سنجے راؤت نے ’مہا وکاس اگھاڑی‘ حکومت کو بتایا ’منی یو پی اے‘، راہل گاندھی سے کریں گے ملاقات

Source: S.O. News Service | Published on 7th December 2021, 10:27 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی؍ ممبئی،7؍دسمبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) کانگریس رکن پارلیمنٹ راہل گندھی سے ملاقات سے قبل شیوسینا رکن پارلیمنٹ اور پارٹی ترجمان سنجے راؤت نے ایک ایسا بیان دیا ہے جو مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کے لیے ایک جھٹکا ہے۔ سنجے راؤت نے 7 دسمبر کو اپنے ایک بیان میں کہا کہ ’’مہا وکاس اگھاڑی حکومت ایک منی یو پی اے کی طرح ہے جو اچھا کام کر رہی ہے۔‘‘ ساتھ ہی انھوں نے کہا کہ میڈیا میں کئی طرح کی قیاس آرائیاں ہو رہی ہیں کہ کیا شیوسینا یو پی اے میں شامل ہو رہی ہے، اور کیا وہ اتر پردیش، گوا اور دیگر ریاستوں میں آئندہ اسمبلی انتخابات میں کانگریس کی حمایت کرے گی۔

راؤت کا کہنا ہے کہ ’’کانگریس ایم وی اے میں شیوسینا اور این سی پی کے ساتھ برسراقتدار ہے اور ریاستی حکومت بہت اچھا کام کر رہی ہے۔ ہم ایک مشترکہ کم از کم پروگرام کی بنیاد پر کام کرتے ہیں۔ یو پی اے یا یہاں تک کہ این ڈی اے کی طرح، جہاں الگ الگ نظریات والی پارٹی قومی اسباب کی بنا پر ایک ساتھ ہیں۔‘‘

شیوسینا ترجمان نے کہا کہ این ڈی اے میں آنجہانی وزیر اعظم اٹل بہاری واجپئی کی قیادت میں کئی نظریاتی نااتفاقیاں تھیں، اور کچھ نے ایودھیا میں رام مندر کی مخالفت بھی کی، لیکن سبھی نے مل کر کام کیا۔ سنجے راؤت کا کہنا ہے کہ ’’ایم وی اے میں یکساں کم از کم پروگرام پر کام کرنے والی الگ الگ نظریات کی تین پارٹیاں ہیں۔ یہ ایک تجربہ ہے اور ایم وی اے ایک منی یو پی اے کی طرح ہے۔ اس طرح کے تجربات کو ملک میں کہیں دوسری جگہ بھی کیا جانا چاہیے۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ’’یو پی اے ہو یا اپوزیشن پارٹی، انھیں آگے آنا چاہیے اور متبادل مہیا کرانا چاہیے اور یہ مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ ادھو ٹھاکرے اور این سی پی سربراہ شرد پوار دونوں کی سوچ ہے۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

اسٹیٹ بینک آ ف انڈیا- اڈانی کیپٹل پارٹنرشپ تباہ کن ہے: ایم کے فیضی

سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI) کے قومی صدر ایم کے فیضی نے کسانوں کو قرض حاصل کرنے میں مدد کرنے کی آڑ میں اسٹیٹ بینک آف انڈیا (SBI)۔ اڈانی کیپٹل کی شراکت داری کا سخت نوٹس لیتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ یہ شراکت داری پبلک بینکنگ سیکٹر اور کسانوں کیلئے انتہائی تباہ کن ہے اس لیے اس ...

بہار: اب وی آئی پی نے بی جے پی کو دکھائی آنکھ، آر جے ڈی سے ہاتھ ملانے کا اشارہ

اتر پردیش میں ہو رہے اسمبلی انتخاب کا اثر اب بہار میں بھی پڑتا صاف دکھائی پڑ رہا ہے۔ بہار میں برسراقتدار این ڈی اے میں شامل وکاس شیل انسان پارٹی (وی آئی پی) یوپی انتخاب میں تنہا انتخابی میدان میں اتری ہے، تو اب بہار میں بھی وہ بی جے پی کے آمنے سامنے ہو گئی ہے۔

پنجاب اسمبلی انتخاب: عآپ کے وزیر اعلیٰ امیدوار بھگونت مان شراب کے ہیں عادی، بی جے پی نے لگائے کئی سنگین الزامات

عام آدمی پارٹی (عآپ) کی طرف سے کامیڈین سے لیڈر بنے بھگونت مان کو پنجاب ریاست کے لیے وزیر اعلیٰ عہدہ کے امیدوار کی شکل میں پیش کیے جانے کے کچھ دن بعد بی جے پی نے بھگونت مان کو عوامی طور پر بھدے چٹکلے سنانے والا ایڈکٹ کہہ کر پارٹی پر حملہ کیا ہے۔

پنجاب کے بعد اب منی پور میں اسمبلی انتخابات کی تاریخ بدلنے کا مطالبہ

 پنجاب کے بعد اب منی پور سے بھی اسمبلی انتخابات کے لئے پولنگ کی تاریخ کو تبدیل کرنے کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔ آل منی پور کرشچین آرگینائیزیشن (اے ایم سی او) نے مطالبہ کیا ہے کہ 27 فروری کو ہونے والی پہلے مرحلہ کی پولنگ کسی اور دن کرائی جائے کیونکہ اتوار عیسائیوں کی عبادت کا دن ہوتا ...