا کہنا ہے کہ اس نے گرفتار شدہ ملزمین کے قبضے سے  7.05لاکھ روپے مالیت کے 185.59گرام وزنی سونے کے زیورات اور2.26 لاکھ روپے مالیت کے 3,972وزنی چاندی کے مسروقہ زیورات برآمد کرلیے ہیں، جوکہ جملہ مسروقہ مال کا تھوڑا سا حصہ ہے۔ اس کے علاوہ چوری کے لئے استعمال کیاگیا ایک ٹرک بھی ضبط کیا گیا ہے جس کی مالیت کا تخمینہ 23لاکھ روپے لگایا گیا ہے۔

خیال رہے کہ 15اور16اگست کی درمیانی شب میں چوروں نے گیس کٹر کی مدد سے دکان کا شٹر کاٹ کر ڈکیتی کی یہ واردات انجام دی تھی۔اور جملہ 650.69گرام وزنی سونے کے زیورات اور 7کلو گرام وزنی چاندی کے زیورات پر اپنا ہاتھ صاف کیا تھا۔جنوبی کینرا پولیس سپرنٹنڈنٹ نے اس کیس کی تحقیقات کے تین ٹیمیں تشکیل دی تھیں۔پولیس کو سب سے پہلا سراغ چوری کے لئے استعمال کی گئی گاڑی کی شکل میں ملا۔اور اس ٹرک کو گجرات کے داہوڈ میں کٹوارا علاقے سے ضبط کیے جانے کے بعد ملزمین تک رسائی حاصل کرنا پولیس کے لئے آسان ہوگیا۔

  پولیس کا کہنا ہے کہ یہ ایک بدنام زمانہ لٹیروں کی بین الریاستی گینگ ہے جو مختلف ریاستوں میں کسی دوسرے کام کے لئے پہنچتی ہے اور پھر وہاں سے واپس لوٹتے وقت منصوبہ بند طریقے سے ڈکیتی اور لوٹ کی وارداتیں انجام دیتی ہے۔پولیس کے مطابق گجرات میں رالیاتی اور راجستھان میں ڈیولی نامی علاقے ان لٹیروں کے اصل اڈے ہیں۔

پولیس کو تحقیقات کے دوران پتہ چلا ہے کہ اپن انگڈی کی زیورات کی دکان میں ڈاکہ زنی کا منصوبہ ٹرک ڈرائیور بھگوان سنگھ نے اس وقت بنایا تھا جب وہ کرایے کا سامان لے کر بنگلورو آیا ہوا تھا۔ اس نے سنیل، جمیل اور دیگر پانچ افراد کی مدد سے اس واردا ت کو انجام دیا تھا۔اب پولیس مفرور ملزمین کی تلاش میں لگی ہوئی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل میں بجلیوں کی چمک اور بادلوں کی گرج کے ساتھ موسلادھار بارش؛ بینگرے میں ایک گھرکو نقصان، ماولی میں الیکٹرانک اشیاء جل کر راکھ؛ الیکٹرک سٹی سپلائی بری طرح متاثر

آج منگل دوپہر کو ہوئی موسلادھار بارش اور بجلیاں گرنے سے ایک مکان کو نقصان پہنچا وہیں دوسرے ایک مکان کی الیکٹرانک اشیاء جل کر خاک ہوگئی۔

بھٹکل: جے این یو کے لاپتہ متعلم نجیب احمد کو ڈھونڈ نکالنے  اور اُس کے ساتھ انصاف کرنے  کا مطالبہ لے کر ایس آئی اؤ آف انڈیا کا ملک گیر احتجاج : بھٹکل اسسٹنٹ کمشنر کو بھی دیا گیا میمورنڈم

15اکتوبر 2016کو جواہر لال یونیورسٹی میں ایم ایس سی کےفرسٹ ائیر میں زیر تعلیم نجیب  احمد یونیورسٹی کے ہاسٹل سے لاپتہ ہوئے تین سال ہورہےہیں ،گمشدگی کی پہلی رات کو ہاسٹل میں اے بی وی پی کے کارکنان نے حملہ کیا تھا، مگر اس معاملے میں ابھی تک کوئی پیش رفت نہیں ہونے پر اسٹوڈنٹس اسلامک ...

بھٹکل کے اسسٹنٹ کمشنر ساجد ملا کا تبادلہ :ایماندار آفسران کے تبادلوں پر عوام میں حیرت ؛کے اے ایس آفیسر  اے رگھو ہونگے نئے اے سی

بھٹکل کے اسسٹنٹ کمشنر ساجد ملا کا تبادلہ کرتےہوئے ریاستی حکومت نے حکم نامہ جاری کیا ہے، ساجد ملا کے عہدے پر کے اے ایس جونئیر گریڈ کے پروبیشنری افسر اے رگھو کا تقر ر کیاگیا ہے۔ اس طرح تعلقہ کے اہم کلیدی عہدوں پر فائز ایماندار افسران کے تبادلوں کولے کرعوام تعجب کا اظہار کیا ہے۔

محکمہ جنگلات کے افسران کے خلاف بھٹکل پولس اسٹیشن کے باہر احتجاج؛ اے ایس پی کو دی گئی تحریری شکایت

جنگلاتی زمین کے حقوق کے لئے لڑنے والی ہوراٹا سمیتی کے کارکنان نے آج بھٹکل ٹاون پولس تھانہ کے باہر جمع ہوکر محکمہ جنگلات کے اہلکاروں کے خلاف کاروائی کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاج کیا اور بھٹکل سب ڈیویژن کے اسسٹنٹ ایس پی  کے نام میمورنڈم پیش کیا۔ 

ضلع شمالی کینرا میں آج بھی 24ہزار خاندان گھروں سے محروم ! کیا آشریہ اسکیم کے ذریعے صرف دعوے کئے جاتے ہیں ؟

حکومت کی طرف سے بے گھروں کو مکانات فراہم کرنے کی اسکیمیں برسہابرس سے چل رہی ہیں۔ اس میں سے ایک آشریہ اسکیم بھی ہے۔ سرکاری کی طرف سے ہر بار دعوے کیے جاتے ہیں کہ بے گھروں اور غریبو ں کا چھت فراہم کرنے کے منصوبے پوری طرح کامیاب ہوئے ہیں۔

بھٹکل کے آٹو رکشہ ڈرائیور بھی ایماندار؛ بھٹکل میں تین لاکھ مالیت کے زیورات سے بھری بیگ لے کر رکشہ ڈرائیور پہنچا پولس اسٹیشن

  بھٹکل میں  راستے پر  کوئی  قیمتی چیز کسی کو گری ہوئی ملتی ہے  تو اکثر لوگ  اُسے اُس کے اصل مالک تک  پہنچانے کی کوشش کرنا عام بات ہے،  بالخصوص مسلمانوں کو راستے میں پڑی ہوئی  کوئی قیمتی چیز مل جاتی ہے تو     لوگ یا تو خود سے سوشیل میڈیا  میں پیغام وائرل کرکے  اُسے اُس کے اصل ...