ایس ایس ایل سی نتائج میں حاصل اول مقام برقرار رکھنے افسر توجہ دیں: وزیر تعلیم ڈاکٹر سدھاکر

Source: S.O. News Service | Published on 13th August 2020, 11:32 AM | ریاستی خبریں |

چکبالاپور،13؍اگست (ایس او نیوز) 70 سالہ تاریخ میں چکبالاپور ضلع ایس ایس ایل سی امتحانات میں ریاست میں اول مقام جو حاصل کیا ہے۔ یہ ہمارے لئے بہت خوشی کی بات ہے۔ مگر اس سے اوپر جا نہیں سکتے مگر اس مقام کو بچائے رکھنا ہی ہمارے لئے ایک چیلنج ہے۔اس سلسلے میں ضلع کے افسروں کو توجہ دینا ضروری ہے۔ یہ بات ریاستی وزیربرائے میڈیکل ایجوکیشن و ضلع نگران کار وزیر ڈاکٹر سدھاکر نے یہاں کے سول کنٹے قریہ میں تعلقہ کے 166 مکینوں کو حق پترا تقسیم کرنے کے بعد اپنے خطاب میں کہی۔

انہوں نے مزید کہا کہ اب تک ان نتائج میں اول مقام پربنگلور،اڈپی، دکشن کنڑا جیسے اضلاع آتے تھے، مگر اس سال یہاں کے تمام طلباء و طالبات کی محنت، اساتذہ کی لگن اور افسروں کی نگرانی کی وجہ سے تمام کے اندازوں و خیالات کو غلط ثابت کرکے ہمارے ضلع نے جو اول مقام حاصل کیا ہے اس کے لئے تمام مبارکباد کے مستحق ہیں۔ انہوں نے ہدایت دی کہ اس مقام کو بچائے رکھنے کے لئے ہم سب کو اس سال کی طرح سے ہی آنے والے سالوں میں کوشش اور اقدامات کرنے چاہئیں۔

ڈاکٹر سدھاکر نے بتایا کہ ہماری حکومت کا مقصد چکبالاپور و کولار اضلاع کی ترقی ہے۔ اس کے لئے اولین ترجیح دیتے ہوئے سب سے پہلے ان اضلاع سے زیر آب پانی کی سطح بڑھانے کے لئے ہر ممکنہ کوشش اور اقدامات کئے جارہے ہیں۔ اس سلسلہ میں کے سی و ایچ این ویلی کو پانی بہا کر تالابوں کی بھرتی کی جارہی ہے، جس سے زیر آب پانی کی سطح بڑھ سکتی ہے، ساتھ ہی ہماری حکومت یہ کوشش بھی کررہی ہے کہ ایتناہولے پروجیکٹ کو جلداز جلد مکمل کرکے اس سے پانی لا کر ان خشک سالی سے متاثر اضلاع کو سرسبز بنایا جائے، پچھلے کئی دنوں سے ضلع میں بہترین بارش بھی ہورہی ہے جو معمول سے زیادہ ہے۔ اس بارش کی بدولت اس بار بہترین فصلوں کے بھی آنے کی توقع ہے۔ ہماری حکومت کسانوں کوخوشحال دیکھنا چاہتی ہے۔ اس لئے کہ کسان ہی ہمارے لئے ریڑھ کی ہڈی کی مانند ہیں۔ انہیں کی محنت و کوشش کی بدولت ہی سے ہمیں اناج اور ترکاری مل رہی ہے۔

ڈاکٹر سدھاکر نے بتایا کہ پچھلے سالوں میں کئے گئے وعدے کے مطابق آج تعلقہ کے 161 غریب مکینوں کو حق پترا جوتقسیم کیا جارہا ہے، وہ بھی اب اپنے رہائشی سائٹ کے مالک بن گئے ہیں۔ان تمام کوچاہئے کہ وہ حکومت سے ملنے والے گرانٹ کا استعمال کرکے چارماہ کے اندر اپنے اپنے گھروں کی تعمیر کرلیں۔ اس موقع پر ضلع پنچایت صدر چکا نرسمہایا، ڈپٹی کمشنر آر لتا،سی ای او فوزیہ ترنم،ضلع پنچایت سماجی انصاف اسٹاڈنگ کمیٹی کے چیرمین کے سی، راجہ کانت،ایس پی متھن کمار کے علاوہ دیگر موجود رہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کانگریس اور جے ڈی ایس لینڈریفارم ترمیمی ایکٹ کی سخت مخالف، کسانوں کے حقوق اورزمین کی حفاظت کیلئے جدوجہدکریں گے:سدارامیا

کسانوں کے حقوق کے ساتھ ان کی زمینوں سے بھی بے دخل کرنے پرآمادہ ریاستی حکومت کے لینڈریفارم ایکٹ کے ترمیمی مسودہ کے خلاف اسمبلی سیشن میں نہایت سختی کے ساتھ آوازاٹھائیں گے۔