سرسی میں مائکروفائنانس کمپنیوں کی  بڑھتی ہوئی ہراسانیاں۔ قرض دار خواتین نے کیا احتجاجی مظاہرہ

Source: S.O. News Service | Published on 13th November 2019, 8:29 PM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

سرسی 13/نومبر (ایس او نیوز) سرسی شہر میں کئی مائکروفائنانس کمپنیاں ہیں جوچھوٹے چھوٹے گروہوں یعنی سنگھا کو قرضے دیا کرتی ہیں مگر ان کی طرف سے حد سے زیادہ سود کی شرح وصول کیے جانے اور قرض داروں اور خاص کرکے خواتین کو ہراساں کرنے کی باتیں بھی سننے میں آ رہی ہیں۔

ان مائکرو فائنانس والوں سے قرضہ لینے کے لئے پانچ یا دس لوگوں کو گروپ بنانا ہوتا ہے جسے سنگھا کہا جاتا ہے۔ اکثر وبیشتر اس میں خواتین ہی شامل رہتی ہیں۔ عموماً 2سے 3لاکھ روپے کا قرضہ دیا جاتا ہے۔

قرض داروں سے رقم واپس وصول کرنے میں زورزبردستی کرنے اور گھر پر تنہا رہنے والی خواتین کو ہراساں کرنے کا الزام لگاکرمنگل کے دن شام کے وقت شہر کے رامن بیل علاقے میں 150سے زائد خواتین جمع ہوگئیں اور مائکرو فائنانس کمپنیوں کی ہراسانی کے خلاف احتجاج کیا، اور ضد پر اڑگئیں کہ چاہے کچھ بھی ہوجائے وہ قرضہ واپس نہیں لوٹائیں گی۔

خواتین کے احتجاج کی اطلاع ملنے پر تحصیلدار ایم آر کلکرنی اور شہری پولیس تھانے کے پی ایس آئی مادیش نے موقع پر پہنچ کر حالات کا جائزہ لیا۔ احتجاج میں شامل زیادہ تراقلیتی طبقے کے خواتین نے گھروں پر ان کے شوہر کی غیر موجودگی میں فائنانس کمپنی والوں کی طرف سے آنے اور دھمکیاں دینے کے خلاف نعرے بازی کی۔

بتایا جاتا ہے کہ سرسی اور سداپور کے علاقوں میں سرگرم ان مائکرو فائنانس کمپنیوں کی جانب سے %23سود وصول کیا جاتا ہے۔احتجاجی خواتین کا کہنا ہے کہ پہلے جھوٹی رعایتوں دکھا کر عورتوں کو قرضے لینے پر آمادہ کیا جاتا ہے پھر بھاری شرح پر سود وصول کیا جاتا ہے اورسود کی ادائیگی میں تاخیر ہونے پر ہراساں کیا جاتا ہے۔خواتین نے مطالبہ کیا ہے کہ اسسٹنٹ کمشنر کو جو میمورنڈم دیا گیا ہے اس کے مطابق ان کمپنیوں کے خلاف کارروائی کی جانی چاہیے۔

اس موقع پر اسسٹنٹ کمشنر ڈاکٹر ایشور اولا گڈی نے قرض دار خواتین اور مائکروفائنانس کے ذمہ داروں کو اپنے دفتر میں طلب کرکے معاملے کو سلجھانے کی کوشش کی، مگر احتجاجی خواتین نے کسی بھی قیمت قرض لی گئی رقم ادا کرنے سے انکار کردیا۔ہنگامہ آرائی کی نوبت آنے پر دوسرے دن خصوصی میٹنگ طلب کرنے کا فیصلہ کیا۔اس کے علاوہ قرض دینے والے اداروں کے ذمہ داروں کو یہ ہدایت کی گئی کہ وہ قرض دار خواتین کو کسی بھی قسم سے پریشان کرنے کی کوشش نہ کریں۔ انہیں یہ بھی بتادیا گیا کہ%23اور %24سود وصول کرنا غیر قانونی بات ہے۔ اس کے علاوہ ضلع میں انتخابی ضابطہ اخلاق جاری ہے اس لئے کسی بھی قسم کی ہنگامہ آرائی اور غنڈہ گردی سے پرہیز کیا جائے۔اگلے قدم کے طور پر تحریری نوٹس دینے کے بعد پولیس کو اپنی کارروائی کرنا ہوگا اور گھر میں تنہا عورتیں رہتے وقت وہاں جاکرکسی بھی حالت میں تنگ کرنے پر قانونی کارروائی کی جائے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

