عوام مودی کو اقتدار سے اکھاڑ پھینکیں گے: مایاوتی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 16th May 2019, 11:36 AM | ملکی خبریں |

لکھنؤ،16؍مئی (ایس او نیوز؍یو این آئی)   بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) سپریمو مایاوتی نے وزیر اعظم نریندر مودی کو ’ان فٹ‘ وزیر اعظم قرار دیتے ہوئے بدھ کو الزام لگایا کہ عوام ان کی طرز عمل سے کافی مایوس ہیں جس کی وجہ سے انہیں دوبارہ اقتدار میں نہیں لائیں گے۔

مایاوتی نے صحافیوں سے کہا کہ عوام نے مودی کو اقتدار سے اکھاڑ پھینکنے کا عزم کرلیا ہے۔ عوام مودی کو اکھاڑ پھینکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ وزیرا عظم کے میعاد کار لاقانونیت، تناو، نفرت اور افراتفری کا رہا ہے۔ وہ ’پبلک آفس ہولڈ‘ کرنے میں ناکام ثابت ہوئے ہیں۔

بی ایس پی سپریمو نے کہا کہ مودی آئین، قانون اور ’راج دھرم‘ کو نبھانے میں ناکام رہنے والے وزیر اعلی اور وزیر اعظم رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بحث عام ہے کہ کہ نوٹ بندی بڑا گھپلہ تھا اور اب یہ جانچ کا موضوع ہے۔ بیرون ممالک سے کالا دھن لانے میں مودی حکومت ناکام رہی ہے۔ کالا دھن واپس نہ لانے کے پیچھے کیا سیاست کار فرما ہے اس کی جانکاری ان کو نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہی لوگ انہیں (مایاوتی) ’دولت کی بیٹی‘ کہتے ہیں جو دلتوں کے تئیں سخت نفرت اور چھوت چھات روا رکھتے ہیں۔ یہ لوگ صدیوں سے دلت، پچھڑوں، متاثرہ سماج کو آگے نہیں بڑھنے دینا چاہتے ہیں۔ انہوں نے ریزرویشن کی مخالفت کرنے والوں میں بی جے پی کو نمبر ون بتایا۔

’ایس پی۔بی ایس پی اتحاد انتہائی مضبوط ہے‘: بدھ کے روز مایاوتی نے دیوریا میں اتحاد کے امیدواروں کے حمایت میں انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوے کہا کہ اتحاد کے حوالے سے افواہیں پھیلائیں جارہی ہیں لیکن لوگوں کو سمجھ لینا چاہیے کہ یہ دائمی اور مضبوط ہے اور لمبے عرصے تک چلے گا۔ اب ان کی جملے بازی اور ڈرامہ بازی نہیں چلنے والی ہے۔

انہوں نے بی جے پی پر گذشتہ انتخابات میں کیے گئے انتخابی وعدوں کو پورا نہ کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ یہ پارٹی صرف سرمایہ کاروں اور مالداروں کو مالا مال کرنے میں مشغول ہے۔ حکومت انہیں کی چوکیداری کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مودی حکومت ذات، پات، فرقہ واریت اور مادہ پرستانہ سوچ کی ہے اور انہوں نے غریبوں، پچھڑوں اور اقلیتوں کا ترقی نہیں کی ہے۔

بی ایس پی لیڈر نے کہا کہ پورے ملک میں دلت، قبائلی اور او بی سی سماج کے نوکری میں ریزرویشن کا کوٹہ ادھورا پڑا ہے۔ پرموشن میں ریزرویشن کا فائدہ بے معنی ہے۔ انہوں نے کہا کہ غریبوں کو ہراسانی اور استحصال کا سلسلہ جاری ہے اور اعلی سماج کے غریبوں کی صورتحال بھی خراب ہے۔

ایک نظر اس پر بھی