ضلع شمالی کینرا میں وبائی صورت اختیار کرنے والی چمڑی کی بیماری۔ علاج کارگر نہ ہونے سے عوام پریشان

Source: S.O. News Service | Published on 25th September 2019, 12:51 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل 25/ستمبر (ایس او نیوز) محکمہ صحت کی طرف سے یوں تو وبائی امراض پر قابو پانے کے لئے مختلف پروگرا م اور اسکیمیں موجود ہیں۔ اس میں چمڑی کے امراض میں صرف جذام (کوڑھ/لیپرسی)کے علاج اور روک تھام کی گنجائش ہے۔

لیکن ادھر پچھلے کچھ عرصے سے پورے ضلع میں چمڑی کی ایک نئی بیماری وبا کی صورت میں پھیل گئی ہے جو دیکھنے میں تو معمولی داد اور خارش یا ایکزیما دکھائی دیتی ہے، مگر اس پر دوائیوں کا کوئی اثر نہیں ہوتا اور وہ جسم پر پھیلتی چلی جاتی ہے۔اس صورت حال کو دیکھتے ہوئے عوام کا کہنا ہے کہ محکمہ صحت کو اس مرض کے بارے میں بھی جائزہ لینے اور اسے وبائی امراض میں شامل کرتے ہوئے اس کی روک تھام کے لئے منصوبے بناناچاہیے۔

اس مرض میں جسم کے مختلف حصوں پر لال اور گول چکتّے (rashes) ابھر آتے ہیں اور ان میں تیز کھجلی شروع ہوجاتی ہے۔ اکثر وبیشتر مریض دواؤں کی دکان پر جاکرداد اور خارش کے عام مرہم خود ہی خرید لیتے ہیں جس میں شامل ایک سے زائد قسم کی دواؤں میں اسٹیرائڈ (کلوبیٹاسول، بیکلومیتھازون وغیرہ) بھی ملی ہوئی ہوتی ہے۔ اس سے وقتی طور پر کچھ راحت ملتی ہے مگر کچھ ہی دنوں بعد یہ مرض پھر سے تازہ ہوجاتا ہے اور پہلے سے زیاد ہ بڑے حصے پر پھیل جاتا ہے۔ جوں جوں دوائیاں لی جاتی ہیں، اور اسٹیرائڈ والے عام مرہم لگائے جاتے ہیں اس میں مزید اضافہ ہوتا جاتا ہے۔

 ڈاکٹروں کے لئے یہ نئی بیماری بڑا سردرد بن گئی ہے۔اس کی اصل وجوہات کے بارے میں کوئی بھی قطعی رائے دینے کی پوزیشن میں نہیں ہے۔ ماحولیاتی اثرات، جسم میں کم ہوتی ہوئی مدافعتی قوت(امیونیٹی)، غذا میں ہر سطح پر استعمال ہونے والے کیمیکل، فضائی آلودگی جیسے اسباب پر غور کیا جارہا ہے مگر کسی ایک سبب کی نشاندہی ہونہیں پائی ہے۔

 ماہرین امراض جلد کا کہنا ہے کہ یہ ایک فنگل انفیکشن ہے، اور آج کل پورے ملک میں یہ ایک وبائی صورت اختیار کرگیا ہے۔ اکثر جنرل ڈاکٹرز اسے ایکزیما یا dermatitisسمجھ لیتے ہیں اور اسی انداز سے علاج کرتے ہیں۔ مگر اب یہ بات ثابت ہوگئی ہے کہ اسٹیرائڈوالے مرہم کے استعمال سے حالیہ دنوں میں جلد کو لاحق ہونے والے مرض کے فنگس کو ختم کرنے کے بجائے اس کی افزائش میں مدد مل رہی ہے۔اور یہی وجہ ہے کہ مرض بار بار نمودار ہورہا ہے۔ اس میں بچے، بوڑھے، خواتین مرد سبھی مبتلا ہوگئے ہیں اور علاج کے لئے مارے مارے پھر رہے ہیں۔جہاں چمڑی کے امراض کے ماہر ڈاکٹر موجود نہیں ہیں وہاں پر لوگ یاتو جنرل ڈاکٹرز کے پاس جاتے ہیں یا پھر خود ہی دکانوں سے مرہم اور گولیاں خرید کر اپنا علاج خود ہی کرنے لگتے ہیں جس سے یہ مرض اور بھی پیچیدہ ہوتاجارہا ہے۔

