ملک بھر کے سیلاب متاثرہ علاقوں میں راحت اور باز آبادکاری کا کام تیز

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 25th August 2019, 11:33 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،25؍اگست (ایس او نیوز؍یو این آئی)   ملک کے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں پانی کے تیزی سے گھٹنے کے بعد امدادی کاموں کو تیز کر دیا گیا ہے اور راحت مراکز میں پناہ لینے والے لوگ اپنے اپنے گھروں کو لوٹ کر بحالی کے کام میں لگ گئے ہیں۔

سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں فوج اور نیشنل ڈیزاسٹر ریلیف فورس (این ڈی آر ایف) ریاست کی مختلف ایجنسیوں کے تعاون سے ریلیف اور ریسکیو آپریشن میں مصروف عمل ہیں۔ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں صورت حال تیزی سے بہتر ہو رہی ہے۔ اس دوران ملک کے مختلف حصوں میں ہونے والی موسلا دھار بارش اور بادل پھٹنے کے سبب سیلاب اور مٹی کے تودے گرنے کے واقعات میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد بڑھ کر 386 تک پہنچ گئی ہے جبکہ 23 دیگر افراد اب بھی لاپتہ ہیں۔

اس سال بارش اور سیلاب سے شمالی ہند کے ہماچل پردیش، اتراکھنڈ اور پنجاب سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں جبکہ اس سے پہلے کے دور میں ہونے والی بارش اور سیلاب سے جنوبی ہندوستان کے کیرالہ اور کرناٹک سب سے زیادہ سنگین طور پر زد میں آئے تھے۔ ہماچل پردیش میں بارش، سیلاب اور مٹی کے تودے گرنے کے واقعات میں اب تک 63 اور اتراکھنڈ میں 62 افراد کی موت ہوئی ہے جبکہ چھ دیگر لاپتہ ہیں۔

جنوبی ہندوستان کے کیرالہ اور کرناٹک کے کچھ حصوں میں سیلاب اور مٹی کے تودے گرنے کی وجہ سے سب سے زیادہ نقصان ہوا ہے۔ کیرالہ میں اب تک 125 افراد ہلاک ہوئے جبکہ 17 افراد اب بھی لاپتہ ہیں، کرناٹک میں 62، گجرات میں 35، مہاراشٹر میں 30، اڑیسہ میں آٹھ اور آندھرا پردیش میں کشتی پلٹنے سے ایک لڑکی کی موت ہو چکی ہے۔ اس کے علاوہ مغربی بنگال میں بھاری بارش کے درمیان بجلی گرنے سے کم از کم 8 افراد کی جانیں گئی ہیں۔

اس درمیان سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں ممبران پارلیمنٹ اور مرکزی وزراء کے دورے تیز ہو گئے ہیں۔ فوڈ پروسیسنگ صنعت کی مرکزی وزیر مملکت ہ سمرت کور بادل نے جمعہ کو پنجاب کے سیلاب سے متاثر گاؤں میں خوردنی اشیا اور مشروبات تقسیم کیے اور پنجاب کی کانگریس حکومت کو اس کے لئے مرکزی حکومت کی جانب سے مختص 474 کروڑ روپے فوری طور پر جاری کرنے کے لئے کہا۔

فلور کے ميووال گاؤں اور بعد میں سلطان پور لودھی کے تكھيا اور باڑہ جودھ سنگھ گاؤں میں ان کی اپیل پر متعدد فوڈ پروسیسنگ کی کمپنیوں کی جانب سے عطیہ کی گئی امدادی سامان تقسیم کرنے کے بعد لوگوں کے ساتھ بات چیت میں ہرسمرت کور بادل نے کہا ’’میں واہے گرو سے آپ کی بھلائی کے لئے دعا کرتی ہوں۔ مجھے افسوس ہے کہ آپ کے گھر اور چولہے تباہ کن سیلاب سے خطرے میں پڑ گئے ہیں‘‘۔

اس دوران اتراکھنڈ کے ضلع اترکاشی میں ڈیزاسٹر ریلیف کے کام میں مصروف ایک ہیلی کاپٹر کو اچانک ایمرجنسی لینڈنگ کرنی پڑی۔ پائلٹ کو ہلکی چوٹیں آنے کے ساتھ ہی ہیلی کاپٹر خراب ہوا ہے۔ یہ ہیلی کاپٹر متاثرہ علاقے میں امدادی سامان پہنچا رہا تھا۔ غنیمت رہی کہ اس دوران کوئی بڑا حادثہ نہیں ہوا۔

مسطح میدان نہ ہونے کی وجہ سے انہیں دریا کے کنارے پتھروں پر ہی لینڈنگ کرنی پڑی۔ غنیمت رہی کہ اس دوران کوئی حادثہ نہیں ہوا۔ پائلٹ سوشانت جینا رہائشی جبل پور اور کو پائلٹ اجیت سنگھ، رہائشی ہریانہ کو اراكوٹ پہنچایا گیا، جہاں سے ہیلی کاپٹر کے ذریعہ انہیں دہرادون لے جایا گیا۔

