فوج میں خواتین کو مستقل کمیشن: احکامات کی عمل آوری کے لئے مرکز کو ایک ماہ کی مہلت

Source: S.O. News Service | Published on 7th July 2020, 9:32 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،7؍جولائی(ایس او نیوز؍ایجنسی) سپریم کورٹ نے ہندوستانی فوج میں خواتین افسران کو مستقل کمیشن اور کمانڈ پوسٹ سے متعلق اپنے احکامات کو نافذ کرنے کے لئے مرکزی حکومت کو مزید ایک ماہ کی مہلت دی ہے۔ جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی سربراہی میں ڈویژن بنچ نے منگل کے روز مرکزی حکومت کی درخواست پر غور کرتے ہوئے ایک ماہ کی مہلت دی۔ عدالت نے اس بار کورونا بحران کے پیش نظر یہ وقت دیا ہے۔ وزارت دفاع کے توسط سے مرکزی حکومت نے عدالت سے کم سے کم چھ ماہ کی مہلت کی درخواست کی تھی۔

اس سے قبل سماعت کے دوران وزارت دفاع کی جانب سے پیش سینئر وکیل بالا سبرامنیم نے کہا کہ عدالت کے گزشتہ 17 فروری کے احکامات پر عمل درآمد کا فیصلہ آخری مراحل میں ہے۔ سبرامنیم نے بنچ کو بتایا کہ آفس آرڈر کسی بھی وقت جاری کیا جاسکتا ہے، لیکن کورونا کے پیش نظر مزید وقت دیا جانا چاہیے۔

وزارت دفاع نے کہا کہ کورونا وائرس کے حوالے سے لاک ڈاؤن کی وجہ سے دفاتر بند رہے تھے اور ملازمین کی حاضری کم تھی، لہذا عدالت کی جانب سے دیئے گئے تین ماہ کے عرصے میں اس پر عمل درآمد نہیں ہوسکا۔ بنچ نے خواتین فوجی افسران کی جانب سے پیش مینا کشی لیکھی سے پوچھا کیا سرکار کو مزید وقت دیاجانا چاہیے؟ اس پرمینا کشی لیکھی نے کہا کہ وقت دیا جاسکتا ہے لیکن اعلیٰ عدالت کو خود اس کی نگرانی کرنی چاہیے۔

خیال ر ہے کہ عدالت عظمیٰ نے 17 فروری کو اپنے حکم میں کہا تھا کہ تین ماہ کے اندر تمام خواتین افسران جو اس آپشن کا انتخاب کرنا چاہتی ہیں، انہیں فوج میں مستقل کمیشن دیا جانا چاہیے۔ عدالت عظمیٰ نے مرکز کی اس دلیل کو افسوسناک قراردیا تھا جس میں خواتین کو کمانڈ پوسٹ نہ دینے کے پیچھے جسمانی صلاحیتوں اور سماجی اقدار کا حوالہ دیا گیا تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

26جنوری کو ایس ڈی پی آئی کی جانب سے ملک بھر میں ’’کسان یکجہتی مارچ ‘‘

سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا(ایس ڈی پی آئی) قومی جنر ل سکریٹری الیاس محمد تمبے نے اپنے جاری کردہ اخباری بیان میں کہا ہے کہ 26جنوری 2021کو ہونے والے کسانوں کے احتجاج کی حمایت میں ایس ڈی پی آئی ملک بھر میں ’’کسان یکجہتی مارچ‘‘منعقد کرے گی۔

ہندوستان – چین فوج کے درمیان سکم میں ہوا تھا معمولی تصادم، مقامی کمانڈروں نے معاملے کو کیا حل : ہندوستانی فوج

ہندوستان اور چین آرمی کے مابین سکم میں معمولی تصادم کی خبریں سامنے آ رہی ہیں۔ ایل اے سی پر دونوں فوجوں کے مابین تصادم 20 جنوری کو سکم کے علاقے ناکو لا میں ہوا تھا۔ یہ معاملہ مقامی کمانڈروں کی سطح پر حل کیا گیا ہے۔

ٹریکٹر پریڈ کی تیاری: 30 ہزار ٹریکٹر ٹکری ، سنگھو اور غازی پور بارڈر پہنچے ، رکاوٹیں ہٹالی گئیں

 کسانوں کی تنظیموں اور دہلی پولیس کے 26 جنوری کو ٹریکٹر پریڈ پر مبینہ اتفاق کے بعد سنگھو اور ٹکری بارڈر پر ٹریکٹر مارچ کی تیاریاں زوروں پر ہیں۔ پنجاب اور ہریانہ سے ٹریکٹروں کی آمد کا سلسلہ بھی جاری ہے۔