 لہٰذا امراض کے جلد کے بہت سے ماہرین نے اسٹیرائڈ والے مرہموں پر پابندی لگانے کا مطالبہ کیا ہے اور معالجین کوبھی ہدایات جاری کی ہیں کہ وہ برسہابرس سے جلدی امراض میں استعمال کیے جارہے تمام کارٹیکو اسٹیرائڈوالے مرہموں سے پرہیز کریں۔

جن لوگوں کو یہ مرض لاحق ہوا ہے ان کے لئے صحیح علاج بہت ضروری ہے جس کا فیصلہ ماہرڈاکٹرہی کرسکتے ہیں۔ اس میں اینٹی فنگل گولیاں اور بغیر کامبی نیشن اوربغیر اسٹیرائڈ والے مرہم شامل ہیں۔ اس کے لئے موجودہ حالات میں ماہرین امراض جلد نے جس قسم کی گولیوں اور مرہم کو درست قرار دیا ہے اس کا خرچ البتہ مریض کی جیب پر بھاری پڑتا ہے، کیونکہ گولیاں کافی مہنگی ہیں اور علاج کو مختلف مرحلوں میں کافی لمبے عرصے تک دہرانا پڑسکتا ہے۔اس کے علاوہ علاج کے دوران گوشت، انڈے، بعض قسم کی مچھلیوں اور جھینگے وغیرہ سے پرہیزکرنے سے مرض پر قابو پانے میں مدد ملتی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

شہریت ترمیمی قانون کے خلاف ہلیال میں دیا گیا میمورنڈم

مرکزی حکومت کی جانب سے متنازع شہریت ترمیمی بل منظور کیے جانے کے خلاف ہلیال میں جمیت العلماء الہند ضلع کاروارکے پرچم تلے مسلمانوں اور غیر مسلم ایس سی / ایس ٹی لیڈروں نے مشترکہ طور پر تحصیلدار کی معرفت سے صدر ہند کو میمورنڈم پیش کیا۔

بی جے پی حکمرانی کا زوال: 29 سے گھٹ کر 10 ریاستوں تک محدود ... آز: م. افضل

بی جے پی کے جولوگ کل تک کانگریس مکت بھارت کا نعرہ چیخ چیخ کر لگارہے تھے اب خاموش ہیں شایداس لئے کہ اب بی جے پی کا ہی دائرہ سمٹنے لگاہے، این ڈی اے بکھررہا ہے ،مودی کے مصنوعی طلسم کی قلعی بھی کھلتی جارہی ہے اور ایک ایک کرکے ریاستیں اس کی حکمرانی کی قید سے آزادہوتی جارہی ہیں ، تازہ ...

ہوناورمیں پریش میستا کی مشتبہ موت کوگزرگئے2سال۔ سی بی آئی کی تحقیقات کے باوجود نہیں کھل رہا ہے راز۔ اشتعال انگیزی کرنے والے ہیگڈے اور کرندلاجے کے منھ پر کیوں پڑا ہے تالا؟

اب سے دو سال قبل 6دسمبر کو ہوناور میں دو فریقوں کے درمیان معمولی بات پر شرو ع ہونے والا جھگڑا باقاعدہ فرقہ وارانہ فساد کا روپ اختیار کرگیا تھا جس کے بعد پریش میستا نامی ایک نوجوان کی لاش شنی مندر کے قریب واقع تالاب سے برآمد ہوئی تھی۔     اس مشکوک موت کو فرقہ وارانہ رنگ دے کر پورے ...

6 دسمبر، جس نے ملک کی سیاست کا نقشہ بدل دیا۔۔۔۔۔۔۔۔از: ظفر آغا

’دسمبر 6‘ ہندوستانی سیاست کا وہ سنگ میل ہے جس نے سیاست کا نقشہ ہی پلٹ دیا۔ اسی روز 1992 کو ایودھیا میں مغل شہنشاہ بابر کے دور کی ایک چھوٹی سی مسجد منہدم ہوئی اور بس سمجھیے کہ اس روز ہندوستانی آئین میں سیندھ لگ گئی۔

ایودھیا معاملہ سے منسلک وہ شخصیات، جن کےکام کی وفاداری مذہب پربھاری ثابت ہوئی

سپریم کورٹ کے فیصلےکے بعد ایودھیا معاملے(مندر- مسجد تنازعہ) کا خاتمہ ہوگیا ہے۔ 135 سال پہلے1885 میں شروع ہوئےایودھیا تنازعہ کی قانونی لڑائی میں کچھ کردارایسے رہے ہیں، جنہیں ان کی ڈیوٹی کے فرائض کولےکرہمیشہ یاد رکھا جائےگا،