منڈگوڈ میں تبت کے روحانی پیشوا دلائی لامہ  : دھرم کے نا م پر فساد ات میں اضافہ قابل تشویش

بودھ کا مطالعہ مسلسل کریں گے تو ہی اگلی صدی تک بودھ دھرم کی تہذیب کا عام ہونا ممکن ہے، صدیوں سے جاری نالندہ کی روایات کا تحفظ کرتے ہوئے اس کی پرورش جاری رکھنا فخر کی بات ہے۔  تبت کے دھرم گرو دلائی لامہ نے ان خیالات کااظہار کیا۔

کاروار میں  بحرہ ٔ عرب کا  ساحل 175میٹر پیچھے !: آبی حیات کے لئے خطرے کی گھنٹی

1932کے بعد بحرہ ٔ عرب 175میٹر پیچھے چلا گیا ہے اور زمین پر ریت لاکر انڈیل دی ہے، جس کے نتیجےمیں کاروار شہر کے اطراف قریب 150ہیکٹر زمینی علاقہ بن گیا ہے۔ ان حالات کی وجہ سے آبی حیات کو خطرہ درپیش ہونے کا ماہرین نے انتباہ دیاہے۔

گلف کمیٹی شمشی کے زیراہتمام دبئی میں گیٹ ٹو گیدر کا انتظام

ہوناور کے شراوتی ندی کنارے بسا ایک خوبصورت چھوٹا سا گاؤں  شمشی سے روزگار کے لئے یونائیٹیڈ  عرب ایمریٹس(یو اے ای )  آکر مقیم   ممبران کے لئے’ گلف کمیٹی شمشی‘ کے زیر اہتمام  دبئی کے الراشیدیہ پارک میں 13دسمبر 2019بروز جمعہ کو گیٹ ٹو گید ر کا انتظام کیاگیا تھا۔

بھٹکل انجمن حامئی مسلمین کی سبکدوش انتظامیہ سے نئی انتظامیہ کے لئے 10ارکان منتخب

انجمن حامئی مسلمین بھٹکل کی سبکدوش ہونے والی مجلس انتظامیہ سے نئی مجلس انتظامیہ 2020-2024تک کے لئے 10اراکین کا انتخاب 14دسمبر 2019بروز سنیچر کو عمل میں آیا ۔ انجمن کے ناظم انتخابات محمد اسحق شاہ بندری کی طرف سے جاری کردہ پریس ریلیز کے مطابق کل 95.5فی صد پولنگ ریکارڈ کی گئی ۔ سبکدوش ...

میڈیا کی پیش کردہ تصویر سے کوسوں دورہے میرا شہر بھٹکل :  سرکاری اسپتال کی میڈیکل آفیسر ڈاکٹر سویتا کا تجربہ

برائیوں میں ڈوبی دنیا میں آج بھی  انسانیت ہے،ایسی ہی ایک زندہ مثال میرےاپنے امن وامان کے لئے مشہور  شہر بھٹکل میں خود میرے ساتھ پیش آئی ہے ،جب کہ میرے اس شہر کے متعلق میڈیا ہزار باتیں لکھتا ہےاور جو دکھاتا ہے وہ اس سے کوسو ں دور ہے۔ بھٹکل سرکاری اسپتال کی میڈیکل آفیسر ڈاکٹر ...

بھٹکل نیشنل ہائی وے پر تیزرفتار بس، لاری سے ٹکراگئی؛ 25 سے زائد زخمی

یہاں وینکٹاپور نیشنل ہائی وے 66 پر ایک تیز رفتار بس، پارک کی ہوئی لاری سے  ٹکراگئی جس کے نتیجے میں بس پر سوار 25 سے زائد مسافر زخمی ہوگئے، جن میں سے دو کو کنداپور اور باقی کو بھٹکل سرکاری اسپتال میں داخل کیا گیا ہے۔

  وزیر داخلہ امت شاہ کی پراسرار ’تسلی‘ کہا؛   ہندوستانی مسلمان، ہندوستانی تھے اور آئندہ بھی رہیں گے

وزیر داخلہ امت شاہ نے بدھ کو متنازعہ شہریت ترمیمی بل کو راجیہ سبھا میں بحث کے لیے پیش کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کے مسلمان ہندوستانی شہری تھے، ہیں اورآئندہ بھی رہیں گے۔پاکستان، بنگلہ دیش اور افغانستان کے غیر مسلم تارکین وطن کو بھارتی شہریت فراہم کرنے کی فراہمی والے اس بل کو پیش ...