شاہین باغ مظاہرین کی امت شاہ سے نہیں ہو پائی ملاقات، پولیس کے سمجھانے کے بعد ہوئے واپس

Source: S.O. News Service | Published on 17th February 2020, 12:09 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،16/فروری (ایس او نیوز/ایجنسی) شاہین باغ کے مظاہرین اتوار کو وزیر داخلہ امت شاہ سے ملاقات نہیں کر پائے، مظاہرین نے امت شاہ سے ملنے کے لئے مارچ شروع کیا، لیکن پولیس نے روک لیا اور پھر پولیس سے بات چیت کے بعد مظاہرین لوٹ گئے، دراصل پولیس نے مظاہرین کو مارچ کی اجازت نہیں دی تھی۔ اس سے پہلے پولیس نے مظاہرین سے یہ پوچھا تھا کہ ان کی طرف سے وزیر داخلہ امت شاہ سے ملنے کے لئے وفد میں کون کون شامل ہے۔ مظاہرین نے پولیس سے کہا تھا کہ ان کا کوئی نمائندہ نہیں ہے، ایسے میں تمام لوگ وزیر داخلہ سے ملنے جائیں گے، اس کے بعد پولیس نے مظاہرین کی مارچ کی اجازت دینے سے انکار کر دیا۔

ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر کمار گنیش نے کہا کہ شاہین باغ میں صورتحال کنٹرول میں ہے، انہوں نے بتایا کہ مظاہرین بیریكیڈس تک آئے تھے، ان سے ملاقات کا لیٹر مانگا گیا تو انہوں نے نہیں دکھایا، پھرسمجھانے کے بعد مظاہرین واپس لوٹ گئے۔

اس سے پہلے ڈپٹی کمشنر ساؤتھ ایسٹ آر پی مینا نے کہا کہ شاہین باغ کے مظاہرین نے ہمیں بتایا کہ وہ وزیر داخلہ امت شاہ سے ملنے کے لئے مارچ نکالنا چاہتے ہیں، انہوں نے کہا کہ مظاہرین کو اس کی اجازت نہیں دی گئی، کیونکہ ان کے پاس ملاقات کرنے کے لئے وزیر داخلہ کی طرف سے کوئی لیٹر نہیں تھا، دہلی پولیس نے سنیچر کی رات شاہین باغ کے مظاہرین سے فہرست مانگی تھی کہ جو لوگ وزیر داخلہ سے ملنے جانا چاہتے ہیں، ان کے نام دے دیں۔

ایک نجی چینل کو دیئے انٹرویو میں وزیر داخلہ امت شاہ نے کہا تھا کہ جنہیں بھی سی اے اے پر کوئی شک ہے وہ مجھ سے ملنے کے لئے آ سکتے ہیں، وزیر داخلہ امت شاہ کے اسی بیان کے بعد مظاہرین نے ان سے ملنے جانے کا اعلان کیا تھا۔

غور طلب بات یہ ہے کہ دو ماہ سے شاہین باغ میں شہریت ترمیمی قانون کی مخالفت میں مظاہرہ جاری ہے، مظاہرین اپنے مطالبے پر اڑے ہوئے ہیں، ان کا مطالبہ ہے کہ مرکز کی مودی حکومت سی اے اے کو واپس لے۔ ادھر، مودی حکومت کا کہنا ہے کہ وہ کسی بھی قیمت پر سی اے اے کو وپاس نہیں لے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

کانپور انکاؤنٹر: وکاس دوبے کادوست گرفتار، کہا تھانے سے فون آنے کے بعدہوئی واردات

کانپور میں 8 پولیس اہلکاروں کے قتل کے معاملے میں پولیس کو بڑی کامیابی ملی ہے۔ قتل کیس کے مرکزی ملزم گینگسٹر وکاس دوبے کے ایک انعامی ساتھی کوکلیان پور میں تصادم کے بعد پولیس نے گرفتار کرلیا۔