کسانوں کی ٹریکٹر ریلی پر سپریم کورٹ کا پھر مداخلت سے انکار؛کہا؛ یہ پولیس کے دائرہ اختیار کا معاملہ ہے

Source: S.O. News Service | Published on 20th January 2021, 8:48 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،20/جنوری (آئی این ایس انڈیا) 26 جنوری کو ہونے والی کسانوں کی  ٹریکٹر ریلی سے متعلق دہلی پولیس کی درخواست پر سپریم کورٹ نے ایک بار پھر کہا  کہ دہلی پولیس کو ریلی سے متعلق فیصلہ لینے کا اختیار ہے۔ سولیسٹر جنرل  نے جب بحث کا آغاز کیا اور 25 جنوری کو کیس کی سماعت کرنے کو کہا تو  چیف جسٹس نے سولیسٹر جنرل کو بتایا کہ ہم پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ یہ معاملہ پولیس کا ہے۔ ہم اس معاملے میں کوئی حکم نہیں دیں گے۔ آپ بطور اتھارٹی آرڈر جاری کریں۔

سینئر ایڈوکیٹ پرشانت بھوشن نے کہا کہ وہ اپنی ٹریکٹر ریلی کے ساتھ یوم جمہوریہ منانے جارہے ہیں اور ماحول کو خراب نہیں کریں گے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ براہ کرم دہلی کے شہریوں کو امن وشانتی کا یقین دلائیں۔ بطور عدالت ہم اپنی تشویش کا اظہار کر رہے ہیں۔بھوشن نے کہا کہ کسانوں نے کہا ہے کہ امن ہو گا۔

چیف جسٹس نے ٹریکٹر ریلی کے بارے میں کہا کہ بھوشن کو اپنے مؤکل سے بات کرنی چاہئے کہ ریلی پرامن کیسے ہوگی؟ سولیسٹر جنرل نے بتایا کہ کرنال کے کسانوں نے پنڈال توڑ دیا۔ نظم ونسق کو لے کر پریشانی ہوئی تھی۔ چیف جسٹس نے کہا کہ ہم اس پر اب کچھ نہیں کہنا چاہتے۔واضح رہے کہ کسان زرعی قوانین کے خلاف مستقل احتجاج کر رہے ہیں۔ اسی دوران 26 جنوری کو ٹریکٹر پریڈ کے بارے میں کسانوں اور پولیس کے مابین ایک میٹنگ ہوئی تھی۔

کسان رہنما درشن پال نے کہا کہ پولیس نے ہم سے راستے اور لوگوں کی تعداد کے بارے میں سوالات پوچھے۔ پولیس نے کہا ہے کہ آؤٹر رنگ روڈ پر پریڈ نکالنا پریشانی کا سبب بن سکتا ہے۔ ویسے دہلی پولیس نے پریڈ کی اجازت کے بارے میں ابھی تک کچھ نہیں کہا ہے۔ ہمارا پریڈ نکالنا یقینی ہے۔

واضح رہے کہ کاشتکاروں نے 26 جنوری کو دہلی پولیس سے پریڈ کے لئے تحریری اجازت طلب نہیں کی ہے۔ کسان رہنما راکیش ٹکیت نے بھی واضح طور پر کہا تھا کہ جب تک حکومت ہمارے مطالبات تسلیم نہیں کرتی اس وقت تک یہ تحریک جاری رہے گی۔ انہوں نے یوم جمہوریہ کے بارے میں بھی کہا تھا کہ اس بار یہ تاریخی ہوگا۔ ایک طرف جوان پریڈ کریں گے اور دوسری طرف کسان احتجاج کریں گے۔

ایک نظر اس پر بھی

ہریانہ میں سرکاری اداروں کو احتجاجاًدودھ100؍ روپے لیٹر بیچنے کی اپیل

زرعی قوانین  کے خلاف کسانوں کے احتجاج کو مودی حکومت  کے ذریعہ پوری طرح نظر انداز کردیئے جانے  کے  بعد احتجاج کا نیا طریقہ تجویز کرتے ہوئے ہریانہ کی کھاپ پنچایت نے کسانوں سے دودھ خریدنے والی سرکاری کوآپریٹیو سوسائٹیوں کو دودھ 100؍ روپے لیٹر فروخت کرنے کی اپیل کی ہے۔ یہ اپیل ...

پرشانت کشور نے پھر ممتا کی فتح کو یقینی قرار دیا، یہ چیلنج بھی دہرایا کہ زعفرانی پارٹی بنگال میں 2ہندسی عدد پار نہیں کرپائیگی

انتخابات کی تاریخوں کا اعلان ہوتے ہی ممتا بنرجی کی انتخابی مہم کی حکمت عملی تیار کرنے والے پرشانت کشور نے اپنے اس  چیلنج کو دہرایا ہے کہ مغربی بنگال میں ایک بار پھر ممتا بنرجی ہی اقتدارمیں واپس آئیں گی۔

کانگریس کی کمزوری پر سینئر لیڈروں کا درد پھر چھلک آیا، قیادت سے نالاں، کانگریس میں نئی جان پھونکنے کی ضرورت‘جموں میں منعقدہ ’شانتی سمیلن‘ سے سینئر کانگریس لیڈروں کا خطاب

آل انڈیا کانگریس پارٹی کے کئی سینئر لیڈروں نے آج کہا ہے کہ پارٹی گزشتہ ایک دہائی کے دوران بہت کمزور ہوگئی ہے اور اسے واپس ڈگر پر لانے کے لئے متحد ہوکر کوششیں کرنے کی ضرورت ہے۔