دہلی کے ریموٹ سے چلنے والی ریاستی مخلوط حکومت پوری طرح معذور ہے این ڈی اے کو اکثریت ملنے میں شبہ نہیں : نرملا سیتارمن

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 15th April 2019, 11:52 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،15؍اپریل (ایس او نیوز؍یو این آئی) مرکزی وزیر دفاع نرملا سیتارمن نے اتوار کو دعوی کیا کہ لوگوں سے مل رہے پرجوش ردعمل سے اس بار کے عام انتخابات میں وزیراعظم نریندر مودی کی قیادت والے قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے ) کو اکثریت ملنے میں کوئی شبہ نہیں ہے ۔سیتارمن نے بنگلورو جنوب پارلیمانی سیٹ سے بی جے پی کے امیدوار تیجسوی سوریہ کے حق میں گھر گھر میں جاکر تشہیری مہم میں شامل ہونے کے بعد منعقدہ روڈ شو میں کہاکہ مودی حکومت عام لوگوں کی ضرورت پورا کرنے اور بدعنوانی کے خلاف لڑائی کرنے کے لئے دن رات کام کررہی ہے ۔اب یہ ملک کی ذمہ داری بنتی ہے کہ نریندر مودی کو جیتاکر اگلے وزیراعظم کے طورپر اقتدار پرلائیں ۔انہوں نے کہا کہ رائے دہندگان اس بات پر راضی ہیں کہ مودی حکومت جاری رہنی چاہئے۔ اس کی جگہ پر کسی طرح کے متبادل انتظام کو شکست کا سامنا کرنا چاہئے ۔ انہوں نے کہاکہ ہم ملک کے ہر گھر میں جارہے ہیں تاکہ یہ یقینی کیا جاسکے کہ مودی آئند ہ پانچ برسوں تک ہماری حکومت کے لیڈر رہیں۔ پورے ملک سے اچھے ردعمل مل رہے ہیں جو آخری فیصلہ ہوگا،2019کے لوک سبھاانتخابات کے بعد بھی۔انہوں نے کہاکہ ملک کو ایسی حکومت کی ضرورت ہے جو جوابدہ ہواور بدعنوانی سے پاک ہے ۔ اسی وجہ سے لو گ پورے دل سے مودی کو برقرار رکھنا چاہتے ہیں۔سیتارمن نے کہاکہ پورے ملک میں مودی لہر چھا چکی ہے اور کرناٹک میں بھی پارٹی کے لئے بہتر نتائج سامنے آئیں گے ۔ انہوں نے کرناٹک کی موجودہ جنتادل (ایس) ۔کانگریس اتحاد حکومت پر تَلخ تنقید کرتے ہوئے کہاکہ یہ دہلی کے ریموٹ سے چلنے والی حکومت ہے جو پوری طرح معذور ہے ۔ انہوں نے کہاکہ اگر دہلی سے کمان حاصل کرنے والے (ایچ ڈی) کمارسوامی کی جگہ پر کوئی مضبوط وزیراعلی ہوتا تو ریاست کے لوگوں کے لئے بہتر ہوتا۔انہوں نے دعوی کیا کہ مودی اس طرح کے نظام پر کبھی تیار نہیں ہوتے ۔ اس سے پہلے سابق وزیراعظم منموہن سنگھ بھی اسی طرح سے ریموٹ سے چلتے تھے ۔ انہوں نے لوگوں سے پوچھا کہ کیا کسی ریاست کے وزیراعلیٰ کو دہلی سے کنٹرول کیا جانا چاہئے ۔وزیر دفاع بنگلورو کی تینوں پارلیمانی سیٹوں کے علاوہ کرناٹک کے دیگر علاقوں میں بھی انتخابی تشہیر کریں گی۔ اس کے بعد وہ شیموگہ میں راگھویندر کے حق میں اور شمالی کنڑ کے کرواڈ میں اننت کمار ہیگڑے کی حمایت میں انتخابی تشہیر کریں گی۔

ایک نظر اس پر بھی

ملک میں مجبور پی ایم چاہتی ہے کانگریس، کرناٹک میں ریلیوں میں پھرپاکستان کے حوالے سے مودی کاخطاب

معلق لوک سبھاکے تجزیئے کے درمیان اب بی جے پی نے واضح اکثریت مانگنی شروع کردی ہے ۔وزیر اعظم نریندر مودی نے جمعرات کو دعوی کیا کہ کانگریس ملک میں ایک مجبور وزیر اعظم بنوانا چاہتی ہے۔انہوں نے لوگوں سے مرکز میں قومی سلامتی پر زور دینے والی مضبوط حکومت بنوانے کی اپیل بھی کی۔شمالی ...

لوک سبھا انتخابات کا دوسرا مرحلہ ؛کشمیر سے کنیا کماری تک ہورہی ہے پولنگ؛ شام تک 61 فیصد پولنگ؛ جموں و کشمیر میں سب سے کم ووٹنگ

  لوک سبھا انتخاب کے دوسرے مرحلے کے لیے صبح 7 بجے سے ووٹنگ شروع ہو گئی ہے۔ دوسرے مرحلے میں ملک کی 12 ریاستوں کی 95 لوک سبھا سیٹوں پر ووٹنگ ہو رہی ہے، جس کے لئے 1.78 لاکھ پولنگ بوتھ بنائے گئے ہیں۔ اس میں 1629 امیدوار اپنی قسمت آزمائی کر رہے ہیں۔ دوسرے مرحلے کے دوران اتر پردیش کی 8، مغربی ...