پی یو سی  دوم امتحانات غیر معینہ مدت تک ملتوی ، ایس ایس ایل سی امتحانات بھی ملتوی کرنے کا فیصلہ کیا جائے گا؟   وزیرتعلیم سریش کمار

Source: S.O. News Service | Published on 5th May 2021, 11:53 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،5؍ مئی (ایس او  نیوز ) ریاست کرناٹک  میں کورونا وائرس تیزی سے پھیل رہا ہے۔ اس لئے پی یوسی سال دوم کے سالانہ امتحان کو غیر معینہ مدت کے لئے ملتوی کر دیا گیا ہے ۔ ریاستی وزیر برائے  پرائمری و سکینڈ ری تعلیم سریش کمار نے  یہ فیصلہ کیا ہے ۔ ماہ جون میں منعقد ہونے والے ایس ایس ایل سی امتحانات سے متعلق بھی وز تعلیم سریش کمار کوفوری فیصلہ کر نے کئی لوگوں نے مطالبہ کیا ہے ۔ ریاست میں اس وقت کور و نا عروج پر ہے ۔ 21   جون سے ایس ایس ایل سی امتحان کے لئے ٹائم ٹیبل جاری کیا جاچکا ہے ۔ حالانکہ اکثر تعلیمی اداروں میں آن لائن کے ذریعہ نصاب مکمل کیا گیا ہے ۔لیکن کورونا وائرس کے اس دور میں امتحانات منعقد کرنا خطرے سے خالی نہیں ، اس لئے اکثر لوگ ایس ایس ایل سی امتحانات بھی ملتوی کرنے کا مطالبہ کر ر ہے ہیں ۔ چند لوگوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس وقت ایس ایس ایل سی امتحانات ملتوی کر کے کورونا وباء تھمنے کے فورا بعد اگر اچانک  امتحانات کا اعلان کر دیا گیا تو طلبا کو تیاری کرنے کا وقت نہیں ملے گا۔ اگر اس وقت درمیان میں مہلت دے دی گئی تو طلبہ بہت کچھ بھول جائیں گے ۔محکمہ تعلیمات عامہ اور متعلقہ وزیر کو اس پر بھی غور کرنا چاہئے ۔ اس وقت صرف پی یوسی دوم امتحانات ملتوی کر نے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔

اسی طرح ایس ایس ایل سی امتحانات سے متعلق بھی کوئی فیصلہ کرنا چاہئے ۔تمل ناڈو اور مہاراشٹرا میں ایس ایس ایل سی امتحانات ملتوی کردئے گئے ہیں ۔سی بی ایس سی بورڈ نے بھی امتحانات منسوخ کر دئے ہیں ۔ پچھلے سال بھی پڑویسی ریاستیں تمل ناڈواور تلنگانہ نے ایس ایس ایل سی امتحانات منسوخ کر دئے  تھے ۔لیکن ریاست کرناٹک میں وز رتعلیم سریش کمار نے ایس ایس ایل سی امتحانات منعقد کر وا کر نتائج کا اعلان بھی کروایا تھا۔لیکن اس مرتبہ کر نا ٹک میں کور و نا تیزی سے پھیل رہا ہے ۔اس لئے ایسے ماحول میں امتحانات منعقد کروانا انتظامیہ کے لئے محفوظ ہے اور نہ ہی طلبا کے لئے ۔ اس لئے محکمہ  تعلیمات عامہ کوایس  ایس ایل سی امتحانات کے انعقاد سے متعلق فوری فیصلہ کر نا چا ہئے ۔ پچھلی  مرتبہ کئے گئے اعلان کے مطابق 21 جون سے ایس ایس ایل سی امتحانات شروع ہونا چاہئے ۔ 21 جون سے ایس ایس ایل سی امتحانات منعقد ہوں گے یا ملتوی ہوں گے اس کا فیصلہ فوری کر نے ریاست کے کئی تعلیمی اداروں نے محکمہ سکینڈ ری تعلیم سے مطالبہ کیا ہے ۔ والدین اور سر پرستوں کا ایک گروپ ایس ایس ایل ہی امتحانات منسوخ کرنے کے حق میں ہے کیونکہ کورونا کے اس ماحول میں امتحانات منعقد کرنا خطرہ سے خالی نہیں۔ پڑوسی ریاستوں کی طرح امتحانات منسوخ کر کے پچھلی  کارکردگی کی بنیاد پرطلب کوترقی دینے کا مطالبہ کررہا ہے ۔ایک گروپ یہ  کہہ  رہا ہے کہ امتحانات کے بغیر طلبا کی پچھلی  کارکردگی کی بنیاد پر مارکس الاٹ کر نامناسب نہیں پچھلے دنوں اکثر طلبہ کی کارکردگی کمزور رہی ہوگی ، اس بنیا د پر مارکس الاٹ کر نا درست نہیں ۔

