مظفر نگر: کسانوں اور بی جے پی کارکنوں میں تصادم ، کئی افراد زخمی،26فروری کو مہاپنچایت کا اعلان

Source: S.O. News Service | Published on 23rd February 2021, 12:39 PM | ملکی خبریں |

مظفر نگر،23؍فروری(ایس او نیوز؍ایجنسی)مظفر نگر کے سیاسی طور پر بااثر گاوں سورم میں پیر کے روز بی جے پی کارکنوں اور کسانوں کے درمیان پرتشدد تصادم کا واقعہ پیش آیا جس کے بعد علاقے میں حالات کشیدہ ہیں۔ اس تصادم میں نصف درجن سے زیادہ لوگ زخمی ہوئے ہیں۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ تصادم مرکز کی مودی حکومت میں وزیر سنجیو بالیان کی موجودگی میں ہوا۔ گاوں والوں کا الزام ہے کہ سنجیو بالیان کے خلاف ماحول دیکھ کر ان کے حامیوں نے کسانوں پر لاٹھی ڈنڈوں سے حملہ کر دیا۔ اس واقعہ سے ناراض ہزاروں کسانوں نے تھانہ کا گھیراو کیا اور نعرے بازی بھی کی۔ تازہ ترین اطلاعات کے مطابق آئندہ 26 فروری یعنی بروز جمعہ سورم گاوں میں مہاپنچایت کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔ کچھ چشم دید افراد کے مطابق سورم گاوں میں کسانوں نے وزیر اور مقامی رکن پارلیمنٹ سنجیو بالیان کے پہنچنے کے بعد کسان ایکتا زندہ باد اور بی جے نیتا واپس جاو کا نعرہ بلند کرنا شروع کر دیا تھا-

اس نعرہ بازی سے وزیر سنجیو بالیان کے حامی مشتعل ہو گئے اور دونوں فریقین میں مار پیٹ ہو گئی۔ اس کے فورا بعد سورم میں پنچایت شروع ہو گئی اور خبر لکھے جانے تک ہزاروں کی تعداد میں کسانوں نے شاہ پور تھانہ کا گھیراو شروع کر دیا-

معاملہ طول پکڑ چکا ہے اور علاقے میں کافی گہما گہمی بھی دیکھنے کو مل رہی ہے-

ایک نظر اس پر بھی

سرتاج مدنی کی نظربندی 6 ماہ بعد ختم

پی ڈی پی کے سینئر لیڈر اور سابق ڈپٹی اسپیکر سرتاج مدنی کو 6 ماہ بعد ہفتے کے روز پولیس حراست سے رہا کیا گیا ہے۔ سرتاج مدنی کی رہائی کا یہ حکومتی فیصلہ اس وقت آیا ہے جب مرکزی حکومت جموں وکشمیر کی سیاسی جماعتوں کو ایک میٹنگ میں شرکت کرنے کے لئے دلّی آنے کی دعوت دے رہی ہے۔