ضلع مجسٹریٹ ڈاکٹر آشیش چوہان نے بتایا کہ ہیلی کاپٹر کی ایمرجنسی لینڈنگ کیوں کرائی گئی ان کے پاس صحیح رپورٹ نہیں آئی ہے۔ غور طلب ہے کہ ان تاروں کی وجہ سے 21 اگست کو بھی علاقے میں ایک ہیلی کاپٹر گر کر تباہ ہوا تھا جو متاثرہ اراكوٹ نیائے پنچایت علاقے کے مولڈی گاؤں میں امدادی سامان ڈراپ کرکے واپس لوٹ رہا تھا اور اچانک کریش ہو گیا۔ باغات سے سیب کی پیٹیاں مین روڈ تک سامان پہنچانے کے لیے لگائی گئی ٹرالی کی تاروں میں ہیلی کاپٹر کے الجھنے سے یہ حادثہ ہوا۔ اس میں سوار پائلٹ، کو-پائلٹ اور ایک مقامی شخص کی موت ہو گئی تھی۔

پنجاب میں جالندھر کے ضلع ڈپٹی کمشنر ویرندر کمار شرما نے آبپاشی اور نکاسی آب محکمہ کو ہدایت دی ہے کہ ستلج پشتہ میں آئی 350 فٹ شگاف کو ہفتہ تک مکمل طور پر بند کیا جائے۔ انہوں نے ایڈیشنل ضلع ڈپٹی کمشنر جسبیر سنگھ کے ساتھ ميووال میں پشتے کی مرمت کے کام کا سروے کیا۔ انہوں نے حکام سے کہا کہ ہفتہ تک 350 فٹ شگاف کو بھر دیا جائے۔

اس موقع پر نکاسی آب سیکشن کے چیف ایگزیکٹیو انجینئر دیوندر سنگھ نے ضلع ڈپٹی کمشنر کو بتایا کہ 350 فٹ چوڑے شگاف میں سے 170 فٹ شگاف کو بند کر دیا گیا ہے اور ہفتہ صبح تک باقی کام بھی مکمل کر لیا جائے گا۔

محکمہ موسمیات کے مطابق مغربی بنگال میں گنگا کے ساحلی علاقوں، بہار اور جھارکھنڈ میں مختلف مقامات پر آئندہ 12 گھنٹوں کے دوران گرج چمک کے ساتھ بوچھاریں پڑ سکتی ہیں۔ جنوب مغرب میں بحیرہ عرب، جنوب مشرق میں خلیج بنگال، شمالی بحیرہ عرب اور انڈمان و نکوبار جزائر کے ساحلی علاقوں میں 45-55 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے تیز هوائیں چلنے کے آثار ہیں جس کی وجہ سے ماہی گیروں کو اگلے 12 گھنٹوں کے دوران ان علاقوں میں ماہی گیری نہ کرنے کا مشورہ دیا گیا ہے۔

جنوب مغربی مانسون تلنگانہ، ساحلی کرناٹک اور کیرالہ میں سرگرم ہے۔ یہ ذیلی ہمالیائی مغربی بنگال، سکم، ہریانہ، پنجاب، ہماچل پردیش، جموں و کشمیر، راجستھان اور گجرات کے علاقے میں کمزور ہوا ہے۔

اڑیسہ کے مختلف مقامات پر زیادہ سے بہت زیادہ بارش جبکہ آسام، میگھالیہ، ناگالینڈ، منی پور، میزورم، تری پورہ، جھارکھنڈ، چھتیس گڑھ، ساحلی آندھرا پردیش اور ينم، تلنگانہ، تمل ناڈو، ساحلی اور جنوبی اندرونی کرناٹک، کیرالہ، مغربی بنگال کے گنگائی علاقے، مشرقی اترپردیش، مدھیہ پردیش، سوراشٹر ،کچھ اور ودربھ میں مختلف مقامات پر بھاری بارش ہونے کا امکان ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بہار میں این آر سی معاملہ پر بی جے پی میں ہی اختلاف

بہار میں حزب اقتدار جنتا دل یونائٹیڈ ( جے ڈی یو) کے ساتھ نائب وزیراعلیٰ اور بھارتیہ جنتا پارٹی ( بی جے پی ) کے سنیئر لیڈر سشیل کمار مودی جہاں ریاست میں قومی سٹیزن رجسٹر (این آر سی) کے مخالف ہیں وہیں نتیش حکومت کے محصولات اور اصلاحات اراضی اور بی جے پی لیڈر رام نارائن منڈل نے کہا کہ ...