اُڈپی : کانگریس کارکنان تاریخ کامطالعہ کریں : بی جےپی اور اس کی حقیقت سے آگاہ رہنے حزب مخالف لیڈر سدرامیا کی اپیل

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 7th November 2019, 7:15 PM | ساحلی خبریں |

اُڈپی:07؍نومبر(ایس اؤ نیوز)اجّرکاڑو کے پور بھون میں منعقدہ کانگریس سماویش میں حزب مخالف لیڈر سدرامیا نے کانگریس کارکنان سے مختلف سوالات کئےاوراس کا جواب دیتےہوئے انہیں  تاریخ کامطالعہ کرنے کی اپیل کی ۔

سدرامیا نے سوال کیا کہ دستور میں 73اور74ویں ترمیم کے ذریعے خواتین، پنچایتوں کو ریزرویشن دیاگیا ہے، اس وقت ملک کے وزیر اعظم کون تھے؟جب کسی نے جواب نہیں دیا تو خود سدرامیا نے بتایا کہ نرسمہاراؤ تھے۔ کس نے کرناٹکا میں ریشم کا تعارف کروایا؟ کس نے راکٹ ٹکنالوجی کا استعمال کیا ؟ جواب نہیں ملا تو ٹیپو سلطان کو یا د رکھنے کی تاکیدکی۔ جن سنگھ ، آرا یس ایس، بی جےپی کی بنیاد کب ہوئی، کس نے قائم کیا ، جیسے مسلسل سوالات سے کارکنان سے پوچھے، غلط جوابات حاصل ہونے پر تاریخ ، عیسوی سمیت جواب دے کر کارکنان سے کہاکہ تاریخ، سوانح وغیرہ کا مطالعہ کریں۔

سرکاری نصاب سے ٹیپو سلطان کی تاریخ نکال باہر کرنےکی بی جےپی کی کوششوں کو آڑے  ہاتھوں لیتے ہوئے انہوں نے کہاکہ میسور کی تاریخ ٹیپو اور حیدرعلی کے بنا ادھوری ہے، سدرامیانے بی جے پی لیڈروں کو آڑے ہاتھوں لیتےہوئے کہا کہ یڈیورپا جب کے جے پی کے صدر تھے تو ٹیپو کی ٹوپی پہن کر میں خود ٹیپو ہوں کہہ کر جشن منایا تھا، جگدیش شٹر جب وزیر اعلیٰ تھے تو میسور کے شیخ علی کی تصنیف ’ٹیپو ، دی کروسیڈر ‘ کا ابتدائیہ لکھتے ہوئے ٹیپو کو محب وطن، دیش بھگت، انگریزوں کے خلاف جنگ لڑنے والا بہادر بتاتے ہوئے ستائش کی تھی ۔ اب بی جےپی لیڈران کے لئے ٹیپو فرقہ پرست ہوگیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

اُڈپی میں کوویڈ کے بڑھتے معاملات پر بھٹکل کے عوام میں تشویش؛ پڑوسی علاقہ سے بھٹکل داخل ہونے والوں پر سخت نگرانی رکھنے ضلعی انتظامیہ سے مطالبہ

بھٹکل کورونا فری ہونے کے بعد اب پڑوسی ضلع اُڈپی میں روزانہ پچاس اور سو کورونا معاملات کے ساتھ  پوری ریاست میں اُڈپی میں سب سے  زیادہ کورونا کے معاملات سامنے آنے پر بھٹکل میں بھی تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے۔ عوام اس بات کو لے کر پریشان ہیں کہ اُڈپی سے کوئی بھی شخص آسانی کے ساتھ ...

نیسرگا‘طوفان کے دوران طوفانی ہوا اور بارش سے ہیسکام کو کاروار میں ایک ہی دن 8لاکھ اور بھٹکل میں 1 لاکھ سے زائد کا نقصان

مہاراشٹرامیں تباہی مچانے والا ’نیسرگا‘ طوفان ویسے تو کرناٹکا کے ساحلی علاقے کو چھوتا ہوانکل گیا، مگر جاتے جاتے بھٹکل سمیت  کاروار شہر اوراطراف میں اپنے اثرات ضرور چھوڑ گیا۔

مینگلور: آئندہ صرف کورونا سے متاثر افراد کے گھروں کو ’سیل ڈاؤن‘ کیا جائے گا۔ علاقے کو’کٹینمنٹ زون‘ نہیں بنایا جائے گا؛ میڈیکل ایجوکیشن منسٹر کا بیان

سرکاری سطح پرکووِڈ 19کی وباء پر قابو پانے کے لئے ابتدا میں جوسخت اقدامات کیے جارہے تھے، اب بدلتے ہوئے حالات کے ساتھ ان میں نرمی لانے کا کام مسلسل ہورہا ہے۔

کرناٹکا میں آج پھر 257 کی رپورٹ کورونا پوزیٹو؛ اُڈپی میں پھر ایک بار سب سے زیادہ 92 معاملات؛ تقریباً سبھی لوگ مہاراشٹرا سے لوٹے تھے

سرکاری ہیلتھ بلٹین میں پھر ایک بار  کرناٹک میں آج 257 لوگوں میں کورونا  کی تصدیق ہوئی ہے جس میں سب سے زیادہ معاملات پھر ایک بار ساحلی کرناٹک کے ضلع اُڈپی سے سامنے آئے ہیں۔ بلٹین کے مطابق آج  اُڈپی سے 92 معاملات سامنے آئے ہیں اور یہ تمام لوگ مہاراشٹرا سے لوٹ کر اُڈپی پہنچے تھے۔