پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں اضافہ سے عوام پریشان

Source: S.O. News Service | Published on 19th October 2021, 11:45 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، 19؍اکتوبر(ایس او نیوز)عالمی سطح پر خام تیل کی قیمتیں نچلی سطح پر ہیں۔اس کے باوجود غیر مناسب طور پر مرکزی حکومت پٹرول وڈیزل کے نرخوں میں اضافے کرتے ہوئے ملک کے عوام کو چوٹوں پر داغنے کا کام کررہی ہے۔ اس بات کا الزام ویلفیئر پارٹی آف انڈیا کے ریاست صدر اڈوکیٹ طاہر حسین نے لگایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈیزل کی قیمتیں 100 روپے سے تجاوز کر گئی ہیں۔ جبکہ خام تیل کی قیمت بہت کم ہے، پٹرول اور ڈیزل فی لیٹر 100 روپئے سے عبور کرچکا ہے۔ وزیر اعظم مودی کے اقتدار میں لاکھوں کروڑوں روپے ٹیکس اکٹھے کیے گئے ہیں،اس کے باوجود عوام کی زندگیوں میں راحت پہنچانے والی ایک بھی اسکیم تشکیل نہیں دی گئی ہے۔ اس طرح سے عوام کے پیسے لوٹنے والی آپ کی سرکار پر لعنت ہے۔ آنے والے دنوں میں مرکزی حکومت پٹرول ڈیزل کی قیمت میں 200 روپے کا اضافہ کردے گی، یہ بھی حیرت کی بات نہیں۔ حد سے زیادہ خود اعتمادی بھی صحت کیلئے مضر ہوتی ہے، ایسا ہی کچھ بی جے پی سمجھ رہی ہے۔ خود بی جے پی پارٹی میں ہی تیل کی قیمتوں میں اضافے پر کافی ناراضگی دیکھی جارہی ہے لیکن کسی کو کھل کر کہنے کی ہمت نہیں ہے۔ریاست کی نمائندگی کرنے والے ہمارے رکن پارلیمان بھی عوام کے مسائل پر بولنے کیلئے تیار نہیں ہیں۔ ووٹ دینے والے عوام کے مسائل کے ساتھ اس طرح کی بے رخی کرنا ٹھیک نہیں ہے۔رکن پارلیمان ریاست کی کٹھ پتلی بن چکے ہیں۔محض زہریلے بیج کے پودے لگانے میں ملوث ایسی سرکار پر لعنت ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ یہ افسوس کی بات ہے کہ ریاستی حکومت تیل پر ٹیکس کم کرتے ہوئے عوام کے بوجھ کو کم کرنے پر توجہ نہیں دے رہی ہے۔ قیمتوں میں اضافے سے ریاست اور ملک میں غیر اطمینانی کی لہر دوڑ رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ایک عالمی مطالعے نے ثابت کیا ہے کہ بھوک انڈیکس میں ہندوستان 101 ویں نمبر پر ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

جے ڈی ایس امیدواروں کی جیت کے ذریعے پارٹی کارکن اپنی طاقت کا مظاہرہ کریں: انیتاکمارسوامی

بنگلورو دیہی لوکل باڈیز حلقے سے ریاستی قانون ساز کونسل کیلئے ہورہے انتخابات کو جے ڈی ایس پارٹی نے سنجیدگی سے لیاہے اور اس انتخابات میں پارٹی امیدواروں کوکامیاب کرکے پارٹی کارکنوں کو اپنی طاقت کا مظاہرہ کرناہوگا۔یہ بات رکن اسمبلی انیتاکمار سوامی نے کہی۔

منگلورو : طلبہ کے درمیان گروہی تصادم - کئی طلبہ ہوئے زخمی -  پولیس نے مارا ہاسٹل پر چھاپہ - 6 طالب علم گرفتار ۔ مقامی لوگوں کا احتجاج ۔ ہاسٹل خالی کروانے کا مطالبہ  

شہر کے ایک ڈگری کالج میں زیر تعلیم اور گوجرکیرے علاقے میں واقع ہاسٹل میں قیام پزیر طلبہ کے دو گروہ آپس میں لڑ پڑے جس کے نتیجے میں بعض طلبہ زخمی بھی ہوگئے ۔ مار پیٹ اور تصادم کی اطلاع ملنے پر پولیس نے دیر رات ہاسٹل پر چھاپہ مار کر کئی طالب علموں کو گرفتار کر لیا ۔

چامنڈی پہاڑ پر زمین کھسکنے کے واقعات: نندی مجسمے کے راستے کو پیدل چلنے والے راستہ میں تبدیل کرنے اپیل

گزشتہ چند دنوں سے میسورو ضلع میں مسلسل بارشوں کی وجہ سے میسور کے قریب واقع چامنڈی پہاڑ پر زمین کھسکنے کے واقعات پیش آرہے ہیں جس کی وجہ سے پہاڑ پر واقع چامنڈیشوری دیوی کے درشن کو پہنچنے والے زائرین کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