پارلیمنٹ میں پپو، داماد اور بہنوئی جیسے الفاظ کے استعمال پرپابندی عائد

Source: S.O. News Service | Published on 7th December 2019, 11:01 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی7دسمبر(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) پپوکو بھی پارلیمنٹ میں ہزاروں غیر پارلیمانی الفاظ کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔ لیکن شرط یہ ہے کہ اس کا مذاق اڑانے کے لیے استعمال کیا جائے۔ اگر کسی کا نام پپو ہے تو یہ غیر پارلیمنٹری نہیں ہے اور اگر کوئی ممبر اس صفت کو کسی بھی شکل میں اپنے لیے استعمال کرتا ہے تو وہ اس کارروائی میں شامل رہے گا۔ جب پپو لفظ 16 ویں لوک سبھا میں متعدد بار بولا گیا تھا، تو اسپیکر کی صوابدید پر اسے ہٹایا جارہا تھا، لیکن اب اسے باضابطہ طور پر غیر پارلیمنٹری سمجھا جاتا رہا ہے۔ غیر پارلیمنٹری الفاظ کی لغت آخری مرتبہ سن 2009 میں پارلیمنٹ میں شائع ہوئی تھی۔ اس میں لفظ پپوشامل نہیں تھا۔ 2019 میں، جن الفاظ کو غیر پارلیمنٹری کہا گیا ہے ان کا بہنوئی اور داماد کے مابین بھی تعلق ہے۔ لیکن صرف اس وقت جب کسی طرح کے الزامات کے طور پر اس کا غلط استعمال کیا جارہا ہو۔ لوک سبھا کے اسپیکر اوم برلانے سخت ہدایات دی ہیں کہ جب بھی مستقبل میں ان الفاظ کا استعمال الزام تراشیوں، طنز یا ہتک عزتی کی صورت میں کیا جائے تو ان کو بغیر پوچھے کارروائی سے ہٹا دیا جائے۔ اگر ان کے منہ سے کوئی غیرآئینی الفاظ نکلیں توبلا جھجک ان کو ختم کردیں۔ حال ہی میں، یہ جملہ اس وقت بھی ہٹا دیا گیا جب ان کے منہ سے یہ بات نکلی کہ یہ بنگال کی اسمبلی نہیں ہے۔ مہاتما گاندھی کے قاتل ناتھورم گوڈسے پنتھی کو کچھ سال قبل غیر پارلیمنٹری الفاظ کی فہرست سے ہٹا دیا گیا تھا، کیونکہ مہاراشٹر سے ممبر پارلیمنٹ کی طرف سے ایک تحریری درخواست کی گئی تھی۔ان سب کوقابل اعتراض نہیں سمجھا جاسکتا۔ لہٰذاجب موجودہ سیشن میں گوڈسے کے بارے میں تنازعہ پیدا ہوا تھا، تو اسے کارروائی سے نہیں ہٹایا گیا تھا۔ لیکن جب کسی ممبر نے اسے گوڈسے پنتھی کہا تو اسے خارج کردیاگیا۔ 

ایک نظر اس پر بھی

باپ کی املاک پر بیٹی کا بیٹے کی طرح یکساں حق: سپریم کورٹ

سپریم کورٹ نے منگل کو ایک دور رس نتائج والے اپنے فیصلہ میں کہا ہے کہ ہندو غیر منقسم خاندان کی آبائی املاک میں بیٹی کو بیٹے کی طرح ہی حقوق حاصل ہوں گے، یہاں تک کہ اگر ہندو جانشینی (ترمیمی) ایکٹ 2005 کے نفاذ سے قبل ہی اس کے والد کی موت کیوں نہ ہوگئی ہو۔

راجستھان میں سیاسی صلح، بی جے پی کے منھ پر زور کا طمانچہ: کانگریس

کانگریس نے راجستھان یونٹ میں کئی دنوں سے جاری تنازعہ کے سلجھنے پر ریاست کے عوام کو مبارکباد دیتے ہوئے اسے پارٹی اعلیٰ کمان کے ’سب کو ساتھ لے کر چلنے‘ کی پالیسی کا نتیجہ بتایا کہ اور کہا کہ یہی بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کو کرارا جواب ہے۔

یو جی سی امتحانات معاملے میں سماعت جمعہ تک ملتوی

سپریم کورٹ نے پیر کے روز حکومت سے یہ جاننے کی کوشش کی کہ کیا اسٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایکٹ یونیورسٹی گرانٹس کمیشن (یو جی سی) کی ہدایت کو متاثر کر سکتا ہے؟ ۔ اس کے ساتھ ہی عدالت نے معاملے کی سماعت 14 اگست تک ملتوی کردی ۔