بھٹکل ریلوے اسٹیشن پر کڑی نگرانی اور چوکسی: کیا کورنٹائن سے بچنے شیرور، بیندور اور کنداپور کے لوگ بھٹکل اسٹیشن پر اترتے ہیں ؟

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 12th June 2020, 10:32 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل:12؍جون (ایس اؤ نیوز) لاک ڈاؤن کے دوران  ڈھیل دیتےہوئے ریلوے سفر کو منظوری دینےکے بعد مہاراشٹرا سے ساحلی کرناٹکا کے لئے  لوگوں کی آمدشروع ہوگئی ہے۔ ایسے میں  اُڈپی، منگلورو اور بھٹکل  پہنچنے والے مسافروں میں اضافے کو دیکھتے ہوئے ساحلی پٹی پر کڑی چوکسی برتی جارہی ہے۔ اس  دوران سننے میں آرہا ہے کہ  پڑوسی ضلع  اُڈپی کے شیرور، بیندور اور کنداپور  جانے والے مسافر بھٹکل ریلوے اسٹیشن پر ہی اُتررہے ہیں اس تعلق سے اُڈپی میں کورونا کے بڑھتے معاملات کو لے کر  بھٹکل کے عوام میں ایک طرف تشویش پائی جارہی ہے تو وہیں پڑوسی ضلع کے لوگ بھٹکل میں اُترنے سے مقامی آفسران بھی پریشان ہیں۔

حالات کے متعلق بھٹکل تحصیلدار ایس روی چندر نے بتایا کہ مہاراشٹراسے جیسے ہی ریل سرویس شروع ہوئی تو ہم چوکسی برت رہے ہیں، کسی کو خوف کھانےکی ضرورت نہیں ہے۔ ’’بدھ کی رات پڑوسی ضلع اُڈپی کے 9مسافر بھٹکل ریلوے اسٹیشن پر ہی اترے تھے۔ انہیں تحویل میں لے کر محکمہ تحصیل کے افسران نے اُن کی جانچ کی ۔ اس کے بعد ایمبولنس کے ذریعے انہیں ان کے گاؤں بھیجا گیا۔ اور اس سلسلےمیں وہاں کے متعلقہ افسران کو بھی جانکاری دی گئی ہے‘‘۔

 اڈُپی ضلع میں  مہاراشٹرا  سےآنے والوں کو کوارنٹائن میں رکھنا ضلع انتظامیہ کی ترجیحات میں سے ہے۔کیونکہ مہاراشٹرا سے لوٹنے والوں میں ہی سب سے زیادہ کورونا  کے معاملات سامنے آرہے ہیں۔ ایسے میں مہاراشٹرا سے لوٹنے والوں کی کڑی نگرانی کے لئے  ٹرینوں کو بھٹکل اسٹیشن کے بعد سیدھے اُڈپی اسٹیشن میں ہی رُکنے کے احکامات دئے گئے ہیں اور  بیندور اور کنداپور میں اسٹاپ نہیں دیا جارہا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ مہاراشٹرا سے  آنے والوں  کو اُڈپی اسٹیشن میں ہی روک کر انہیں سیدھے کورنٹائن میں بھیجا جارہاہے۔ ایسے میں بعض لوگوں کا کہنا ہے کہ اکثر لوگ بھٹکل اسٹیشن میں ہی اُترکر کورنٹائن سے بچنے کی کوشش کرتے ہیں، لیکن بعض مسافروں نے بتایا کہ وہ کورنٹائن سے بچنے کے لئے نہیں بلکہ شیرور اور بیندور بھٹکل کے بالکل  قریب ہیں  اور اُڈپی اسٹیشن اُن کے علاقہ سے کافی دور ہے، اس لئے جلدی گھر پہنچنے کے چکر میں  بھٹکل اسٹیشن میں اُترنے کو  ترجیح دے رہے ہیں۔بھٹکل اسٹیشن میں اُترکر وہ آٹو یا اپنے گھر سے گاڑی منگوا کر جلد ہی اپنے  گھر پہنچ سکتے ہیں۔

اب ان لوگوں کا بھٹکل اسٹیشن پر اُترنا آفسران کے لئے درد سر بن گیا ہے کیونکہ انہیں پہلے سیدھے  بھٹکل تعلقہ اسپتال لے جانا پڑتا ہے، پھر اُن کی ضروری جانچ کے بعد  وہاں سے  ایمبولنس پر شیرور اور بیندور لے جاکر چھوڑنا پڑتا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

اننت کمار ہیگڈے نے لگایابی ایس این ایل میں دیش دروہی افسران موجود ہونے کا الزام

اپنے متنازعہ بیانات کے لئے پہچانے جانے والے رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے نے الزام لگایا کہ بھارت سنچار نگم لمیٹڈ کے اندر دیش دروہی افسران بیٹھے ہوئے جس کی وجہ سے اس کے کام کاج میں کوئی ترقی نہیں ہورہی ہے۔ اس لئے آئندہ دنوں میں اس کی نج کاری (پرائیویٹائزیشن) کیا جائے گا۔

ایم پی اننت کمار ہیگڈے کا بھٹکل دورہ؛ 23.72کروڑ روپے کے ترقیاتی منصوبوں کو دکھائی ہری جھنڈی

پیر کو رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے نے بھٹکل کا دورہ کرتے ہوئے  بھٹکل تعلقہ میں ’پردھان منتری گرام سڑک یوجنا‘کے تحت 23.72کروڑ روپے لاگت کے مختلف ترقیاتی منصوبوں کو ہری جھنڈی دکھائی۔ وہ یہاں ماروتی نگر میں بی جے پی تعلقہ آفس کا افتتاح کرنے کے بعد خطاب کررہے تھے۔

مینگلور کے قریب سولیا میں ہائی ٹینشن الیکٹرک کیبل کی زد میں آکر بائک کے ساتھ بائک سوا ر بھی جل کرخاکستر

ضلع دکشن کنڑا کے  سولیا میں کلّیری نامی علاقے میں آج منگل صبح 5.30بجے پیش آئے  ایک انتہائی دردناک حادثہ میں دو لوگ موقع پر ہی جل کر ہلاک ہوگئے جن میں ایک  شناخت  اُمیش (45) کی حیثیت سے کی گئی ہے، جبکہ  بائک کی پچھلی سیٹ پر سوار اس کے  ساتھی کا  نام معلوم نہ ہوسکا۔

کاروار:ایس ایس ایل سی امتحان کے نتائج۔ سرسی کی سنّدھی ہیگڈے نے پایا ریاست میں پہلا رینک

امسال ریاست میں ایس ایس ایل سی کے جو امتحانات ہوئے تھے اس کا سامنا طلبہ نے کووڈ وباء کے پس منظر میں ذہنی تناؤ کے ساتھ کیا تھا۔اس کے بعد کافی دنوں سے طلبہ بڑی بے چینی کے ساتھ اپنے نتائج کا انتظار کررہے تھے۔