سی اے امتحان: سپریم کورٹ کے ذریعہ نیا نوٹیفکیشن جاری کرنے کی ہدایت

Source: S.O. News Service | Published on 30th June 2020, 12:41 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،30؍جون(ایس او نیوز؍ایجنسی) سپریم کورٹ نے کورونا وبا کی بھیانک صورت حال کے پیش نظر 29 جولائی سے 16 اگست تک ہونے والے چارٹرڈ اکاؤنٹنیسی کے امتحان کے لئے ’آپٹ آؤٹ‘ منصوبہ کو مزید آسان بنانے اور اس ضمن میں نیا نوٹیفیکشن جاری کرنے کی انسٹی ٹیوٹ آف چارٹرڈ اکاؤنٹنٹس آف انڈیا (آئی سی اے آئی) کو ہدایت دی۔

جسٹس اے ایم کھانولکر، جسٹس دنیش مہیشوری اور جسٹس سنجیو کھنہ پر مشتمل ڈویزن بنچ نے معاملے کی اگلی سماعت 2 جولائی تک ملتوی کردی۔ جسٹس کھانولکر نے کہا کہ چونکہ وبائی صورتحال ’مستحکم‘ نہیں ہے بلکہ ہر لمحے تبدیل ہو رہی ہے لہذا آپٹ آؤٹ اسکیم کو زیادہ لچکدار بنایا جائے اور اس کے آپشنز کو کھلا رکھا جائے۔

درخواست گزار ’انڈیا وائڈ پیرینٹس ایسوسی ایشن‘ کی جانب سے پیش ہونے والے، وکیل الکھ الوک سریواستو نے دلیل دی کہ بہت سے طلبا جو کنٹونمنٹ زون میں ہیں اور ایسے امیدوار بھی ہیں جن کی ریاستی حکومتوں نے لاک ڈاؤن میں اضافہ کیا ہے۔ انہوں نے اس ضمن میں مغربی بنگال کی مثال بھی پیش کی۔

سینئر ایڈوکیٹ رام جی سرینواسن نے، جو آئی سی اے آئی کی طرف سے پیش ہوئے، نے کہا کہ ملک بھر میں 500 امتحانی مراکز قائم کر دیئے گئے ہیں جنہیں مکمل طور پر سینٹائز کیا گیا ہے اور امیدواروں کے لئے صفائی کے بہتر انتظامات کیے گئے ہیں۔ اب امتحانی مرکز تبدیل کرنا مشکل ہوگا۔ اس پر عدالت نے متعدد منطقی سوالات اٹھائے، اور نیا نوٹیفکیشن جاری کرنے کی ہدایت کی تاکہ آپٹ آؤٹ پلان کو لچکدار بنایا جاسکے اور سماعت کے لئے 2 جولائی کی تاریخ مقرر کی۔ درخواست گزار نے 29 جولائی سے 16 اگست تک آئی سی اے آئی کے ذریعہ ہونے والے سی اے امتحان کے لئے آپٹ آؤٹ آپشن منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

غیر ملکی تبلیغی جماعتیوں کی عرضی پر سماعت 10 جولائی تک ملتوی

سپریم کورٹ نے تبلیغی جماعت کے پروگرام میں حصہ لینے والے 34غیر ملکی جماعتیوں کی عرضیوں پر سماعت 10 جولائی تک کے لئے ملتوی کردی اور کہا کہ انہیں اپنے ملک بھیجنے کے معاملے میں وہ مداخلت نہیں کرے گا، بلکہ بلیک لسٹ میں ڈالے جانے کے معاملے پر سماعت کرے گا۔