ایک نظر اس پر بھی

لوگ کورونا سے مرے جارہے ہیں اور ریاستی حکومت کو لگی ہے ذات پات کے اعداد و شمار کی فکر

پورے ملک کی طرح ریاست میں بھی کورونا کا قہر جاری ہے ۔ عوام آکسیجن، اسپتال میں بستر اور دوائیوں کی کمی سے تڑپ رہے ہیں۔ لیکن ریاستی حکومت کو الیکشن اور ذات پات کی تفصیلات کی فکر لاحق ہوگئی ہے تاکہ آئندہ انتخاب کے لئے تیاریاں مکمل کی جائیں۔

کورونا پر قابو پانے میں ایڈی یورپا مکمل طورپر ناکام: ایم بی پاٹل

ریاست میں کورونا وباء سے نمٹنے میں ایڈی یورپا کی بی جے پی حکومت مکمل ناکام ہوچکی ہے۔سابق ریاستی وزیر و مقامی بی ایل ڈی ای میڈیکل کالج کے سربراہ ایم بی پاٹل نے آج یہاں ایک اخباری کانفرنس کو خطاب کرتے ہوئے ڈنکے کی چوٹ پر یہ بات بتائی۔

کرناٹک میں 120ٹن لکویڈ آکسیجن کی آمد

ریاست کرناٹک میں میڈیکل آکسیجن کی قلت ہنوز جاری ہے۔ حکومت آکسیجن منگوانے کی ہر ممکن کوشش کرنے کا دعویٰ کررہی ہے۔ ریاست کی راجدھانی بنگلورو میں پہلی آکسیجن ایکسپریس کی آمد ہوئی۔

کرناٹک لاک ڈاؤن:اب تک 19949گاڑیاں ضبط

ریاست   میں کوروناوائرس کے بے تحاشہ پھیلاؤ کے سبب ریاست گیرلاک ڈاؤن نافذکیاگیاہے،تاکہ کوروناپرقابوپاجائے۔لاک ڈاؤن کے دوران کسی بھی سوری کوسڑک پراترنے کی اجازت نہیں ہے۔اس قسم کی سختی کے باوجودبہت سارے لوگ گاڑیوں میں گھومتے ہوئے نظرآئے،خلاف ورزی کی پاداش میں پولیس سواریوں ...

تیجسوی سوریاریاست کیلئے زہریلابیج ہے:ڈی کےشیوکمار

ریاست کرناٹک  میں کووڈکے معاملات میں ہرگزرتے دن کے ساتھ اضافہ ہورہاہے،اس دوران وزیراعلیٰ نے تیسری لہرپرقابوپانے کی تیاری کرنے کی صلاح دی ہے۔پہلے کووڈکی دوسری لہرپرقابوپانے کی کوشش کرے پھرتیسری لہرپرقابوپانے کی بات کریں۔یہ باتیں کے پی سی سی صدرڈی کے شیوکمارنے کہی۔